Monday , December 11 2017
Home / شہر کی خبریں / آئندہ سال اقلیتوں کیلئے 60 اقامتی اسکولس کے قیام کا منصوبہ

آئندہ سال اقلیتوں کیلئے 60 اقامتی اسکولس کے قیام کا منصوبہ

اسٹاف کے تقرر اور بجٹ کی منظوری کا انتظار ۔ محکمہ فینانس کی جانب سے کلئیرنس درکار
حیدرآباد۔/13فبروری، ( سیاست نیوز ) آئندہ تعلیمی سال سے تلنگانہ میں اقلیتوں کیلئے 60 اقامتی مدارس کے آغاز کیلئے اسٹاف کے تقرر اور بجٹ کی منظوری کا انتظار ہے۔ ریاستی کابینہ نے اگرچہ اسکولس کے قیام کو منظوری دے دی ہے تاہم محکمہ فینانس کی جانب سے ٹیچنگ اور نان ٹیچنگ اسٹاف کے تقررات اور تعمیر کیلئے بجٹ کا کلیرنس ابھی باقی ہے۔ سکریٹری اقلیتی بہبود سید عمر جلیل نے اس سلسلہ میں آج محکمہ فینانس کو متعلقہ فائیل روانہ کرتے ہوئے جلد منظوری کی خواہش کی ہے۔ 60اقامتی مدارس میں 30 لڑکوں اور 30لڑکیوں کیلئے ہوں گے اور چیف منسٹر نے جون سے کرایہ کی عمارتوں میں اسکولس کے آغاز کی ہدایت دی ہے۔ ٹیچنگ اور نان ٹیچنگ اسٹاف کے طور پر 1786 افراد پر مبنی عملے کا تقرر کیا جائیگا جس کے لئے محکمہ فینانس سے منظوری کا حصول ضروری ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ تلنگانہ پبلک سرویس کمیشن سے یہ تقررات کئے جائیں گے۔ اس کے علاوہ اسکولس کی تعمیر کیلئے پہلے سال 300کروڑ روپئے بجٹ کی منظوری کی تجویز پیش کی گئی۔ اقامتی اسکولس کے قیام کے سلسلہ میں سوسائٹی قائم کی گئی ہے جس نے اسکولس کے مقامات کی نشاندہی مکمل کرلی ہے اور کرایہ کی عمارتوں کی تلاش جاری ہے۔ چیف منسٹر اس اسکیم پر عمل آوری میں خاص دلچسپی رکھتے ہیں۔ محکمہ اقلیتی بہبود کیلئے جون سے 60اقامتی مدارس کا آغاز یقیناً کسی چیلنج سے کم نہیں۔ پہلے تو تمام سہولتوں سے آراستہ وسیع و عریض کرایہ کی عمارتیں مرکزی مقام پر دستیاب ہونا مشکل ہے تو دوسری طرف ہر اسکول میں 120 طلباء کے داخلے کو یقینی بنانا دوسرا اہم چیلنج ہے۔ اسکول میں پانچویں تا ساتویں جماعت تعلیم کا انتظام رہے گا۔ بتایا جاتا ہے کہ طلباء کی تلاش کیلئے رضاکارانہ تنظیموں سے تعاون حاصل کیا جائے گا۔ اقلیتی بہبود کے عہدیدار لڑکیوں کیلئے 30اقامتی مدارس میں درکار طالبات کی دستیابی کے بارے میں اندیشوں کا شکار ہیں۔ اقلیتوں میں لڑکیوں کو ہاسٹلس میں رکھ کر تعلیم دلانے کا رجحان کافی کم ہے اور پانچویں تا ساتویں جماعت کے طالبات کے داخلے ممکن نہیں ہیں۔ دیکھنا یہ ہے کہ اقلیتی بہبود کے عہدیدار چیف منسٹر کی اس اسکیم کو کس حد تک کامیاب کرپائیں گے۔ بتایا جاتا ہے کہ ٹیچنگ اور نان ٹیچنگ اسٹاف کے تقررات میں تلنگانہ پبلک سرویس کمیشن کو کافی وقت لگے گا کیونکہ کمیشن فی الوقت مختلف سرکاری محکمہ جات کے تقررات کے عمل میں مصروف ہے۔

TOPPOPULARRECENT