Thursday , January 18 2018
Home / سیاسیات / آرٹیکل 370 پر بی جے پی کی سیاسی شعبدہ بازی

آرٹیکل 370 پر بی جے پی کی سیاسی شعبدہ بازی

نگروٹا (جموں و کشمیر) ۔ 3 ۔ ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام) مرکزی وزیر سادھوی نرنجن جیوتی کی نفرت انگیز تقریر کے تنازعہ کے پیش نظر چیف منسٹر جموں و کشمیر عمر عبداللہ نے آج کہا کہ وزیراعظم نریندر مودی کو چاہئے کہ کشمیری عوام سے معذرت خواہی کریں۔ انہوں نے آج یہاں ایک انتخابی جلسہ سے خطاب کے موقع پر میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ کشمیر ایک مسلم

نگروٹا (جموں و کشمیر) ۔ 3 ۔ ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام) مرکزی وزیر سادھوی نرنجن جیوتی کی نفرت انگیز تقریر کے تنازعہ کے پیش نظر چیف منسٹر جموں و کشمیر عمر عبداللہ نے آج کہا کہ وزیراعظم نریندر مودی کو چاہئے کہ کشمیری عوام سے معذرت خواہی کریں۔ انہوں نے آج یہاں ایک انتخابی جلسہ سے خطاب کے موقع پر میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ کشمیر ایک مسلم اکثریتی ریاست ہے اور سرینگر میں وزیراعظم ریالی منعقد کرنے والے ہیں۔ وزیراعظم کو اس ریالی میں معذرت خواہی کرنا چاہئے کیونکہ ان کی ایک کابینہ کی رفیق نے ہم جسے لوگوں کے خلاف نازیبا الفاظ استعمال کئے ہیں اور نریندر مودی کو یہ وضاحت کرنی ہوگی کہ چرب زبان مرکزی وزیر کے خلاف کیوں کارروائی نہیں کی گئی ، اس سوال پر کہ وزیراعظم کی مجوزہ ریالی میں ایک لاکھ افراد شریک ہونے کا بی جے پی نے دعویٰ کیا ہے۔ چیف منسٹر نے کہا کہ بی جے پی کے پاس دولت کی کمی نہیں ہے ۔ وہ شرکاء کیلئے غذاء اور گاڑیوں کا انتطام کرسکتی ہے اور وادی کشمیر سے ایک لاکھ افراد کو اکھٹا کرنا بڑی بات نہیں ہے ۔

انہوں نے بتایا کہ علحدگی پسند تحریک سے سیاست میں داخل ہونے والے سجاد لون نے تنہا 20 تا 30 افراد کو نریندر مودی کی ریالی میں لاسکتے ہیں۔ مسٹر عمر عبداللہ نے بی جے پی لیڈر ان کے ان الزامات کو مضحکہ خیز قرار دیا۔ نیشنل کانفرنس حکومت نے ریاستی عوام کیلئے مختص ترقیاتی فنڈس لوٹ لیتے ہیں اور کہا کہ انہیں یہ الزامات ثابت کرنا ہوگا کیونکہ کئی ایک ایجنسیاں سی بی آئی ، سی آئی ڈی اور انفورسمنٹ ڈائرکٹوریٹ مرکز کے کنٹرول میں ہے اور انہیں تحقیقات کروانے اب کیا رکاوٹ درپیش ہے۔ یہ دریافت کئے جائے کہ بی جے پی اب آرٹیکل 370 کی تنسیخ کا مسئلہ نہیں اٹھا رہی ہے ۔ عمر عبداللہ نے کہا کہ بی جے پی کی یہ قدیم عادت ہے کہ انتخابات کے وقت یہ مسئلہ چھیڑا جائے پھر بعد میں فراموش کردیا جائے لیکن اب کشمیر میں انتخابی فوائد کیلئے آرٹیکل 370 کے مسئلہ چھوڑدیا گیا ہے اور دیگر ریاستوں میں انتخابات کی صورت میں پھر مسئلہ چھیڑا جائے گا۔ واضح رہے کہ وزیراعظم نریندر مودی 6 ڈسمبر کو سرینگر اور اننت ناگ میں انتخابی جلسوں کو مخاطب کریں گے۔

TOPPOPULARRECENT