Sunday , October 22 2017
Home / Top Stories / تلنگانہ میں 5 آبپاشی پراجکٹس کیلئے تاریخی معاہدہ

تلنگانہ میں 5 آبپاشی پراجکٹس کیلئے تاریخی معاہدہ

بین ریاستی بورڈ کے قیام سے اتفاق،چیف منسٹر چندر شیکھر راؤ ، فڈنویس کی میڈیا سے بات چیت

حیدرآباد۔/8مارچ، ( سیاست نیوز) تلنگانہ اور مہاراشٹرا حکومتوں نے بین ریاستی آبپاشی پراجکٹس کی تعمیر کیلئے تاریخی معاہدہ پر دستخط کئے ہیں۔ ممبئی میں آج دونوں ریاستوں کے چیف منسٹرس کے چندر شیکھر راؤ اور دیویندر فڈ نویس نے معاہدہ پر دستخط کئے۔ وزیر آبپاشی ہریش راؤ، ریاستی وزراء اندرا کرن ریڈی، جوگو رامنا، حکومت کے مشیران ڈی سرینواس، آر ودیا ساگر راؤ، چیف سکریٹری راجیو شرما، پرنسپال سکریٹری آبپاشی ایس اے جوشی، چیف منسٹر کے ایڈیشنل سکریٹری سمیتا سبھروال، اسپیشل سکریٹری راج شیکھر ریڈی، مہاراشٹرا کے وزیر آبپاشی گریش مہاجن، پرنسپال سکریٹری آبپاشی ستیش ایم گویائیک اور دوسرے اس موقع پر موجود تھے۔ اس معاہدہ کے تحت دونوں ریاستوں کے درمیان آئندہ تعمیر ہونے والے آبپاشی پراجکٹس کیلئے بین ریاستی بورڈ کے قیام سے اتفاق کیا گیا۔ مہاراشٹرا حکومت نے متحدہ آندھرا پردیش میں اسوقت کی حکومت سے اس طرح کا معاہدہ کیا تھا۔ گوداوری کے پانی کے استعمال سے متعلق ٹریبونل کے فیصلہ کے مطابق دونوں ریاستیں پراجکٹس کی تعمیر کو یقینی بنائیں گی اور ان پر بورڈ نگرانی کرے گا۔ دونوں ریاستوں کے درمیان مشترکہ طور پر جن پراجکٹس کی تعمیر کی تجویز ہے ان میں لینڈی پراجکٹ، پرانہیتا پراجکٹ، کالیشورم پراجکٹ، پین گنگا پر 3مختلف بیاریجس کی تعمیر اور لوئیر پین گنگا پراجکٹ شامل ہیں۔ تعمیر کے موقع پر دونوں ریاستوں کے درمیان کسی تنازعہ یا شبہات کی یکسوئی مذکورہ بورڈ کرے گا۔ متحدہ آندھرا پردیش اور مہاراشٹرا کے درمیان کئے گئے معاہدہ کی نگرانی بھی اسی بورڈ کے ذمہ ہوگی۔ بورڈ کے صدرنشین کے عہدہ پر ایک، ایک سال کیلئے تلنگانہ اور مہاراشٹرا کے چیف منسٹرس ہوں گے۔ ایک چیف منسٹر کے صدر نشین ہونے کے موقع پر دوسرے چیف منسٹر معاون صدرنشین ہوں گے۔ دونوں ریاستوں کے وزرائے آبپاشی، وزرائے فینانس، وزرائے مال، وزرائے جنگلات، مرکزی آبی وسائل کے نمائندے دونوں ریاستوں کے پرنسپال سکریٹریز آبپاشی، سکریٹری فینانس، سکریٹری ریونیو، سکریٹری جنگلات، دونوں ریاستوں کے چیف کنزرویٹر آف فاریسٹ، تلنگانہ کے انجینئر اِن چیف آبپاشی اور دوسرے بحیثیت ارکان ہوں گے۔ بورڈ کا اصل دفتر حیدرآباد میں رہے گا تاہم اجلاس حیدرآباد یا ممبئی میں ہوں گے۔ معاہدہ کے بعد میڈیا کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ نے اسے تاریخی اور اہم پیشرفت سے تعبیر کیا۔ انہوں نے کہا کہ ریاستیں بھلے ہی الگ ہوں لیکن ہم پہلے ہندوستانی ہیں اور مسائل کی یکسوئی دونوں ریاستوں کے باہمی تعاون سے ہی کی جاسکتی ہے۔ انہوں نے چیف منسٹر مہاراشٹرا فڈ نویس سے اظہار تشکر کیا اور کہا کہ حال ہی میں وہ مہاراشٹرا کا دورہ کرچکے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ طویل جدوجہد کے بعد تلنگانہ ریاست کا قیام عمل میں آیا اور تلنگانہ عوام کی حکومت سے کئی امیدیں وابستہ ہیں۔ پانی، وسائل اور ملازمتوں کیلئے تلنگانہ جدوجہد کی گئی۔ سرحدی ریاستوں مہاراشٹرا، کرناٹک اور آندھراپردیش سے بہتر تعلقات کیلئے کوشاں ہیں۔ انہوں نے کہا کہ چیف منسٹر مہاراشٹرا نے بھی ان کی رائے سے اتفاق کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ گوداوری کا 2 تا 3ہزار ٹی ایم سی پانی سمندر میں ضائع ہورہا ہے لیکن پراجکٹس کی تعمیر سے دونوں ریاستیں اس کا استعمال کرسکتی ہیں۔ مہاراشٹرا کی جانب سے پانی کے استعمال کے بعد اسے تلنگانہ کیلئے چھوڑا جائے گا۔ یہاں سے آندھرا پردیش کو پانی چھوڑا جائے گا۔ چیف منسٹر مہاراشٹرا دیویندر فڈ نویس نے کہا کہ دونوں ریاستوں کی ترقی اہمیت کی حامل ہے اور اس معاہدہ سے گوداوری کے پانی کے استعمال میں مدد ملے گی۔ انہوں نے کہا کہ بین ریاستی پراجکٹس کی تعمیر سے نہ صرف پانی کا بہتر استعمال ہوگا بلکہ دونوں ریاستوں میں آبپاشی اور زرعی شعبہ کو فائدہ ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ ریاستوں کے درمیان وسائل کی بہتر انداز میں تقسیم ہونی چاہیئے اور یہ عوام کے حق میں ہے۔

TOPPOPULARRECENT