Wednesday , September 20 2017
Home / عرب دنیا / یمنی مساجد امریکہ ، اسرائیل کے خلاف جنگ کا میدان بن گئیں

یمنی مساجد امریکہ ، اسرائیل کے خلاف جنگ کا میدان بن گئیں

صنعاء ۔ 14 نومبر۔(سیاست ڈاٹ کام) یمن میں گذشتہ ایک سال سے ایران نواز حوثی شیعہ باغیوں کے ہاتھوں جہاں اہل سنت انتقامی کارروائیوں کا ہدف بنے ہوئے ہیں وہیں ان کی مساجد بھی حوثیوں کے نشانے پر ہیں۔ حوثی مساجد پر قبضہ کر کے آئمہ اور خطباء کو اپنے من پسند وعظ اور خطبے دینے پر مجبور کر رہے ہیں۔اچانک چھاپوں کے دوران نمازیوں کو زد وکوب اور اغواء کے بعد غائب کرنا روزمرہ کا معمول بن چکا ہے۔ حوثیوں کی جانب سے تعینات ہونے والے خطباء اور مقررین جمعہ کے خطبات میں امریکہ اور اسرائیل کے خلاف تقاریر اور ان کے حامی  ’’امریکہ اور اسرائیل مردہ باد‘‘ کے نعرے لگاتے ہیں۔’العربیہ ‘ کے مطابق حوثیوں کے ایک گروہ نے دارالحکومت صنعاء کے شمال مشرقی کالونی میں واقع جامع مسجد المہاجرین پر دھاوا بولا اور نماز جمعہ کیلئے موجود دسیوں نمازیوں کو یرغمال بنانے کے بعد پیش امام اور خطیب کو منبر سے اتار دیا اس کے بعد حوثیوں کے ایک حامی شخص نے نماز جمعہ کی امامت کرائی۔ شمال مشرقی صنعاء میں مسجد پر دھاوے کا یہ پہلا واقعہ نہیں۔ حوثی باغی گذشتہ کچھ عرصے سے ایسے ہی اہل سنت کی مساجد کو انتقامی کارروائیوں کا نشانہ بنا رہے ہیں۔ حوثیوں کی جانب سے مساجد میں اپنے آئمہ کے ذریعے امریکہ اور اسرائیل پر تنقید کے ذریعے عوام کی ہمدردیاں حاصل کرنے کی کوشش کی جاتی ہے۔ مساجد میں امریکہ مردہ باد اور اسرائیل مردہ باد کے نعرے لگائے جاتے ہیں۔ایک عینی شاہدین کا کہنا ہے کہ چند ہفتے قبل حوثی جنگجوئوں نے مغربی صنعاء کی السنینہ کالونی میں ایک مسجد پر دھاوا بولا اور مسجد کے سنی امام کی جگہ نمازیوں کو زبردستی شیعہ امام کی اقتداء میں نماز ادا کرنے مجبور کیا۔

TOPPOPULARRECENT