Sunday , November 19 2017
Home / شہر کی خبریں / آبپاشی پراجکٹس کی راہ میں اپوزیشن کی رکاوٹوں پرہریش راؤ کی تنقید

آبپاشی پراجکٹس کی راہ میں اپوزیشن کی رکاوٹوں پرہریش راؤ کی تنقید

حیدرآباد۔/14اکٹوبر، ( سیاست نیوز) وزیر آبپاشی ہریش راؤ نے الزام عائد کیا کہ ریاست میں آبپاشی شعبہ اور کسانوںکی بھلائی کیلئے حکومت کے اقدامات کو اپوزیشن جماعتیں ہضم نہیں کرپارہی ہیں۔ میڈیا کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے ہریش راؤ نے کہا کہ اپوزیشن جماعتیں کسانوں سے ہمدردی کے نام پر مختلف احتجاجی پروگرام کررہی ہیں حالانکہ حکومت نے کسانوں کے بقایا جات کی ادائیگی اور حالیہ عرصہ میں فصلوں کو ہوئے نقصانات کی پابجائی کے اقدامات کئے۔ انہوں نے کہا کہ کسانوں کی تائید حاصل کرنے میں ناکام اپوزیشن جماعتیں حکومت پر الزام تراشی پر اُتر رہی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ نے آبپاشی شعبہ کی ترقی پر خصوصی توجہ مرکوز کی اور ایک کروڑ ایکر اراضی کو سیراب کرنے کا منصوبہ تیار کیا گیا۔ اسی مقصد سے آبپاشی پراجکٹ کی تعمیر کا آغاز کیا گیاہے۔ انہوں نے کہا کہ اپوزیشن جماعتوں کو حکومت پر تنقید کا کوئی حق نہیں کیونکہ ان کے دور حکومت میں کبھی بھی کسانوں اور آبپاشی پراجکٹس پر توجہ نہیں دی گئی۔ انہوں نے الزام عائد کیا کہ کانگریس اور تلگودیشم دور حکومت میں ہزاروں کسانوں نے خودکشی کی تھی لیکن حکومتوں نے متاثرہ کسانوں کو امداد تک فراہم نہیں کی۔ انہوں نے کہا کہ آندھرائی حکمرانوں نے تلنگانہ کو ہمیشہ نظراندازکردیا اور آج حکومت پر تنقید کرنے والے تلنگانہ کانگریس و تلگودیشم قائدین اسوقت خاموشی اختیار کئے ہوئے تھے۔ انہوں نے کہا کہ مشن کاکتیہ کے تحت چھوٹے تالابوں اور کنٹوں کا تحفظ کیا جارہا ہے تاکہ مستقل طور پر خشک سالی کی صورتحال کا خاتمہ ہوسکے۔ انہوں نے کہا کہ زرعی شعبہ کو 9 گھنٹے برقی کی سربراہی کے وعدہ پر عمل آوری کی جارہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ کسانوں کو نقلی بیج اور کھاد فراہم کرنے پر 90 ڈیلرس کے لائسنس منسوخ کئے گئے۔ انہوں نے کہا کہ زیرالتواء آبپاشی پراجکٹس کی مقررہ مدت میں تکمیل کے اقدامات کئے جارہے ہیں۔ ہریش راؤ نے آبپاشی پراجکٹس کی راہ میں اپوزیشن کی جانب سے رکاوٹوں پر تنقید کی اور تلگودیشم قائدین کو مشورہ دیا کہ وہ چندرا بابو نائیڈو کو تلنگانہ پراجکٹس کی مخالفت سے باز رکھیں۔

TOPPOPULARRECENT