Sunday , August 20 2017
Home / دنیا / ہندو ازم کوئی مذہب نہیں صرف روایت: بھاگوت

ہندو ازم کوئی مذہب نہیں صرف روایت: بھاگوت

لندن 3 اگسٹ (سیاست ڈاٹ کام) ہندو تہذیب میں جبری مذہبی تبدیلی کی اجازت نہیں جو کسی انفرادی شخص کے انسانی حقوق پر جارحیت کے مترادف ہو۔ آر ایس ایس سربراہ موہن بھاگوت نے یہ بات کہی۔ اُنھوں نے بتایا کہ ہندو ازم کوئی مذہب نہیں بلکہ ایک روایت ہے جس میں تمام کی شناخت کو قبول کرنے اور اُن کا احترام کرنے پر یقین رکھا جاتا ہے۔ وہ برطانیہ میں واقع ہندو سویم سیوک سنگھ کی 50 ویں سالگرہ کے موقع پر منعقدہ سمینار سے خطاب کررہے تھے۔ بھاگوت نے کہاکہ ’’ہندو ایک سنسکرتی (تہذیب) ہے مذہب نہیں‘‘۔ اُنھوں نے کہاکہ دوسری شناخت رکھنے والوں کے ساتھ ہمیں کوئی مسئلہ نہیں۔ ہم ایک متحدہ سماج کی حیثیت سے رہ سکتے ہیں۔ اُنھوں نے کہاکہ ہندو شناخت میں یہی بتایا جاتا ہے کہ کثرت میں وحدت کو تسلیم کیا جائے۔ موہن بھاگوت نے اِس ضمن میں قدیم ویدوں کا بھی حوالہ دیا۔

 

اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی اجلاس
میں مودی کی عدم شرکت
اقوام متحدہ ۔ 3 اگست (سیاست ڈاٹ کام) وزیراعظم نریندر مودی اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس میں جو آئندہ ماہ مقرر ہے، شرکت نہیں کریں گے۔ ہندوستانی وفد کی قیادت وزیرخارجہ سشماسوراج کریں گی۔ عبوری ایجنڈہ اقوام متحدہ کی جانب سے جاری کیا جاچکا ہے۔ جنرل اسمبلی کا اجلاس 20 ستمبر سے شروع ہوگا اور 26 ستمبر تک جاری رہے گا۔ اولین عبوری فہرست کے بموجب وزیراعظم پاکستان نواز شریف جنرل اسمبلی کے مباحثہ میں شرکت کریں گے۔

TOPPOPULARRECENT