Tuesday , December 12 2017
Home / دنیا / آرمی چیف کو طیارہ پر سوار ہونے سے روکنے پر انڈونیشیا کی امریکہ سے وضاحت طلبی

آرمی چیف کو طیارہ پر سوار ہونے سے روکنے پر انڈونیشیا کی امریکہ سے وضاحت طلبی

جکارتہ،23 اکٹوبر (سیاست ڈاٹ کام) انڈونیشیا نے کہا کہ وہ امریکی حکومت سے اس بات کی تفصیلی وضاحت چاہتا ہے کہ ویزا اور سرکاری دعوت نامہ ہونے کے باوجود آرمی چیف جنرل گاٹوٹ نورمانتیو کو امریکی سفر سے کیوں روکا گیا اور اس کے پس پردہ اصل سبب کیا تھا۔خیال رہے کہ ہفتہ کے روز جنرل نورمانتیو کو امریکہ جانے والی امارات کی فلائٹ میں سوار ہونے سے روک دیا گیا تھا۔ اس معاملے میں امریکی جوائنٹ چیف آف اسٹاف جنرل جوسف ایف ڈنفورڈجونے ئر نے باقاعدہ انہیں سرکاری طور پر دعوت نامہ بھیجا تھا۔انڈونیشیا کے وزیر خارجہ رینٹو مارسودی نے امریکی کے ڈپٹی سفیر سے ملاقات کے بعد نامہ نگاروں کو بتایا کہ ہمیں ابھی ان کی طرف سے وضاحت کا انتظار ہے کہ آخر اس واقعہ کے پس پردہ اصل معاملہ کیا ہے ۔انہوں نے کہا کہ ہم نے اس معاملے کی سنجیدگی سے انہیں آگاہ کردیا ہے اور امریکی افسران اس بات کا پتہ لگانے کی کوشش کررہے ہیں کہ آخر یہ واقعہ کیوں ہوا تھا۔فوج کے ترجمان وریانتو نے بتایا کہ اوار کو جب فوج کے سربراہ امریکہ جانے والے طیارے میں سوار ہونے والے تھے تو طیارہ کے اسٹاف نے ان سے کہا کہ امریکی کسٹم اور بارڈر سیکورٹی ایجنسی انہیں امریکی علاقے میں داخل ہونے کے لئے رضامند نہیں ہے ۔اس واقعہ پر انڈونیشیا میں سخت ردعمل ہوا ہے اور متعدد افراد نے بینروں اور پوسٹروں کے ذریعہ مخالفت ظاہر کرتے ہوئے امریکی سفیر کو ملک سے باہر نکال دینے کا بھی مطالبہ کیا۔ مظاہرین کا کہنا ہے کہ امریکی شہریوں کو بھی انڈونیشیا سے واپس بھیج دینا چاہئے ۔ وزیر خارجہ نے کہا کہ انہیں یقین دہانی کرائی گئی ہے کہ جو معاملہ تھا اسے حل کرلیا گیا ہے اور آرمی چیف امریکہ جانے کے لئے آزاد ہیں۔

TOPPOPULARRECENT