Thursday , September 21 2017
Home / Top Stories / ہند۔پاک تعلقات خوشگوار بنانے پاکستان دہشت گردی کی معاونت ترک کردے

ہند۔پاک تعلقات خوشگوار بنانے پاکستان دہشت گردی کی معاونت ترک کردے

چین سے سرحدی تنازعہ لیکن جھڑپیں نہیں، وال اسٹریٹ جرنل کی ویب سائٹ پر مودی کا تبصرہ

واشنگٹن 27 مئی (سیاست ڈاٹ کام) وزیراعظم ہند نریندر مودی نے آج ایک اہم بیان دیتے ہوئے کہاکہ ہند ۔ پاک تعلقات ایک بار پھر خوشگوار ہوسکتے ہیں۔ بشرطیکہ پاکستان خود ساختہ دہشت گردی کو راستے کی رکاوٹ سے تعبیر نہ کرے۔ پاکستان نے اگر اپنی سرزمین پر پنپ رہی دہشت گردی کا مکمل صفایا کردیا تو شاید وہ دن دنیا کی تاریخ میں سنہرے حرفوں سے لکھا جائے گا۔ وال اسٹریٹ جرنل کو اُس کی ویب سائٹ پر جاری کردہ اپنے تبصروں میں نریندر مودی نے کہاکہ پاکستان اور ہندوستان کے تعلقات خوشگوار ہونا کوئی غیر معمولی بات نہیں ہے تاہم اس کے لئے پاکستان کو اپنی جانب سے زیادہ کوشش کرنی چاہئے۔ ہم اس سلسلہ میں پہلا قدم اُٹھانے تیار ہیں۔ ہند و پاک کو آپس میں لڑنے کی بجائے مشترکہ طور پر غربت کے خلاف لڑائی لڑنی چاہئے لہذا یہ فطری بات ہے کہ ہم پاکستان سے یہ چاہتے ہیں کہ وہ اپنا رول بخوبی ادا کرے۔ مجھے ایک بار پھر کہنے دیجئے کہ پاکستان کو دہشت گردی پر کوئی سمجھوتہ نہیں کرنا چاہئے۔ چاہے وہ مقامی دہشت گردی ہو یا بیرونی اس پر مکمل قابو پانا پاکستان کی ذمہ داری ہے ۔ اُنھوں نے ایک بار پھر کہاکہ ہندوستان کی غیر جانبدارانہ پالیسی میں کوئی ترمیم کی چنداں ضرورت نہیں ہے۔ چین کے ساتھ سرحدی تنازعہ کے باوجود ہماری اُس سے کبھی جھڑپیں نہیں ہوئی۔ ہم اپنے خطہ میں اور بین الاقوامی طور پر اپنی ذمہ داریوں کو بخوبی سمجھتے ہیں۔ غیر جانبدارانہ تحریک ہندوستان کی ریڑھ کی ہڈی رہی ہے جو ہندوستان کے پہلے وزیراعظم جواہرلال نہرو ، اُس وقت کے یوگوسلاویہ کے صدر مارشل ٹیٹو اور مصر کے سابق صدر کرنل جمال عبدالناصر کی کاوشوں کا نتیجہ تھا جس نے 60 ء اور 70 ء کے دہے میں عالمی سیاسی منظر نامہ کو بدل کر رکھ دیا تھا۔ اُنھوں نے ایک بار پھر چین کا تذکرہ کیا اور کہاکہ سرحدی تنازعہ کے باوجود دونوں ممالک (ہند ۔ چین) کے درمیان گزشتہ تیس سالوں سے کوئی جھڑپ نہیں ہوئی۔ یہاں تک کہ ایک گولی تک نہیں چلائی گئی۔ اس طرح عوام سے عوام کے رشتوں میں بھی کوئی کشیدگی نہیں ہے بلکہ تجارت میں اضافہ ہوا ہے۔ چین نے ہندوستان میں سرمایہ کاری کی ہے اور ہندوستان نے بھی چین میں سرمایہ کاری کرتے ہوئے اپنی موجودگی کا احساس دلایا ہے۔

TOPPOPULARRECENT