Saturday , November 25 2017
Home / شہر کی خبریں / آئندہ سال جون سے اقلیتی طلبہ کیلئے انگلش میڈیم اقامتی اسکولس

آئندہ سال جون سے اقلیتی طلبہ کیلئے انگلش میڈیم اقامتی اسکولس

2100 ٹیچنگ و نان ٹیچنگ اسٹاف کے تقررات، اے کے خان نگران اقلیتی اسکیمات کا جائزہ اجلاس
حیدرآباد۔ 21 ۔ نومبر (سیاست نیوز) محکمہ اقلیتی بہبود نے چیف منسٹر کی ہدایت کے مطابق آئندہ سال جون سے اقلیتی طلبہ و طالبات کیلئے 60 انگلش میڈیم اقامتی مدارس کے آغاز کی تیاری شروع کردی ہے۔ اقلیتی اسکیمات کی نگرانی کرنے والے سینئر آئی پی ایس عہدیدار اے  کے خاں نے آج اقلیتی بہبود کے عہدیداروں کے ساتھ جائزہ اجلاس منعقد کیا جس میں اقامتی مدارس کے آغاز کی حکمت عملی تیار کی گئی۔ سکریٹری اقلیتی بہبود سید عمر جلیل ، مینجنگ ڈائرکٹر اقلیتی فینانس کارپوریشن بی شفیع اللہ ، ڈائرکٹر اقلیتی بہبود ایم جے اکبر ، سکریٹری ڈائرکٹر اردو اکیڈیمی پروفیسر ایس اے شکور ، مینجنگ ڈائرکٹر کرسچین فینانس کارپوریشن وکٹر کے علاوہ چیف اگزیکیٹیو آفیسر وقف بورڈ محمد اسداللہ نے اجلاس میں شرکت کی۔ اے کے خاں نے عہدیداروں سے کہا کہ وہ آئندہ تعلیمی سال سے لڑکیوں کیلئے 30 اور لڑکوں کے لئے 30 اقامتی مدارس کے آغاز کو یقینی بنائیں اور پہلے سال کرایہ کی عمارتوں کا انتخاب کرلیں جبکہ ایک سال میں تمام 60 اسکولوں کی ذاتی عمارتیں تعمیر کرلی جائیں۔ پہلے مرحلہ میں پانچویں تا ساتویں جماعت تک کی کلاسس رہیں گی، بعد میں انہیں انٹرمیڈیٹ تک توسیع دی جائے گی۔ ہر اقامتی اسکول میں 120 طلبہ کی گنجائش فراہم کی جائے گی ۔ اے کے خاں نے پسماندہ طبقات کے اقامتی مدارس کا انتظام کرنے والی سوسائٹی کے طرز پر علحدہ سوسائٹی قائم کرنے کا مشورہ دیا اور جلد رجسٹریشن کرانے کی ہدایت دی۔ ان اسکولوں میں 85 فیصد طلبہ کا تعلق اقلیتی طبقات سے ہوگا جبکہ باقی 15 فیصد ایس سی ، ایس ٹی طلبہ ہوں گے۔ اقلیتی اسکولوں کی سوسائٹی کے صدرنشین چیف منسٹر چندر شیکھر راؤ ہوں گے جبکہ اے کے خاں کو سرپرست مقرر کیا گیا ہے ۔ نائب صدرنشین کی حیثیت سے سکریٹری اقلیتی بہبود سید عمر جلیل اور سکریٹری سوسائٹی کی حیثیت سے مینجنگ ڈائرکٹر اقلیتی فینانس کارپوریشن ذمہ داری نبھائیں گے۔ اے کے خان نے مستقل عمارتوں کی تعمیر کیلئے ضلع کلکٹرس سے رجوع ہونے کا مشورہ دیا ۔ 60 اسکولوں کیلئے چیف منسٹر نے 2100 ٹیچنگ اور نان ٹینچنگ اسٹاف کے تقرر کی اجازت دی ہیں اور یہ تقررات سوسائٹی کی جانب سے کئے جائیں گے ۔
اے کے خاں نے کہا کہ ریاستی حکومت اقلیتوں کی تعلیمی ترقی پر خصوصی توجہ مرکوز کر رہی ہے کیونکہ تعلیمی ترقی کے ذریعہ معاشی اور سماجی پسماندگی کا خاتمہ ممکن ہے۔

TOPPOPULARRECENT