Thursday , August 16 2018
Home / Top Stories / آئی ایس میں بھرتیوں کی سازش ، حیدرآباد میں 2 نوجوان گرفتار

آئی ایس میں بھرتیوں کی سازش ، حیدرآباد میں 2 نوجوان گرفتار

7 مقامات پر این آئی اے کے دھاوے ، بھاری مواد برآمد ، تجزیہ کیلئے فارنسک لیباریٹری منتقل

نئی دہلی۔ 12 اگست (سیاست نیوز) ممنوعہ بین الاقوامی دہشت گرد تنظیم ’’آئی ایس آئی ایس‘‘ کی طرف سے ہندوستانی نوجوانوں کو دہشت گرد حملوں کے لئے ذہن سازی اور سازشی و سرگرمیوں کی وسیع تر تحقیقات کے ایک حصہ کے طور پر این آئی اے نے اس دہشت گرد تنظیم سے ہمدردی رکھنے والے 2 نوجوانوں کو حیدرآباد سے گرفتار کرلیا۔ اس ادارہ کے ایک عہدیدار نے کہا کہ انہوں نے 24 سالہ عبداللہ باسط اور 19 سالہ محمد عبدالقدیر کو حیدرآباد میں گرفتار کرلیا تاکہ اس سازش اور ہندوستان میں دہشت گرد سرگرمیوں کو روبہ عمل لانے آئی ایس آئی ایس کے نظریہ کو فروغ دینے میں ان کے رول کا پوری طرح پتہ چلایا جاسکے۔/6 اگست سے مسلسل 9 افراد بشمول ایک لڑکی سے پوچھ گچھ کی جارہی تھی ۔ قومی تحقیقاتی ایجنسی 2016ء سے اس کیس کی تحقیقات کررہی ہے جس میں آئی ایس آئی ایس کے ارکان مبینہ طور پر ممنوعہ دہشت گرد تنظیم کی طرف سے اپنی سرگرمیوں کو جاری رکھنے کے لئے ہندوستانی نوجوانوں کی شناخت، بھرتی، ذہن سازی اور متحرک کرنے کی سازش میں ملوث ہیں۔ اس کیس میں این آئی اے کی طرف سے قبل ازیں 2 ملزمین شیخ اظہر الاسلام اور محمد فرحان شیخ گرفتار کئے گئے تھے جنہیں خاطی پائے جانے کے بعد 7 سال کے لئے جیل بھیج دیا گیا۔ ایک ملزم عدنان حسن کے خلاف مقدمہ کی سماعت جاری ہے۔ این آئی اے کے ترجمان نے کہا کہ ’’مزید تحقیقات کے دوران پتہ چلا کہ باوثوق ذرائع سے موصولہ تازہ ترین اطلاعات میں کہا گیا ہے کہ باسط بھی ملزم عدنان حسن اور اس کے چند ساتھیوں سے مسلسل ربط میں رہا کرتا تھا اور آئی ایس آئی ایس کی سرگرمیوں کو فروغ دینے کی سازش میں ملوث تھا۔ انہوں نے کہا کہ یہ مرکزی ایجنسی 6 اگست کو تازہ سراغ ملنے پر حیدرآباد کے 7 ٹھکانوں پر دھاوے کی تھی۔ اس دوران بھاری مواد بشمول الیکٹرانک اشیاء برآمد ہوئے جو تجزیہ کیلئے سنٹرل فارنسک لیباریٹری کو بھیج دیا گیا ہے۔ این آئی اے نے کہا کہ ’’ابتدائی پوچھ گچھ سے پتہ چلا ہے کہ عبداللہ باسط، محمد عبدالقدیر اور ان کے ساتھیوں نے ہندوستان میں دہشت گرد سرگرمیوں کو جاری رکھنے کیلئے آئی ایس آئی ایس سے وفاداری کا عہد کیا تھا۔

TOPPOPULARRECENT