Sunday , November 19 2017
Home / شہر کی خبریں / آبپاشی پراجکٹس پر کانگریس کی تنقید غیرضروری

آبپاشی پراجکٹس پر کانگریس کی تنقید غیرضروری

ٹی آر ایس رکن پارلیمنٹ ونود کمار ایم پی کا ردعمل
حیدرآباد۔ 21 اگست (این ایس ایس) ٹی آر ایس کے رکن پارلیمنٹ بی ونود کمار نے آج اپوزیشن کو اپنی سخت تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ وہ آبپاشی پراجکٹس پر ریاستی حکومت پر غیرضروری نکتہ چینی کررہی ہے۔ آج یہاں تلنگانہ بھون میں میڈیا کے نمائندوں سے مخاطب کرتے ہوئے مسٹر ونود نے کہا کہ کانگریس قائدین کو ریاستی حکومت کے خلاف ریمارکس کرنے کا کوئی اخلاقی حق نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ عادل آباد کی سرحد پر پراجیکٹس کیلئے 23 اگست کو مہاراشٹرا کے ان کے ہم منصب دیویندر فڈنویس کے ساتھ ایک تاریخی معاہدہ پر دستخط کرنے والے ہیں جس پر اپوزیشن کو حسد ہورہی ہے کیونکہ اس نے اس کے دور حکومت میں ایک بھی پراجیکٹ کی تکمیل نہیں کرسکی اور ترقی کے عمل میں بیخ کنی کررہی ہے۔ انہوں نے کانگریس قائدین جیسے اتم کمار ریڈی، ملوبٹی وکرامارکا، محمد علی شبیر اور دوسروں سے کہا کہ وہ آبپاشی پراجیکٹس پر حکومت پر کیچڑ اُچھالنے سے اجتناب کریں۔ انہوں نے الزام عائد کیا کہ کانگریس میں آبپاشی پراجیکٹس پر عام سوجھ بوجھ کا فقدان ہے۔ انہوں نے کہا کہ ریاستی حکومت پانی کی دستیابی کیلئے میڈی گڈہ پر ایک بیاریج تعمیر کرنے سنجیدہ ہے، کیونکہ کلیشیورم سے ضائع ہورہے 800 ٹی ایم سی پانی کو روکنے کیلئے اس کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس کو ٹی آر ایس حکومت کی جانب سے پانچ سال میں ایک کروڑ ایکرس کو سیراب کرنے کیلئے شروع کردہ طویل مدتی پروگرام پر تنقید کرنے کا کوئی اخلاقی حق نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس کو عوام کی مدد کیلئے تعمیری تنقید کرنا چاہئے اور حکومت کی امیج کو متاثر کرنے سے باز آجانا چاہئے۔

TOPPOPULARRECENT