Tuesday , August 22 2017
Home / شہر کی خبریں / …ہیرے کو بھی تراشنا پڑتا ہے! اس طرح

…ہیرے کو بھی تراشنا پڑتا ہے! اس طرح

جناب عامر علی خاں کی نظر نے کورٹلہ کے ہونہار طالب علم شیخ جنید کو پہچان لیا
حیدرآباد ۔ 18 ۔ اگست (سیاست نیوز) تعلیم یافتہ نوجوان نسل ہی قوم کے مستقبل کو تابناک بناسکتی ہے اور یہ ہونہار نوجوان نسل قوم کے وہ ہیرے ہیں جن کو چمک سے قوم کے اندھیرے دور ہوسکتے ہیں۔ تاہم ان ہیروں کی پہچان کیلئے حقیقی خدمت خلق کا جذبہ رکھنے اور سچی جستجو سے کام کرنے والوں کی ضرورت ہے اور روزنامہ سیاست اس کمی کو پورا کرنے کا اقدام کردیا ہے ۔ حقیقی ہیرے کو بھی تراشنا پڑتا ہے۔ اسی طرح شیخ جنید کا انتخاب کیا۔ شیخ جنید کورٹلہ ضلع کریم نگر سے تعلق رکھتا ہے ۔ اس طالب علم نے جو ایم جے کالج انجنیئرنگ سال سوم کا طالب علم ہے ۔ پورے کالج میں بہترین مظاہرہ کرتے ہوئے اپنی صلاحیتوں کو منوایا ہے اور 86 فیصد نشانات حاصل کیا ۔ شیخ جنید کورٹلہ کے ایک اردو میڈیم اسکول سے تعلیم حاصل کی ۔ وسائل اور معاشی کی کمی دوسرے مقام منتقل ہوکر تعلیم حاصل کرنے کی سکت اور مالی مسائل اسی لڑکے کو اس بات کی اجازت نہیں دیتے تھے ۔ تاہم جب اللہ رب العزت مدد کرنا چاہتا ہے تو بھی وسائل و ذرائع خود بخود بن جاتے ہیں۔ شیخ جنید کی ضلع کریم نگر میں بہترین تعلیمی مظاہرہ پر گلپوشی کی گئی اوراس تقریب میں نیوز ایڈیٹر سیاست جناب عامر علی خاں کو مدعو کیا گیا ۔ جب اس لڑ کے سے ملاقات ہوئی تو اسے پہلی نظر میں پہچان لیا اور اس کی صلاحیتوں کو پرکھ لیا ۔ ایک طرف تقریب جاری تھی ، تقاریر چل رہی تھیں لیکن جناب عامر علی خاں کے ذہن میں کچھ اور ہی فکر تھی۔ وہ بار بار جنید کی طرف دیکھتے رہے ۔ انہیں اندازہ ہوگیا تھا کہ یہ لڑکا قوم کا ہونہار ثپوت بن سکتا ہے اور کورٹلہ کا نام کرسکتا ہے اور پروگرام کے فوری بعد انہوں نے مہمانوں سے ملاقت کو مختصر کرتے ہوئے جنید کے ساتھ وقت گزارا۔ شیخ جنید کو ایس ایس سی کے بعد کورٹلہ میں کوئی مواقع نہیں ہے اور نہ ہی اس کے والد کی مالی حالت اتنی بہتر ہے کہ وہ ا پنے لڑکے کو اعلیٰ تعلیم دلا سکے۔ شیخ جنید کے والد بیڑی پیاکنگ کا کام کرتے ہیں۔ جنید کے خاندانی حالات سے مکمل واقفیت کے بعد جناب عامر علی خاں نے اس کی گلپوشی کی یہ تقریباً 5 سال قبل کا واقعہ ہے اور آج جناب عامر علی خاں نے دوبارہ پھر اس کی گلپوشی کی ۔ کورٹلہ سے حیدرآباد منتقل کروانا اور انٹرمیڈیٹ سے لیکر اب انجنیئرنگ میں تعلیم کے تمام مراحل اور اخراجات عامر علی خاں نے برداشت کئے  اور اس لڑکے کو اپنی کفالت میں لے لیا جوا پنی صلاحیتوں کو مسابقت کی اس دوڑ میں منوا رہا ہے۔

TOPPOPULARRECENT