Thursday , August 17 2017
Home / Top Stories / ۔4 لاکھ روپئے سالانہ آمدنی تک انکم ٹیکس استثنیٰ متوقع

۔4 لاکھ روپئے سالانہ آمدنی تک انکم ٹیکس استثنیٰ متوقع

نوٹوں کی منسوخی سے برہم عوام کو خوش کرنے مرکز کی کوشش، نئے بجٹ میں رعایتوں کا امکان

نئی دہلی 20 ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام) نوٹوں کی منسوخی اور اس اقدام سے عوام کو ہونے والی دشواریوں سے پیدا شدہ برہمی کو کم کرنے کی کوشش کے علاوہ اترپردیش اسمبلی انتخابات کو ملحوظ رکھتے ہوئے مرکز نے اب عوام کو خوش کرنے کے اقدامات پر توجہ مرکوز کی ہے جس کے تحت توقع ہے کہ تنخواہ یافتہ طبقہ کو راحت پہونچانے کے لئے انکم ٹیکس کی حد استثنیٰ میں زبردست اضافہ کا فیصلہ کیا جارہا ہے۔ باوثوق ذرائع کے مطابق مرکزی حکومت، اب انکم ٹیکس کی موجودہ حد استثنیٰ 2.5 لاکھ روپئے سالانہ کو 4 لاکھ روپئے تک بڑھانے کا منصوبہ بنارہی ہے۔ باور کیا جاتا ہے کہ دو تلگو ریاستوں کے چیف منسٹرس جنھوں نے نوٹوں کی منسوخی کی تائید کی تھی، اب عوام کو خوش کرنے انکم ٹیکس کی حد استثنیٰ میں اضافہ کی تجویز پیش کی ہے۔ آندھراپردیش کے چیف منسٹر این چندرابابو نائیڈو اور تلنگانہ میں ان کے ہم منصب کے چندرشیکھر راؤ نے 500 اور 1000 روپئے کے نوٹوں کی منسوخی کے لئے وزیراعظم نریندر مودی کے فیصلہ کی تائید کی تھی لیکن اس پر عمل آوری کے طریقہ کار پر ذہنی تحفظات کا اظہار بھی کیا تھا۔ کے سی آر نے مودی سے تقریباً 50 منٹ بات چیت کی تھی۔ چندرابابو کو وزیراعظم نے چیف منسٹرس کی کمیٹی کا صدرنشین مقرر کیا تھا۔ ان دونوں چیف منسٹروں نے نوٹوں کی منسوخی سے عوام کو ہونے والی دشواریوں سے واقف کرواتے ہوئے برہم عوام کو خوش کرنے اور دیانتدار ٹیکس دہندگان کو مطمئن کرنے کے لئے چند اقدامات تجویز کئے تھے۔ انکم ٹیکس کی نئی شرحوں کے مطابق 4 لاکھ روپئے سالانہ آمدنی پر کوئی انکم ٹیکس عائد نہیں کیا جائے گا۔ 4 لاکھ تا 10 لاکھ روپئے سالانہ پر 10 فیصد، 10 لاکھ روپئے تا 15 لاکھ روپئے سالانہ پر 15 فیصد، 15 لاکھ روپئے تا 20 لاکھ روپئے پر 20 فیصد اور 20 لاکھ روپئے سالانہ سے زائد پر 30 فیصد انکم ٹیکس عائد کیا جاسکتا ہے۔ توقع ہے کہ حکومت اپنے آئندہ بجٹ میں انکم ٹیکس رعایتوں کا اعلان کرے گی۔

TOPPOPULARRECENT