Sunday , September 24 2017
Home / Top Stories / ہند۔پاک مذاکرات تاریخ کا دھارا بدلنے کی کوشش :مودی

ہند۔پاک مذاکرات تاریخ کا دھارا بدلنے کی کوشش :مودی

The Prime Minister, Shri Narendra Modi at the INS Vikramaditya, on December 15, 2015. The Chief of Naval Staff, Admiral R.K. Dhowan is also seen.

کوچی 15 ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام) وزیراعظم نریندر مودی نے آج کہاکہ ہند ۔ پاک مذاکرات کا احیاء ’’تاریخ کا دھارا بدلنے کی ایک کوشش ہے‘‘۔ اُنھوں نے واضح کیاکہ پڑوسی ملک کی پرکھ دہشت گردی سے نمٹنے میں اُس کے خلوص سے ہوگی۔ مودی نے کہاکہ ہندوستان اپنے صیانتی محافظین کو واپس کبھی طلب نہیں کرے گا۔ اُنھوں نے اعتراف کیاکہ ملک کو سرحدات پر کئی چیلنج درپیش ہیں۔ ہندوستان کے اعلیٰ سطحی فوجی کمانڈوز سے ملک کے سب سے بڑے طیارہ بردار بحری جنگی جہاز آئی این ایس وکرما دتیہ پر خطاب کرتے ہوئے مودی نے کہاکہ ہم پاکستان کے ساتھ صرف اِس لئے بات چیت کررہے ہیں تاکہ تاریخ کا دھارا موڑ دیا جائے، دہشت گردی کا خاتمہ کیا جائے اور پرامن تعلقات قائم کئے جائیں تاکہ علاقہ کے استحکام اور خوشحالی میں ایک دوسرے کے ساتھ تعاون کیا جاسکے۔ اُنھوں نے کہاکہ سرحدات اور سرحدی راستوں پر کئی چیلنج درپیش ہیں لیکن یہ کوشش قابل قدر ہے کیوں کہ امن کے فوائد زبردست ہیں اور ہم اپنے بچوں کا مستقبل داؤ پر نہیں لگاسکتے۔ چنانچہ ہم اُن کے ارادوں کا اندازہ اُن کی آئندہ پیشرفت سے لگائیں گے۔ اس کے لئے ہمیں ایک نئے مشیران قومی سلامتی سطح کے مذاکرات کرنے ہوں گے تاکہ صیانتی ماہرین کو ایک دوسرے کے روبرو لایا جاسکے۔

اُنھوں نے کہاکہ ہم کبھی بھی حفاظتی انتظامات میں کمی نہیں کریں گے۔ صرف دہشت گردی سے نمٹنے میں پڑوسی ملک کے خلوص کی جانچ کریں گے۔ یہ پہلی بار ہے جبکہ مودی نے ہند ۔ پاک تعلقات کے بارے میں خطاب کرتے ہوئے اعلان کیا ہے کہ وہ باہمی جامع مذاکرات کا گزشتہ ہفتہ سے ہی آغاز کرچکے ہیں۔ مودی کے اس اعلان کے بعد کہ وہ اپنے پاکستانی ہم منصب نواز شریف سے تبدیلی ماحولیات چوٹی کانفرنس پیرس میں 30 نومبر کو ملاقات کرچکے ہیں۔ اُنھوں نے پہلی بار کمانڈرس کی مشترکہ چوٹی کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ ہمیں نیوکلیر ہتھیاروں کے ذخیرہ میں اضافہ کے سلسلہ میں خبردار رہنا چاہئے۔ اُنھوں نے کہاکہ فوج کی جدید کاری اور توسیع سے غفلت نہیں برتنی چاہئے۔ ہمارے پڑوسی ممالک کے ساتھ تعلقات انتہائی مشکلات کا شکار ہیں اور صیانتی چیلنجس بے شمار ہیں۔ انھوں نے کہاکہ دہشت گردی اور جنگ بندی کی خلاف ورزیاں، نیوکلیر ذخیرہ میں اندھا دھند اضافہ اور دھمکیاں، سرحد کی خلاف ورزی اور فوج کی مسلسل جدید کاری و توسیع سے مغربی ایشیائی عدم استحکام مزید طویل عرصہ تک جاری رہے گا۔ مودی نے کہاکہ اس کے علاوہ ہمارا علاقہ غیر یقینی سیاسی عبوری دور سے گزر رہا ہے۔

TOPPOPULARRECENT