Saturday , August 19 2017
Home / Top Stories / ہندوستان کی این ایس جی میں شمولیت کے خلاف چین کا انتباہ

ہندوستان کی این ایس جی میں شمولیت کے خلاف چین کا انتباہ

جنوبی ایشیاء عدم توازن کا شکار ہوگا، امن و استحکام کو بھی خطرہ لاحق ہونے کا اندیشہ

بیجنگ۔16 جون (سیاست ڈاٹ کام) اب جبکہ چین نے یہ محسوس کرلیا ہے کہ ہندوستان نیوکلیئر سپلائرس گروپ (NSG) میں شمولیت اختیار کرنے کے لئے ہر گزرنے والے دن کے ساتھ رکنیت کی جانب پیشرفت کررہا ہے۔ ایک انتباہ جاری کیا ہے کہ ہندوستان کے این ایس جی میں شامل ہوتے ہی جنوبی ایشیاء میں حکمت عملی عدم توازن کا شکار ہوجائے گی جبکہ پورے ایشیاء پیسفک خطہ میں امن اور استحکام پر خطرہ کے بادل منڈلانے شروع ہوجائیں گے۔ گلوبل ٹائمز میں شائع ہوئے ایک مضمون کے مطابق وزیراعظم ہند نریندر مودی کے دورہ امریکہ کے دوران این ایس جی کی رکنیت کے لئے انہوںنے امریکہ کی تائید حاصل کرنے میں کامیابی حاصل کرلی۔ یہی نہیں بلکہ میکسیکو نے بھی ہندوستان کے لئے این ایس جی کی رکنیت کی تائید کی ہے۔ مضمون میں پہلی بار این ایس جی رکنیت کے لئے ہندوستان کی پیشرفت کی طرف اشارہ کیاگیا ہے جو 48 رکنی ممالک کا ایک گروپ ہے۔ مضمون نگار سرکاری تھنک ٹینک چائنا انسٹی ٹیوٹ آف کنٹمپریری انٹرنیشنل رلیشنس میں ایک ریسرچ فیلو ہیں، انہوں نے انتباہ دیا ہے کہ ہندوستان کی رکنیت سے جنوبی ایشیاء عدم توازن کا شکار ہوجائے گا جبکہ ایشیاء پیسیفک خطہ امن و استحکام پر خطرات کے بادل منڈلانے لگیں گے۔ گزشتہ دو دنوں کے اندر گلوبل ٹائمز میں یہ دوسرا مضمون شائع ہوا ہے جہاں چین کی ہندوستان کی این ایس جی رکنیت کی تائید کرنے کے بارے میں تفصیلات تحریر کی گئی ہیں۔

 

چین نے ڈھکی چھپی مخالفت نہیں کی ہے کہ بلکہ اس نے اپنا موقف واضح کردیا ہے۔ دوسری طرف چین کے ’’ہرموسم‘‘ کے دوست پاکستان کے بارے میں بھی تذکرہ کیا گیا ہے کہ ہندوستان کے این ایس جی رکن بنتے ہی پاکستان یکا و تنہا پیچھے رہ جائے گا کیوں کہ اس طرح ہندوستان کو نیوکلیئر توانائی کے حامل ملک ہونے کا قانونی سرٹیفکیٹ بھی مل جائے گا۔ یہاں اس بات کا تذکرہ بھی ضروری ہے کہ این ایس جی ایک ایسا گروپ ہے جو عالمی سطح پر سیویلین نیوکلیئر ٹریڈ کی نگرانی کرتا ہے اور وہ ہندوستان کو عالمی سطح پر این ایس جی کا رکن تسلیم کرنے کی اجازت دے گا اور اس طرح دیگر رکن ممالک بھی ہندوستان کی رکنیت کو تسلیم کریں گے۔ 14 جون کو اس اخبار میں شائع ایک دیگر مضمون میں کہا گیا تھا کہ ہندوستان کے این ایس جی رکن بنتے ہی چین کے قول تضاد کو زبردست دھکا پہنچے گا اور پاکستان پر بھی اس کے منفی اثرات مرتب ہوں گے۔ ہندوستان کے نیوکلیئر گروپ میں شامل ہوتے ہی اسے اس بات کا اختیار بھی حاصل ہوجائے گا کہ وہ سیول نیوکلیئر ٹیکنالوجی درآمد کرے۔ یہی نہیں بلکہ بین الاقوامی مارکٹ سے ایندھن کا حصول بھی ہندوستان کے لئے آسان تر ہوجائے گا جبکہ خود اپنے گھریلو نیوکلیئر میٹریلیس کی ہندوستان اپنی فوج کے استعمال کے لئے بچت کرسکے گا۔ گلوبل ٹائمز اخبار کو چین میں کافی اہمیت حاصل ہے اور اس میں شائع ہوئی خبروں اور مضامین کو معیاری سمجھا جاتا ہے۔ اس اخبار کے قارئین کی تعداد کروڑوں میں ہے جو حکمراں جماعت کمیونسٹ پارٹی آف چائنا گروپ آف پبلیکیشنز کی ملکیت ہے۔

TOPPOPULARRECENT