Thursday , September 21 2017
Home / ہندوستان / یکساں سیول کوڈ کی مخالفت عدلیہ کی توہین : وی ایچ پی

یکساں سیول کوڈ کی مخالفت عدلیہ کی توہین : وی ایچ پی

نئی دہلی ۔ 14 اکٹوبر (سیاست ڈاٹ کام) وشوا ہندو پریشد نے آج کہا کہ یکساں سیول کوڈ ملک گیر سطح پر متعارف کروانے کی مخالفت عدلیہ کی ’’توہین‘‘ ہے اور الزام عائد کیا کہ کانگریس ووٹ بینک سیاست کیلئے ایسا ہی کررہی ہے۔ وشوا ہندو پریشد نے کانگریس پر الزام عائد کیا کہ وہ مسلمانوں کو بھڑکا رہی ہے اور اپوزیشن پارٹی سے اپیل کی کہ وہ اس برادری کو الگ تھلگ رکھنے کی کوشش ترک کردے اور انہیں یکساں سیول کوڈ کے دھارے میں واپس لائے۔ یہ سپریم کورٹ کی ہدایت کی تعمیل بھی ہوگی۔ وی ایچ پی نے کہا کہ کانگریس اور مسلم بنیادوں پرستوں کا ردعمل سپریم کورٹ کی ہدایت پر کہ یکساں سیول کوڈ ملک گیر سطح پر نافذ کیا جائے عدلیہ کی توہین کے مترادف ہے اور ملک کے مفاد کے بھی خلاف ہے۔ وی ایچ پی کے جوائنٹ جنرل سکریٹری سریندر جین نے کہا کہ چند مسلم ووٹوں کی خاطر کانگریس نے ہمیشہ ہندوستانی عدلیہ کی اور دستور کی توہین کی ہے۔ مسلمانوں کی خوشامد کی یہ کانگریسی پالیسی ملک کے تقسیم کی وجہ بنی۔ یہ پارٹی دوبارہ مسلم طبقہ کو غیرمطمئن رہنے کی راہ پر ڈالنا چاہتی ہے۔ ملک کے تمام شہریوں کیلئے یکساں سیول کوڈ کی وکالت کرتے ہوئے وی ایچ پی قائد نے کہا کہ ہندوستان کے سوائے کسی بھی ملک میں مختلف شہریوں کیلئے مختلف قوانین نہیں ہیں۔ جب یکساں سیول کورٹ تمام عوام کیلئے نافذ کیا جاسکتا ہے تو ہم مسلمانوں کو کیوں چھوڑ دیتے ہیں۔ باقی ملک کو کیوں نہیں چھوڑتے۔ مسلمانوں پر یکساں سیول کوڈ نافذ کرنے میں کونسا مسئلہ ہے۔ مرکزی وزیرقانون ڈی وی سدانند گوڑا نے کل کہا تھا کہ یکساں سیول کوڈ قومی اتحاد کیلئے ناگزیر ہے اور اس کے نفاذ کا کوئی بھی فیصلہ وسیع تر مشاورت کے ذریعہ کیا جانا چاہئے۔ ان کے بیان پر یہ بحث چھڑگئی ہے کہ کیا سپریم کورٹ نے مرکزی حکومت سے سوال کیا تھا کہ کیا وہ یکساں سیول کوڈ نافذ کرنے کیلئے تیار ہے۔

TOPPOPULARRECENT