Friday , August 18 2017
Home / ہندوستان / ہند ۔ پاک مذاکرات کے عمل کو تیز کرنے کی ضرورت : عمر عبداللہ

ہند ۔ پاک مذاکرات کے عمل کو تیز کرنے کی ضرورت : عمر عبداللہ

سرینگر 14 ڈسمبر ( سیاست ڈاٹ کام ) سابق جموں و کشمیر چیف منسٹر عمر عبداللہ نے ہندوستان اور پاکستان کے مابین بات چیت کے عمل کو متاثر کئے جانے کے خلاف خبردار کیا اور کہا کہ بات چیت کے عمل کو آگے بڑھاتے ہوئے اس کو متاثر کرنے کی کوششوں کو ناکام کیا جانا چاہئے ۔ انہوں نے واضح کیا کہ بات چیت میں جموں و کشمیر بھی ایک فریق ہے ۔ انہوں نے نریندر مودی حکومت سے اپیل کی کہ وہ ریاست کے ساتھ بھی بات چیت شروع کرے جس طرح سے پاکستان کے ساتھ بات چیت کی جا رہی ہے ۔ میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے عمر عبداللہ نے کہا کہ ہمیں جو کچھ کرنے کی ضرورت ہے وہ یہ ہے کہ ہم بات چیت کے عمل کو تیز رفتار کریں کیونکہ اس عمل کو متاثر کرنے کی کئی کوششیں ہوسکتی ہیں۔ بات چیت کے عمل کو ناکام بنانے کی کوششیں بھی ہوسکتی ہیں۔ ہماری کوشش یہ ہونی چاہئے کہ ایسی تمام کاوشیں ناکام ہوجائیں۔ نیشنل کانفرنس ورکنگ صدر یہاں پارٹی کے نئے ہیڈ کوارٹر کا افتتاح کرنے کے بعد اظہار خیال کر رہے تھے ۔ پارٹی ہیڈ کوارٹر کو گذشتہ سال سیلاب میں نقصان پہونچا تھا ۔ یہاں آگ لگنے کا بھی واقعہ پیش آیا تھا ۔ عمر عبداللہ نے کہا کہ یہ بات کوئی اہمہت نہیں رکھتی کہ بات چیت کہاں ہو رہی ہے ۔ اچھی بات یہ ہے کہ کم از کم بات چیت شروع ہوئی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ یہ اچھی بات ہے کہ بات چیت کا عمل شروع ہوگیا ہے ۔ اس میں کوئی قباحت نہیں ہے کہ ابتداء میں ہماری بات چیت تیسرے ملک میں ہوئی تھی ۔ ہمیں بنکاک میں بات چیت کرنی پڑی ۔ بات چیت اسلام آباد یا نئی دہلی میں نہیںہوئی تھی ۔ یہ کوئی بات نہیںہے ۔ اچھی بات یہ ہے کہ بات چیت کا عمل شروع تو ہوا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ہماری وزیر خارجہ نے اسلام آباد کا دورہ کیا اور بات چیت وہاں دوبارہ شروع ہوگئی ۔ اب جامع مذاکرات کے احیاء کا اعلان کیا جارہا ہے ۔ اب ہمیں یہ دیکھنا ہے کہ جامع بات چیت کا عمل کہاں تک پہونچتا ہے ۔ سابق چیف منسٹر نے کہا کہ جموں و کشمیر بھی اس بات چیت میں ایک فریق ہے چاہے ہندوستان اور پاکستان بھلے ہی ریاست کوا پنے طور پر کوئی فریق نہ بنائیں۔ انہوں نے کہا کہ ہم پہلے ہی سے فریق ہیں۔ ہم اس وقت سے اس مسئلہ کے فریق ہیں جب سے یہ مسئلہ پیدا ہوا ہے ۔ ہم بھی بات چیت میں حصہ لینا چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ جموں و کشمیر کے مسئلہ کو صرف داخلی اور بیرونی دونوں سطحوں پر مذاکرات کے ذریعہ ہی حل کیا جاسکتا ہے ۔ اسی انداز سے بات چیت آگے بڑھنی چاہئے ۔

TOPPOPULARRECENT