Thursday , September 21 2017
Home / ہندوستان / ہندو راشٹر کا نظریہ، امبیڈکر کے اُصولوں سے متصادم

ہندو راشٹر کا نظریہ، امبیڈکر کے اُصولوں سے متصادم

ملک میں فاشزم کا نیا رجحان غالب ، کانگریس قائدین کا الزام

نئی دہلی، 9 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) آر ایس ایس اور بی جے پی کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے بعض کانگریس لیڈروں نے آج یہ الزام عائد کیاکہ ہندوستان کو ایک نئی فاشسٹ مملکت میں تبدیل کیا جارہا ہے اور دریافت کیاکہ اگر وہ دستور پر ایقان رکھتے ہیں تو ہندو راشٹر کے نظریہ سے دستبردار ہوجائیں گے۔ راجیو گاندھی اسٹڈی سرکل کے زیراہتمام ڈاکٹر امبیڈکر کی خدمات پر منعقدہ قومی سمینار سے مخاطب کرتے ہوئے پارٹی لیڈر نے یہ نشاندہی کی کہ اٹل بہاری واجپائی کی زیرقیادت پیشرو این ڈی اے حکومت کے دور میں ہندوستان میں فاشزم کا کوئی رجحان نہیں تھا لیکن اب یہ ملک نئے فاشزم کی سمت بڑھ رہا ہے۔ بظاہر یہ ریمارک وزیراعظم نریندر مودی کو نشانہ بنانے کے لئے کیا گیا ہے۔ کانگریس لیڈروں نے دائیں بازو تنظیموں کی جانب سے امبیڈکر کی ستائش پر سوالیہ نشان لگایا اور یہ ادعا کیاکہ زعفرانی تنظیمیں ہمیشہ معمار دستور کے نظریہ کی مخالف رہیں۔ سابق راجیہ سبھا رکن بال چندرا منگیکر نے کہاکہ یہ تنظیمیں دراصل ڈاکٹر امبیڈکر کا جشن منانے کا ڈھونگ کررہی ہیں، جبکہ پس پردہ ایک نئے فاشسٹ ہندوستان کی تعمیر میں مصروف ہیں۔ دوسری عالمی جنگ کے بعد فاشزم کو فروغ حاصل ہوا تھا۔ اب یہ نیو فاشزم میں تبدیل ہوگیا۔ انھوں نے کہاکہ سیاسی جماعتیں اقتدار میں آتی ہیں، جاتی ہیں۔واجپائی بھی اس جماعت سے وابستہ تھے جس کی قیادت اب نریندر مودی کرتے ہیں۔ لیکن کوئی یہ دعویٰ نہیں کرسکتا کہ واجپائی کے دورِ حکومت (1999-2004) میں ہندوستان ایک نئی فاشسٹ مملکت تھا لیکن اب حالات بدل گئے ہیں اور ملک میں فاشزم کی ایک نئی شکل انگڑائی لے رہی ہے۔ کانگریس لیڈر نے یہ نشاندہی کی کہ بی جے پی واحد جماعت ہے کہ امبیڈکر کے نظریات سے اتفاق کئے بغیر علمبردار ہونے کا دعویٰ کررہی ہے۔ انھوں نے کہاکہ لندن میں محض امبیڈکر کے مکان کی خریداری کافی نہیں ہے بلکہ ان کے نظریات پر صدق دل اور خلوص نیت کے ساتھ عمل پیرا ہونے کی ضرورت ہے۔ کانگریس جنرل سکریٹری مکل واسنک نے کہاکہ امبیڈکر نے سماجی امتیازات مٹانے کے لئے جدوجہد کی تھی لیکن جو لوگ (بی جے پی) مساوات پر یقین نہیں رکھتے وہ کس طرح امبیڈکر کے نظریات کے ساتھ انصاف کرسکتے ہیں۔ انھوں نے یہ سوال کیاکہ جو لوگ دستور پر اعتماد کا دعویٰ کرتے ہیں، آیا وہ ہندو راشٹرا کے نظریہ سے دستبردار ہونے کے لئے آمادہ ہیں لیکن میں یہ سمجھتا ہوں کہ بی جے پی، آر ایس ایس اور بجرنگ دل اپنے خطرناک عزائم سے باز نہیں آئیں گے اور ہندو راشٹر کی تشکیل کے لئے سرگرم رہیں گے۔ مذکورہ سمینار ڈاکٹر امبیڈکر کی 125 ویں یوم پیدائش تقاریب کے سلسلہ میں منعقد کیا گیا جس میں سابق مرکزی وزیر آسکر فرنانڈیز اور سابق چیف منسٹر راجستھان اشوک گہلوٹ (صدرنشین راجیو گاندھی اسٹڈی سرکل) شریک تھے۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT