Sunday , August 20 2017
Home / Top Stories / یاسین ملک کی دوبارہ گرفتاری کے بعد سری نگر میں مظاہرین اور سیکورٹی فورسز کے درمیان پرتشدد جھڑپیں

یاسین ملک کی دوبارہ گرفتاری کے بعد سری نگر میں مظاہرین اور سیکورٹی فورسز کے درمیان پرتشدد جھڑپیں

سری نگر ، 4 جون (سیاست ڈاٹ کام) جموں وکشمیر لبریشن فرنٹ (جے کے ایل ایف) کے چیئرمین محمد یاسین ملک کی سینٹرل جیل سری نگر سے رہائی کے بعد دوبارہ گرفتاری کے خلاف شہر کے مائسمہ اور اس سے ملحقہ علاقوں میں ہفتہ کی صبح احتجاجی مظاہرے بھڑک اٹھے جس کے دوران سیکورٹی فورسز نے احتجاجی مظاہرین کو منتشر کرنے کے لئے آنسو گیس کا استعمال کیا۔ذرائع نے بتایا کہ یاسین ملک کو گزشتہ رات سینٹرل جیل سری نگر سے رہا کردیا گیا۔ اگرچہ گذشتہ رات سیکورٹی فورسز کی ایک ٹیم نے انہیں دوبارہ حراست میں لینے کے لئے اُن کی مائسمہ میں واقع رہائش گاہ پر چھاپہ ڈالا، تاہم مزاحمت کی وجہ سے انہیں گرفتار نہ کرسکی۔ہفتہ کی صبح فرنٹ چیئرمین سیکورٹی فورسز کو چکمہ دیکر بڈشاہ چوک میں واقع ایک ہوٹل پہنچے جہاں انہوں نے پریس کانفرنس سے خطاب کیا۔ پریس کانفرنس کے بعدمسٹر ملک جب واپس گھر پہنچے تو وہاں انہیں سیکورٹی فورسز نے حراست میں لے لیا۔ پولیس نے مسٹر ملک کو 25 مئی کو گرفتار کرکے پہلے پولیس تھانہ کوٹھی باغ اور بعد میں سینٹرل جیل منتقل کردیا تھا۔ فرنٹ چیئرمین کی دوبارہ گرفتاری کی خبر پھیلتے ہوئے مائسمہ اور اس سے ملحقہ علاقوں کے لوگ جن میں زیادہ تعداد نوجوانوں کی تھی، نے پابندیاں توڑتے ہوئے سڑکوں پر نکل آئے اور آزادی کے حق میں اور سیکورٹی فورسز کے خلاف نعرے بازی شروع کی۔ سیکورٹی فورسز نے احتجاجی مظاہرین کے خلاف اُس وقت آنسو گیس کا استعمال کیا جب مظاہرین فورسز پر پتھراؤ کے مرتکب ہوئے ۔ احتجاجی مظاہرین یاسین ملک کی فوری رہائی کا مطالبہ کررہے تھے ۔جھڑپوں کی وجہ سے بڈشاہ چوک اور نذدیکی تاریخی لال چوک میں گاڑیوں کی آمدورفت کچھ دیر تک متاثر رہی۔ مائسمہ’ سری نگر میں حریت پسندی کے جذبات کے لحاظ سے انتہائی حساس علاقہ مانا جاتا ہے اور اس علاقہ میں مظاہرین اور سیکورٹی فورسز کے مابین جھڑپیں معمول کی بات ہے ۔ یہ علاقہ نہ صرف جے کے ایل ایف کا گڈھ سمجھا جاتا ہے بلکہ اس کا ہیڈکوارٹر اور اس کے چیئرمین کی رہائش گاہ بھی اسی علاقہ میں واقع ہیں۔علاقہ میں کل رات دیر گئے سیکورٹی فورسز کی جانب سے مبینہ چھاپہ مار کاروائیوں کے بعد مظاہرین اور سیکورٹی فورسز کے مابین جھڑپوں ہوئی تھیں اور اس کے پیش نظر علاقہ میں ہفتہ کی علی الصبح پابندیاں نافذ کردی گئی تھیں۔  ذرائع نے بتایا کہ علاقہ میں گزشتہ رات سیکورٹی فورسز کی جانب سے چھاپہ مار کاروائیوں کے بعد طرفین کے مابین پُرتشدد جھڑپیں ہوئیں۔سیکورٹی فورس اہلکاروں نے دکانداروں کے ایک گروپ کو بتایا ‘ہمیں شہریوں کو مائسمہ کی طرف جانے کی اجازت نہ دینے کے احکامات ملے ہیں’۔ ایسی ہی پابندیاں ریڈکراس روڑ، گاؤ کدل اور مدینہ چوک میں بھی عائد کی گئی ہیں۔

TOPPOPULARRECENT