Monday , November 19 2018
Home / ہندوستان / آدھار کارڈ کیلئے چہرہ کا بھی اِسکیان ، جولائی سے عمل حکومت کا ایک اور عوام کیلئے پریشان کن اقدام

آدھار کارڈ کیلئے چہرہ کا بھی اِسکیان ، جولائی سے عمل حکومت کا ایک اور عوام کیلئے پریشان کن اقدام

نئی دہلی۔ 16 جنوری (سیاست ڈاٹ کام) آدھار کارڈ کی تفصیلات لیک ہونے کی لگاتار آرہی خبروں کے درمیان آدھار کو مزید محفوظ بنانے کی سمت میں حکومت شہریوں کیلئے ایک اور متبادل لے کر آئی ہے۔ یونیک آئیڈنٹیفکیشن اتھاریٹی آف انڈیا یو آئی ڈی اے آئی فنگر پرنٹ اور آئیرس کے ساتھ اب فیس آتھینٹیکیشن (چہرے کی توثیق) کا متبادل لائی ہے۔ اس کا استعمال فنگر پرنٹ، آئیرس اور ون ٹائم پاس ورڈ (او ٹی پی) جیسے آدھار کو سرٹیفائی کرنے کے موجودہ ذرائع کے ساتھ کیا جائے گا۔ یہ جولائی سے نافذ ہوجائے گا۔ ویریفکیشن کی سطح میں یہ اضافہ آپ کے آدھار کو پہلے مقابلے زیادہ محفوظ بنائے گا۔ یہ بات یو آئی ڈی اے آئی نے پیر کو ایک نوٹیفکیشن جاری کرکے کہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ آدھار کے اِنرولمنٹ کے وقت عوام کے چہرے کی تصویر بھی لی جائے گی اور آدھار کارڈ ہولڈر کی شناخت کی تصدیق کرنے کیلئے اس کا استعمال کیا جائے گا۔ جن لوگوں کے فنگر پرنٹ اور آئیرس سے تصدیق کرنے میں پریشانی آتی ہے، انہیں فیس آتھینٹیکیشن کا اضافی متبادل دیا جائے گا۔ چونکہ یو آئی ڈی اے آئی کے ڈیٹا بیس میں چہرہ کی تصویر پہلے سے ہی موجود ہے۔ ایسے میں جن لوگوں کا آدھار بن چکا ہے، انہیں دوبارہ فوٹو کھنچوانے کی ضرورت نہیں ہوگی۔ علاوہ ازیں آتھینٹیکیشن ایجنسیوں کو بھی کوئی خاص پریشانی نہیں ہوگی کیونکہ ان کے پاس بھی لیاپ ٹاپ، موبائیل اور کیمرہ وغیرہ موجود ہے۔ اس لئے انہیں کسی اضافی ہارڈویئر کی ضرورت نہیں پڑے گی۔

TOPPOPULARRECENT