Saturday , July 22 2017
Home / Top Stories / ہیمبرگ میں وزیراعظم مودی کی چینی صدر زی سے خوشگوار ملاقات

ہیمبرگ میں وزیراعظم مودی کی چینی صدر زی سے خوشگوار ملاقات

ایک دوسرے کی بھرپور ستائش، بریکس قائدین کا غیررسمی اجلاس ، چوٹی کانفرنس میں مکمل تعاون کی پیشکش
ہیمبرگ ۔ 7 جولائی (سیاست ڈاٹ کام) سکم سکٹر پر ہندوستان اور چین کے افواج کے درمیان پیدا شدہ شدید تعطل و کشیدگی کے درمیان وزیراعظم نریندر مودی اور چینی صدر ژی جن پنگ نے جرمن شہر ہیمبرگ میں جاری جی ۔ 20 چوٹی کانفرنس کے موقع پر بریکس قائدین کے غیر رسمی اجلاس میں مصافحہ کیا اور ’’وسیع تر موضوعات‘‘ پر گفت و شنید کی۔ وزارت امورخارجہ نے ’’مختلف مسائل‘‘ پر وسیع تر بات چیت کی۔ ترجمان نے مزید لکھا کہ ’’چین کی میزبانی میں منعقدہ بریکس قائدین کے غیر رسمی اجلاس میں وزیراعظم نریندر مودی اور صدر زی نے مختلف مسائل پر تبادلہ خیال کیا‘‘۔ اس ملاقات کو اس لئے بھی نمایاں اہمیت ہوگئی ہے کہ چین کے ایک سرکردہ عہدیدار نے کہا تھا کہ جی ۔ 20 چوٹی کانفرنس کے دوران مودی اور زی جن پنگ کی باہمی ملاقات کے لئے موجودہ فضاء سازگار نہیں ہے۔ بھوٹان کے تکونی جنکشن کے قریب ڈوکلم علاقہ میں ہندوستان اور چین کی افواج گذشتہ تین ہفتے سے تعطل اور رسہ کشی میں مبتلاء ہیں۔ اس علاقہ میں سڑک تعمیر کرنے چین کی کوشش پر یہ صورتحال پیدا ہوئی ہے۔ تاہم سکم کے قریب پیدا شدہ اس صورتحال کے باوجود مودی اور زی نے خوشگوار انداز میں ملاقات کی۔ مودی نے چین کی صدارت میں بریکس کی سرگرمیوں کی ستائش کی اور بیجنگ کی میزبانی میں منعقد شدنی بریکس چوٹی کانفرنس کے کامیاب انصرام کیلئے اپنے بھرپور تعاون کی پیشکش کی۔ مودی کے فوری بعد زی جن پنگ نے خطاب کیا اس دوران انہوں نے قبل ازیں ہندوستان کی صدارت میں اس تنظیم کے کاموں میں پیدا شدہ تحریک کی ستائش کی۔ پانچ ملکوں برازیل، روس، ہندوستان، چین او ر جنوبی افریقہ پر مشتمل تنظیم بریکس کی 9 ویں چوٹی کانفرنس ستمبر کے دوران چین کے علاقہ زیامن میں ہوگی اور زی نے کہا کہ وہ وہاں بریکس قائدین کے استقبال کے بے چینی سے منتظر ہیں۔ مودی نے یہاں بریکس کے غیر رسمی اجلاس کے انعقاد اور اس میں شرکت کیلئے انہیں مودی کرنے پر چینی صدر زی جن پنگ سے اظہارتشکر کرتے ہوئے اپنی تقریر کا آغاز کیا اور چینی قیادت میں بریکس کے کاموں میں ہونے والی پیشرفت پر زی جن پنگ کی بھرپور ستائش کی۔ مودی نے ہند میں اپنے خطاب کے دوران بریکس چوٹی کانفرنس کے کامیاب انعقاد کیلئے اپنے تعاون کی پیشکش کی۔

 

دہشت گردی سے مقابلہ اور عالمی معیشت کے فروغ پر زور
بریکس قائدین کو قیادت کا مظاہرہ کرنے کی ضرورت : مودی
ہیمبرگ ۔ 7 جولائی (سیاست ڈاٹ کام) وزیراعظم نریندر مودی نے ’’بریکس‘‘ ملکوں کے قائدین پر زور دیا کہ وہ عالمی معیشت کے فروغ اور دہشت گردی کے مقابلے کی مہم میں اپنی قیادت کا مظاہرہ کریں۔ انہوں نے جی ۔ 20 ممالک پر زور دیا کہ وہ دہشت گردی کیلئے فنڈس اور محفوظ پناہ گاہیں فراہم کرنے والوں کے علاوہ دہشت گردی کی تائید و مدد کرنے والوں کے خلاف اجتماعی کارروائی کریں۔ جی ۔ 20 چوٹی کانفرنس کے موقع پر بریکس قائدین کے غیر رسمی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے مودی نے زور دیا کہ عالمی معیشت کی پائیدار بحالی کیلئے مشترکہ طور پر کام کرنا ضروری ہے۔ انہوں نے اپنی حکومت کی طرف سے بشمول گڈس اینڈ سرویسیس ٹیکس (جی ایس ٹی) مختلف اصلاحات کا تذکرہ کیا۔ مودی نے کہا کہ ’’بریکس‘‘ ایک طاقتور آواز ہے اور ان ممالک کے قائدین کو دہشت گردی کے خلاف کارروائی اور عالمی معیشت کے فروغ کیلئے اپنی قیادت کا مظاہرہ کرنے کی ضرورت ہے۔ وزیراعظم مودی نے بالخصوص تجارتی اور علم و پیشہ ورانہ مہارت کے شعبوں میں بعض ملک کے تحفظ پسندانہ طریقہ کار کے خلاف بھی اجتماعی آواز اٹھانے کی ضرورت پر زور دیا۔ بریکس تنظیم برازیل، روس، ہند، چین اور جنوبی افریقہ پر مشتمل ہے۔ اس کے قائدین نے ایک ایسے و قتملاقات کی ہے جب اس کے رکن دو پڑوسی ملک ہند اور چین کی فوجیں سکم سیکٹر پر تعطل و کشیدگی کے ماحول میں ایک دوسرے کے مدمقابل ہوگئی ہیں۔ جی ۔ 20 ارکان میں بھی ہندوستان اور چین شامل ہیں۔ جی ۔ 20 کے رکن ممالک کا عالمی اقتصادی پیداوار میں 80 فیصد حصہ ہے۔

 

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT