Friday , June 23 2017
Home / ہندوستان / یوگی کا جاہلانہ بیان ، ناقابل فہم : مولانا ولی رحمانی

یوگی کا جاہلانہ بیان ، ناقابل فہم : مولانا ولی رحمانی

چیف منسٹر یوپی کے بیان پر مسلم پرسنل لاء بورڈ اور مسلم اداروں کی شدید برہمی
نئی دہلی ۔ 17 اپریل ۔ ( سیاست ڈاٹ کام ) اُترپردیش کے چیف منسٹر یوگی آدتیہ ناتھ کی جانب سے مسلمانوں میں تین طلاق کے عمل سے متعلق مسئلہ کو دروپدی کے کپڑے ا ُتارنے کے بارے میں مہابھارت کے واقعہ سے مربوط کئے جانے پر آل انڈیا مسلم پرسنل لاء بورڈ اور دیگر مسلم اداروں کے شدید ردعمل کا اظہار کیا ہے۔ آل انڈیا مسلم پرسنل لاء بورڈ کے جنرل سکریٹری مولانا ولی رحمانی نے کاکہ ’’میں نہیں جانتا کہ ( یوگی کے ) اس جاہلانہ بیان پر کس طرح ردعمل کا اظہار کیا ۔ وہ ( یوگی) تین طلاق کو دروپدی کے کپڑے اُتارنے سے متعلق ایک بڑے سنگین مسئلہ سے مربوط کررہے ہیں۔ کوئی بھی سمجھدار شخص ایسا نہیں کرسکتا ۔ وہ ان باتوں کو دوسرا چشمہ لگاکر دیکھ رہے ہیں‘‘ ۔ مولانا ولی رحمانی نے مزید کہا کہ مسلم پرسنل لاء بورڈ نے گزشتہ اپنے اجلاس میں ایک ضابطہ اخلاق جاری کرنے کا فیصلہ کیا اور خبردار کیا کہ اسلامی شریعت کے اُصولوں کی خلاف ورزی کرتے ہوئے طلاق دینے والوں کا سماجی بائیکاٹ کیا جائے گا ۔ آل انڈیا شیعہ مسلم پرسنل لاء بورڈ کے ترجمان مولانا یسوب عباس نے کہاکہ ’’طلاق کو دروپدی کے کپڑے اُتارنے کے واقعہ سے مربوط کرنا بالکل غلط ہے ۔ تین طلاق اگرچہ غلط ہے اور اس مسئلہ پر خاموش رہنا بھی غلط ہے ۔ کسی قانون پر طلاق مسلط کرنا گناہ ہے لیکن کپڑے اُتارنے سے اس کا تقابل نہیں کیا جاسکتا ‘‘ ۔ آل انڈیا مسلم ویمنس پرسنل لاء بورڈ کی صدر شائستہ عنبر نے کہاکہ طلاق کو دروپدی کے کپڑے اُتارنے کے واقعہ سے مربوط نہیں کیا جاسکتا ۔ جہیز کے لئے ہماری ہندو بہنوں کو مارا پیٹا جاتا ہے ۔ وزیراعظم اور چیف منسٹر کو اس مسئلہ پر بھی کوئی تبصرہ کرنا چاہئے ۔ کسی جائز شرعی وجہ کے بغیر تین طلاق دینے والوں کا سماجی بائیکاٹ کرنے آل انڈیا مسلم پرسنل لاء بورڈ کے فیصلہ پر شائستہ عنبر نے کہا کہ ’’محض معمولی سماجی بائیکاٹ کافی نہیں ہوگا کیونکہ اس سے کسی مظلوم و ستم رسیدہ عورت کو انصاف حاصل نہیں ہوگا ‘‘۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT