Thursday , September 21 2017
Home / ہندوستان / ۔2.5 کروڑ غریب خاندانوں کو اجناس کی مفت سربراہی متوقع

۔2.5 کروڑ غریب خاندانوں کو اجناس کی مفت سربراہی متوقع

مودی حکومت کے دو سال کی تکمیل پر غریب دوست امیج بنانے کی کوشش ، نئی اسکیم زیرغور
نئی دہلی۔ 11 مئی (سیاست ڈاٹ کام) مرکزی حکومت انیتودیہ انا یوجنا کے تحت غریب ترین افراد کو مفت غذائی اجناس فراہم کرسکتی ہے جس سے ملک بھر کے 2.5 کروڑ انتہائی غریب خاندانوں کو فائدہ پہونچ سکتا ہے۔ حکومت کی اس مساعی کو اقتدار پر دو سال کی تکمیل سے عین قبل اپنی ساکھ کو غریبوں کی حامی بنانے کے اقدامات کا ایک حصہ سمجھا جارہا ہے۔ ذرائع نے کہا کہ غذائی سکیورٹی کی ایک نئی اسکیم کے تحت وزارت اغذیہ ایک تجویز پیش کرسکتی ہے جبکہ وزیراعظم کا دفتر (پی ایم او) بھی موجودہ قومی غذائی سکیورٹی قانون کو مزید بہتر بنانے کی کوشش کررہا ہے۔ باور کیا جاتا ہے کہ نریندر مودی حکومت کی نئی غذائی اسکیم کو کسی مجاہد آزادی سے موسوم کیا جاسکتا ہے۔ ملک میں فی الحال انتیودیہ کے تحت درج خاندانوں کو ماہانہ فی گھر 35 کیلو غذائی اجناس فراہم کئے جاتے ہیں جبکہ غذائی سکیورٹی قانون کے تحت ترجیحی طور پر منتخب خاندانوں کے ہر فرد کو فی کس پانچ کیلو اجناس دیئے جاتے ہیں۔ اس اسکیم کے تحت فی کیلو چاول کی قیمت 3 روپئے، فی کیلو گیہوں کی قیمت 2 روپئے اور دیگر اجناس جیسے باجرہ، جو اور مکئی وغیرہ کی فی کیلو قیمت ایک روپیہ ہے۔ انتیودیہ اسکیم کے تحت اجناس کی فراہمی کی صورت میں سبسڈی کے بوجھ میں اضافہ ہوگا۔ جو فی الحال 1.39 لاکھ کروڑ روپئے ہے۔ قومی غذائی سکیورٹی قانون کے تحت فراہم کئے جانے والے اجناس کی قیمت کا 90 فیصد حصہ مرکزی حکومت برداشت کرتی ہے لیکن ریاستیں 5 تا 8 فیصد سبسڈی ادا کرتے ہوئے تقریباً مفت فراہم کئے جانے والے ان اجناس کا کریڈٹ اپنے نام لینے کی کوشش کرتی ہے جس کے سبب مرکزی حکومت کو بھاری مصارف ادا کرنے کے باوجود سیاسی فائدہ حاصل نہیں ہورہا ہے چنانچہ مرکز نے نئی اسکیم متعارف کرنے کا فیصلہ کی ہے۔

TOPPOPULARRECENT