Thursday , July 27 2017
Home / دنیا / ’’ ہندوستان میں مذہبی آزادی پر تحدیدات، انسانی حقوق کاسنگین مسئلہ‘‘

’’ ہندوستان میں مذہبی آزادی پر تحدیدات، انسانی حقوق کاسنگین مسئلہ‘‘

پولیس مظالم، رشوت ستانی، مذہب، ذات پات کے نام پر تشدد، خواتین وبچوں پر زیادتی کے واقعات پر امریکہ کی رپورٹ میں تشویش
واشنگٹن۔/4مارچ، ( سیاست ڈاٹ کام ) ایک امریکی رپورٹ کے مطابق بیرونی فنڈس سے چلائی جانے والی غیر سرکاری تنظیموں پر پابندیاں، مذہبی آزادیوں میں دخل اندازی کے علاوہ پولیس اور سیکورٹی فورسیس کے مظالم اور رشوت ستانی ہندوستان میں انسانی حقوق کو درپیش چند اہم اور سنگین مسائل ہیں۔ امریکی وزارت خارجہ نے انسانی حقوق کے طریقہ کار اور روایات سے متعلق2016کیلئے مختلف ممالک پر تیار کردہ رپورٹس میں جو ٹرمپ انتظامیہ میں پہلی بار ہے یہ کہا گیا ہے کہ 2016 کے دوران ہندوستان میں بعض افراد کا اچانک لاپتہ یا گمشدہ ہوجانا، جیلوں اور مختلف قید خانوں کی ناگفتہ بہہ اور خطرناک حد تک بدترین صورتحال اور عدالتوں میں مقدمات کے انبار کے سبب انصاف رسانی میں تاخیر بھی انسانی حقوق کے چند دیگر مسائل میں شامل ہیں۔ ہندوستان پر امریکہ کی اس رپورٹ میں جو گذشتہ روز جاری کی گئی واضح طور پر یہ کہا گیا ہے کہ ’’ ماورائے عدلیہ ہلاکتیں ( انکاؤنٹرس ) ، ایذا رسانی، عصمت ریزی اور رشوت ستانی بشمول مختلف اقسام کے پولیس مظالم کے واقعات انسانی حقوق کے انتہائی سنگین مسائل میں نمایاں ہیں۔

درج فہرست قبائیل سے تعلق رکھنے والے بچوں، مرد و خواتین کے خلاف بڑے پیمانے پر تشدد کے واقعات پیش آنے کے باوجود ان جرائم کو موثر ڈھنگ سے روکنے کے اقدامات کا فقدان ہے۔ علاوہ ازیں ذات پات، قبیلہ، صنفی، مذہبی وابستگی کی بنیاد پر سماجی تشدد سے انسانی حقوق کا ایک سنگین مسئلہ ہے۔‘‘ امریکی رپورٹ نے اس تاثر کا اظہار کیا کہ شخصی و نجی حقوق میں دخل اندازی اور خلاف ورزی کی بھی بے شمار مثالیں ہیں۔ ہندوستان کی چھ ریاستوں میں قانون وضع کرتے ہوئے مذہبی تبدیلی پر امتناع عائد کیا گیا ہے۔ عصمت ریزی، گھریلو تشدد، جہیز کے مطالبہ پر اموات، خاندانی عزت و وقار کیلئے قتل، جنسی ہراسانی اور امتیاز ہندوستانی خواتین اور لرکیوں کے انسانی حقوق میں حائل سنگین سماجی مسائل بدستور برقرار ہیں۔ بچوں سے بدسلوکی، لڑکیوں کے عضو نازک کو کاٹ دینا، کمسن عمری میں لڑکیوں کی شادیاں، بچوں کی اسمگلنگ، بچہ مزدوری، کمسن لڑکیوں کو قحبہ گری کے پیشہ میں جھونک دینا، کمسن بچوں کے سنگین مسائل میں شامل ہے۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ جموں و کشمیر اور شمال مشرقی ریاستوں میں دہشت گرد اور علحدگی پسند تخریب کاروں کے چند دیگر ریاستوں میں ماؤ نواز انسانی حقوق کی بدترین خلاف ورزی کرتے ہیں جن میں مسلح افراد کی سپاہیوں، پولیس اہلکاروں، سرکاری عہدیداروں اور سیویلین کی ہلاکتیں شامل ہیں۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT