Friday , September 22 2017
Home / شہر کی خبریں / ہند ۔ امریکہ صحافتی آزادی کے فروغ ماحول کے لیے حوصلہ افزائی پر زور

ہند ۔ امریکہ صحافتی آزادی کے فروغ ماحول کے لیے حوصلہ افزائی پر زور

عالمی یوم آزادی صحافت پر امریکی قونصل خانہ و انڈین جرنلسٹس یونین کا مباحثہ ، مائیکل ملینس و دیگر کا خطاب
حیدرآباد۔ 5مئی (سیاست نیوز ) آزادی صحافت کی برقراری کے ذریعہ جمہوری اقدار کا تحفظ ممکن ہے۔ ہندستان و امریکہ کو صحافتی آزادی کے ماحول کو فروغ دینے کا سلسلہ جاری رکھتے ہوئے تحقیقی صحافت کی حوصلہ افزائی کرنی چاہئے ۔ امریکی قونصل جنرل متعینہ حیدرآباد مسٹر مائیکل ملینس نے آج عالمی یوم آزادی صحافت کے موقعہ پر انڈین جرنلسٹس یونین کے تعاون سے منعقدہ مباحث میں حصہ لیتے ہوئے ان خیالات کا اظہار کیا۔ امریکی قونصل خانہ حیدرآباد و انڈین جرنلسٹس یونین کی جانب سے منعقدہ مذاکرہ بعنوان ’’ ذرائع ابلاغ کی دھماکہ خیز ترقی ۔ صحافیوں کے اخلاقی مسائل ‘‘ منعقد کیا گیا جس میں قونصل جنرل امریکہ کے علاوہ مسٹر کے امرناتھ رکن پریس کونسل آف انڈیا ‘ مسٹر ایم سوم شیکھر ڈپٹی ایڈیٹر دی ہندو بزنس لائین ‘ پروفیسر ونود پاؤرالہ ‘مسٹر این رامچندر راؤ رکن قانون ساز کونسل ‘ مسٹر کے ۔ سرنیواس ایڈیٹر آندھرا جیوتی اور مسٹر ڈی امر جنرل سیکریٹری انڈین جرنلسٹس یونین کے علاوہ دیگر سرکردہ صحافی موجود تھے۔ مسٹر مائیکل ملینس نے اس موقعہ پر اپنے افتتاحی خطاب کے دوران کہا کہ ہندستان و امریکہ جیسے جمہوری ممالک میں ذرائع ابلاغ ادارے جمہوریت کے استحکام میں کلیدی کردار ادا کرتے ہیں۔ انہوں نے صحافت کو جمہوریت کا چوتھا ستون قرار دیتے ہوئے کہا کہ ہم جس طرح کے معاشرے میں جینا چاہتے ہیں اس کیلئے عدلیہ ‘ عاملہ ‘ قانون ساز اداروں کے ساتھ ذرائع ابلاغ بھی جمہوری اصولوں کی برقراری کے لئے ضروری ہے۔ قونصل جنرل نے ریاست آندھرا پردیش کی تقسیم کے بعد صحافتی حلقوں میں پیدا ہونے والے تغیرات کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ تشکیل تلنگانہ و تقسیم ریاست کے بعد نئے ذرائع ابلاغ ادارے کھولے جانے لگے ہیں جو کہ خوش آئند بات ہے۔ انہوں نے ذرائع ابلاغ کو جمہوریت کے حقیقی ہیرو قرار دیتے ہوئے کہا کہ جب تک صحافت و ذرائع ابلاغ کو آزادانہ خدمات کی انجام دہی کے لئے ماحول فراہم نہیں کیا جاتا اس وقت تک مضبوط و مستحکم جمہوریت قائم نہیں کی جاسکتی۔مسٹر مائیکل ملینس نے اس موقعہ پر بنگلہ دیش میں ایک صحافی کی ہلاکت اور بین الاقوامی سطح پر صحافیوں پر ہونے والے حملہ پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اختلاف رائے کا حق ہر کسی کو حاصل ہے لیکن اختلاف رائے کی صورت میں تشدد کی کوئی گنجائش نہیں ہونی چاہئے ۔اس مذاکرے کے دوران مسٹر گیبرئیل ہانس آلیوئیر عہدیدار برائے عوامی امور بھی موجود تھے۔ مذاکرے کے دوران شرکاء و مباحث میں حصہ لینے والوں نے ذرائع ابلاغ و صحافیوں کو درپیش کئی مسائل کا تذکرہ کیا اور ان کے حل کیلئے اقدامات کی ضرورت پر زور دیا گیا۔ اس دوران مسٹر کے سرنیواس ایڈیٹر آندھرا جیوتی نے بتایا کہ ماضی میں صحافی کو انقلابی اور معاشرتی برائیوں سے نبرد آزما ہونے والی شخصیت کے طور پر پیش کیا جاتا تھا لیکن اب تو فلموں میں بھی صحافیوں کے کردار کو منفی پیش کیا جا رہا ہے جس کی بنیادی اور اہم وجہ یہ ہے کہ ملک میں مکمل نظام کو بد عنوان تصور کیا جانے لگا ہے۔ علاوہ ازیں صحافیوں کی آزادی میں حکومت ‘ سیاسی جماعتوں کی مداخلت کے علاوہ انتظامیہ کے مفادات بھی خلل پیدا کرتے ہیں اسی لئے آزادی صحافت کو یقینی بنانے کے لیے صحافیوں کو خوف سے پاک ماحول کی فراہمی نا گزیر ہے۔

TOPPOPULARRECENT