Tuesday , September 26 2017
Home / سیاسیات / یوگی کے راج میں اتر پردیش …………..

یوگی کے راج میں اتر پردیش …………..

دو ماہ میں عصمت ریزی کے 803 اور قتل کے 729 واقعات
لکھنو 18 جولائی ( سیاست ڈآٹ کام ) اترپردیش میں یوگی آدتیہ ناتھ حکومت کے ابتدائی دو مہینوں میں عصمت ریزی کے803 واقعات پیش آئے ہیں جبکہ ریاست میں اس دوران 729 قتل کے مقدمات درج ہوئے ہیں۔ ریاستی اسمبلی کو آج اس بات سے مطلع کیا گیا ۔ ریاستی وزیر برائے پارلیمانی امور سریش کمار کھننہ نے وقفہ سوالات کے دوران بتایا کہ 15 مارچ سے 9 مئی کے دوران ریاست بھر میں قتل کے 729 واقعات پیش آئے ہیں۔ عصمت ریزی کے واقعات کی تعداد 803 رہی ہے جبکہ لوٹ مار کے 799 مقدمات درج ہوئے ہیں۔ اس کے علاوہ ریاست بھر میں اغوا کے 2,682 معاملات سامنے آئے ہیں اور 60 ڈکیتیاں بھی ہوئی ہیں۔ سماجوادی پارٹی کے رکن شیلیندر یادو لالائی نے ایوان میں یہ مسئلہ اٹھایا اور دو مہینوں کے دوران ریاست بھر میں پیش آئے مختلف واقعات کی تفصیل طلب کی ۔ انہوں نے حکومت سے یہ بھی جاننا چاہا کہ ان معاملات میں حکومت کی جانب سے کیا کچھ کارروائی کی گئی ہے ۔ وزیر موصوف نے اپنے جواب میں بتایا کہ قتل کے جملہ 67.16 فیصد معاملات میں کارروائی کی گئی ہے اسی طرح عصمت ریزی کے 71.12 فیصد واقعات میں اور اغوا کے 52.23 فیصد واقعات میں حکومت کی جانب سے کارروائی کی گئی ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ ڈکیتی کے واقعات میں 81.88 فیصد اور لوٹ مار کے واقعات میں 67.05 فیصد کے خلاف کارروائی کی گئی ہے ۔ مسٹر شیلیندر یادو نے بتایا کہ ان واقعات میں مقدمہ درج کرنے کے علاوہ قومی سلامتی ایکٹ ( این ایس اے ) بھی تین ملزمین کے خلاف لاگو کیا گیا ہے ۔ اس کے علاوہ 126 افراد کے خلاف گینگسٹر ایکٹ نافذ کیا گیا ہے اور 131 کے خلاف غنڈہ ایکٹ لاگو کیا گیا ہے ۔ سماجوادی پارٹی کے رکن پارس ناتھ یادو نے کہا کہ حکومت سال گذشتہ سے تقابل کرتے ہوئے اس سال کا ڈاٹا پیش کرنے کو کہا تاہم وزیر موصوف کے پاس یہ ڈاٹا نہیں تھا ۔ وزیر موصوف نے بتایا کہ ریاستی حکومت جرائم کی روک تھام کیلئے پرعزم ہے اور جو کوئی بھی قوانین کی خلاف ورزی کریگا اس کے خلاف سخت کارروائی کی جائیگی ۔ انہوں نے بتایا کہ سابقہ حکومت میں مقدمات تک درج نہیں کئے جاتے تھے ۔ موجودہ حکومت میں چھوٹے چھوٹے جرائم میں بھی ایف آئی آر درج کی جا رہی ہے ۔ وزیر موصوف کے جواب سے غیر مطمئن قائد اپوزیشن رام گوند چودھری ( سماجوادی پارٹی ) نے کہا کہ حکومت لا اینڈ آرڈر کے محاذ پر ناکام ہوگئی ہے اور انہوں نے اپنی پارٹی کے ساتھیوں کے ہمراہ ایوان سے واک آوٹ کردیا ۔ کانگریس مقننہ پارٹی کے لیڈر اجئے کمار للو بھی اس مسئلہ پر کچھ سوالات کرنا چاہتے تھے لیکن ہنگامہ آرائی کے دوران ان کی آواز سنائی نہیں دی ۔ للو نے پارٹی ارکان کے ساتھ ایوان سے واک آوٹ کرتے ہوئے کہا کہ اپوزیشن کی آواز کو صرف اکثریت کی بنیاد پر دبایا نہیں جاسکتا ۔

TOPPOPULARRECENT