Monday , August 21 2017
Home / دنیا / ہندوستانی نژاد امریکی طالب علم سستے آلۂ سماعت کا موجد

ہندوستانی نژاد امریکی طالب علم سستے آلۂ سماعت کا موجد

ہوسٹن ۔ 12 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) ایک 16 سالہ ہندوستانی نژاد امریکی لڑکے نے ایک کم خرچ والا آلۂ سماعت ایجاد کیا ہے جس کی قیمت صرف 60 امریکی ڈالرس ہے۔ اس آلۂ سماعت سے وہ لوگ استفادہ کرسکتے ہیں جو مہنگے آلے نہیں خرید سکتے۔ کینٹکی کے لوئی ویسے شہر کے ساکن مکند وینکٹ کرشنن نے آلۂ سماعت کی ایجاد کیلئے تقریباً دو سال تک محنت کی اور بعدازاں اسے جیفرسن کاؤنٹی پبلک اسکولس کے آئیڈیا فیسٹیول میں پیش کیا اور حال ہی میں کنیٹکی اسٹیٹ سائنس و انجینئرنگ فیئر میں پہلے انعام کا حقدار قرار دیا گیا۔ آلۂ سماعت کی خصوصیت یہ ہیکہ ان کا استعمال انتہائی سستے ہیڈفونس کے ذریعہ بھی کیا جاسکتا ہے۔ اسے تیاری کے مرحلہ میں مختلف صوتی آزمائش سے گذرنا پڑا اور بعدازاں اسے آلۂ سماعت کے طور پر توثیق کی گئی۔ آلۂ سماعت کو آواز کی فریکوئنسی کے مطابق کم یا زیادہ کیا جاسکتا ہے۔ مکند ڈیو پونٹ مینوئل ہائی اسکول کا طالب علم ہے۔ مکند نے جس وقت اپنے دادا ۔ دادی سے ہندوستان میں ملاقات کی تھی اسی وقت اسے آلۂ سماعت ایجاد کرنے کی دھن سوار ہوئی۔ اس کے دادا سماعت سے محروم تھے لہٰذا ان کی ٹسٹنگ اور بعدازاں آلۂ سماعت کے انتخاب میں وہ اپنے دادا کے ساتھ ہی تھا۔ تاہم وہ بہت مہنگا آلۂ سماعت تھا۔ مکند نے اسی وقت فیصلہ کرلیا کہ وہ ایک ایسا آلۂ سماعت تیار کرے گا جو ہر کسی کی خریداری کے دسترس میں ہو۔ صرف ڈاکٹرس کے اپائنمنٹس میں ہی ہزاروں روپئے خرچ ہوگئے لہٰذا اسے یہ محسوس ہوا کہ ہندوستان جیسے دیگر ترقی پذیر ممالک میں  اب ’’سماعت‘‘ بھی ایک عیش و آرام کی چیز بن گئی ہے۔

TOPPOPULARRECENT