Sunday , August 20 2017
Home / Top Stories / ہندوستان اپنے ایک حقیقی سپوت اور خالص نگینہ سے محروم

ہندوستان اپنے ایک حقیقی سپوت اور خالص نگینہ سے محروم

عبدالکلام ایک مدبر ‘عظیم سائنسداں ‘غریبوں کے دوست اوربہترین انسان تھے ‘سابق صدر کو پارلیمنٹ کا خراج

 

نئی دہلی 28 جولائی (سیاست ڈاٹ کام )سابق صدر جمہوریہ اے پی جے عبدالکلام کو پارلیمنٹ میں آج انتہائی پر اثر خراج عقیدت ادا کرتے ہوئے انہیں ہندوستان کے ایک قابل فخر سپوت اور ایک خالص نگینہ قرار دیا اور کہا کہ ملک و قوم کے ان کی عظیم خدمات اور کارناموں کیلئے احسان مند ہیں۔ پارلیمنٹ کے د ونوں ایوان لوک سبھا اور راجیہ اپنے اجلاس کے آغاز کے ساتھ ہی ڈاکٹر عبدالکلام کو غیر معمولی طور پر پُر اثر خراج عقیدت ادا کرنے کے بعد ملتوی کردیئے گئے۔ سابق صدر جمہوریہ سے اظہار عقیدت کیلئے دونوں ایوانوں کے اجلاس کل منعقد نہیں ہوں گے تا کہ ٹاملناڈو کے رامیشورم میں ڈاکٹر اے پی جے عبدالکلام کی آخری تدفین کی موقع پر ارکان پارلیمنٹ کو شرکت کا موقع فراہم کیا جاسکے۔لوک سبھا میں اسپیکر نے قرار داد تعزیت پڑھی جس میں کہا گیا ہے کہ ’’ ڈاکٹر عبدالکلام کی موت سے ملک ایک غیر معمولی فراست کے حامل مدبر ‘ ایک عظیم سائنسداں اور مراعات سے محروم غریبوں اور پچھڑے ہوئے طبقات سے تعلق رکھنے والوں کے ایک مخلص دوست اور سب سے بڑھ کر ایک بہترین انسان سے محروم ہوگیا ہے‘‘۔

اسپیکر سمترا مہاجن نے ڈاکٹر کلام کو ہندوستان کا ایک ایسا خالص نگینہ قرار دیا جنہوں نے اپنی آخری سانس تک خود کو نوجوان نسلوں سے بات چیت اور رابطوں میں مصروف رکھا اور ان کے ذہنوں میں سائنسی علوم اور تجسس کی روح کی شمع روشن کی۔ سمترا مہاجن نے کہا کہ 2002 تا 2007 صدر جمہوریہ کے عہدہ پر فائز رہنے والے عبدالکلام  83 سال کے ایک انتہائی شریف النفس اور بزرگ شخص تھے ۔ ان میں  38 سالہ نوجوان جیسی توانائی تھی اور چہرے پر 8 سالہ بچہ کی طرح معصوم مسکراہٹ تھی‘‘۔ اسپیکر نے کہا کہ ڈاکٹر عبدالکلام کے سانحہ ارتحال سے بلا شبہ ایک بہت بڑا خلاء پیدا ہوا ہے لیکن اُن کی حیات اور کارنامے موجودہ اور آنے والی نسلوں کو بدستور ترغیب دیتے رہیں گے۔ انہوں نے قومی شبیہ پر اپنے انمٹ نقوش چھوڑے ہیں۔ راجیہ سبھا میں صدر نشین حامد انصاری نے عبدالکلام کی موت کو ملک کیلئے ایک ناقابل تلافی نقصان قرار دیا ۔ ایوان بالا کے صدر نشین نے کہا کہ ہندوستان اپنے ایک حقیقی سپوت سے محروم ہوگیا ہے ۔

ملک اور قوم کیلئے  ایک استاذ ‘ ایک رہنماء اور سب سے بڑھ کر ٹکنالوجی کی ایک سرکردہ شخصیت ‘کی حیثیت سے انہوںنے جو کارنامے انجام دیئے ہیں جس پر قوم  اُن کی احسان مند ہے۔دونوں ایوانوں کے ارکان نے کارروائی کے التواء سے قبل کچھ دیر کیلئے ایستادہ ہوکر مرحوم سابق صدر جمہوریہ کو خراج عقیدت پیش ادا کیا ۔نائب صدر حامد انصاری نے کہا کہ عبدالکلام نے ہندوستانی خلائی و میزائل پروگراموں کی موثر رہنمائی کی اور ان ہی کی کاوشوں کا نتیجہ ہے کہ ہندوستان آج ان شعبوں میں ترقی یافتہ ممالک کی پہلی صف میں شامل ہیں ۔ اُن کی زندگی ہمیشہ ہم سب کیلئے سرچشمہ ترغیب رہے گی ۔ انہوں نے کہا کہ عبدالکلام کا اندازہ قیادت اور بصیرت کی نہ صرف ہندوستان بلکہ دنیا بھر میں قدر کی جاتی ہے ۔انہوں نے 2020 تک ایک شفاف اور رشوت ستانی سے پاک و صاف ہندوستان کا نظریہ پیش کیا تھا اور ہندوستان کو ایک ایسا ملک بنانے کا خواب دیکھا تھا جس کی قیادت پر سارا ملک فخر کرسکے ۔

TOPPOPULARRECENT