Wednesday , August 23 2017
Home / Top Stories / یکم جنوری کے بعد بدعنوان و کالا دھن رکھنے والوں کو مزید مشکلات

یکم جنوری کے بعد بدعنوان و کالا دھن رکھنے والوں کو مزید مشکلات

نوٹ بندی کا مقصد ڈیجیٹل معاملتوں کوفروغ دینا ‘ واجپائی دور حکومت کی ستائش ۔ مرکزی وزیر وینکیا نائیڈو کا خطاب
حیدرآباد 25 ڈسمبر ( این ایس ایس ) مرکزی وزیر اطلاعات مسٹر ایم وینکیا نائیڈو نے آج کہا کہ نوٹ بندی کی وجہ سے جو ایماندار افراد ہیں انہیں کوئی مسائل پیدا نہیں ہونگے اور نہ مشکلات پیش آئیں گی ۔ انہوں نے اشارہ دیا کہ جو لوگ بدعنوان ہیں اور جن کے پاس کالا دھن پوشیدہ ہے انہیں یکم جنوری 2017 کے بعد مزید مشکلات کا سامنا کرنا پڑسکتا ہے ۔ وینکیا نائیڈو نے کہا کہ کے فیصلے کا مقصد و منصوبہ عوام کو مشکلات سے دوچار کرنا نہیں ہے بلکہ اس فیصلے کے ذریعہ ڈیجیٹل معاملتوں کی حوصلہ افزائی کی جائیگی اور کالے دھن ‘ ٹیکس چوری کرنے والوں اور دہشت گردی کے خلاف جدوجہد میں مدد ملے گی ۔ وینکیا نائیڈو نے کہا کہ نوٹ بندی کے بعد جو رقومات بینکوںمیں جمع کروائی گئی ہیں اس تعلق سے لوگ جو چے میگوئیاں کر رہے ہیں وہ درست نہیں ہیں۔  انہوں نے کہا کہ جو کچھ بھی بینکوں میں رقومات جمع ہوئی ہیں ان کے حقیقی دولت ہونے یا کالا دھن ہونے کے تعلق سے ابھی تک کوئی فیصلہ نہیں ہوا ہے ۔ مسٹر وینکیا نائیڈو یہاں بی جے پی کی جانب سے منعقدہ ایک تقریب سے خطاب کر رہے تھے ۔ یہ تقریب سابق وزیر اعظم اٹل بہاری واجپائی کی سالگرہ پر منعقدہ یوم بہتر حکمرانی کے طور پر منعقد ہوئی تھی ۔ وینکیا نائیڈو نے اس الزام کی تردید کی کہ نریندر مودی کی حکومت کی جانب سے اڈانی اور امبانی کمپنیوں کی حمایت کی جا رہی ہے ۔ انہیں فائدے پہونچائے جا رہے ہیں۔ مسٹر نائیڈو نے کہا کہ سابقہ یو پی اے کے دور حکومت میں ان کمپنیوں کو 1.80 لاکھ کروڑ روپئے فراہم کئے گئے تھے ۔ انہوں نے اس بات پر تشویش کا اظہار کیا کہ سیاستدانوں میں اور قائدین میں رشوت اور بدعنوانیوں کا چلن عام ہوتا جا رہا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ اسی وجہ سے بہتر حکمرانی ممکن نہیں ہو رہی ہے ۔ مسٹر نائیڈو نے کہا کہ نوٹ بندی کی وجہ سے کشمیر میں حالات کو بہتر بنانے کی سمت مدد مل رہی ہے ۔ انہوں نے دعوی کیا کہ نوٹ بندی کے بعد ریاست میں سنگباری کے واقعات میں کمی آئی ہے ۔ ڈرگس کی سپلائی کم ہوئی ہے اور دہشت گردوں کی در اندازی کم ہوگئی ہے ۔ وینکیا نائیڈو نے دعوی کیا کہ سابق وزیر اعظم اٹل بہاری واجپائی کانگریس کی تائید کے بغیر وزیر اعظم بنے تھے اور انہوں نے ایک بہترین انتظامیہ فراہم کرتے ہوئے مثال پیش کی تھی ۔ انہوں نے ترقی کے ثمرات سے عوام کی زندگیوں میں تبدیلی لانے کی کوشش کی تھی ۔ انہوںنے کہا کہ موجودہ وزیراعظم نریندر مودی نے بھی ملک میں معاشی عدم مساوات کو ختم کرنے کے مقصد سے نوٹ بندی کا فیصلہ کیا تھا ۔ نوٹ بندی فیصلے کا مقصد نقد رقومات کو ختم کرنا نہیں تھا بلکہ اس کا مقصد ڈیجیٹل معاملتوں کو فروغ دینا ہے اور جو رقومات حاصل ہو رہی ہیں انہیں ملک کے غریب عوام کو ہاوزنگ کے علاوہ دیگر سہولیات فراہم کرنا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ واجپائی کے دور حکومت میں اصلاحات کی حوصلہ افزائی کی گئی تھی اور بہتر سڑکوں کی تیاری اور ہر گاوں کو ٹیلیفون کنکشن فراہم کرنے پر توجہ دی گئی تھی ۔ ہر گاوں کو قومی شاہراہوں سے جوڑنے کی کوشش کی گئی تھی ۔ ائرپورٹس اور ریلویز کو بھی تیز رفتار ترقی کے ذریعہ بہتر بنانے پر توجہ دی گئی تھی ۔

TOPPOPULARRECENT