Wednesday , January 17 2018
Home / Top Stories / آرڈیننس کی بار بار اجرائی روکنا ضروری

آرڈیننس کی بار بار اجرائی روکنا ضروری

نئی دہلی 19 جنوری ( سیاست ڈاٹ کام ) صدر جمہوریہ پرنب مکرجی نے آج برسر اقتدار اور اپوزیشن جماعتوں سے کہا کہ وہ مختلف مسائل پر آرڈیننس کی اجرائی کو روکنے کیلئے مل بیٹھ کر ایک قابل عمل حل دریافت کریں۔ نریندر مودی کی قیادت والی این ڈی اے حکومت کی جانب سے مسلسل آرڈیننس کی اجرائی کے پس منطر میں کئے گئے ان ریمارکس میں صدر جمہوریہ نے اعتراف کی

نئی دہلی 19 جنوری ( سیاست ڈاٹ کام ) صدر جمہوریہ پرنب مکرجی نے آج برسر اقتدار اور اپوزیشن جماعتوں سے کہا کہ وہ مختلف مسائل پر آرڈیننس کی اجرائی کو روکنے کیلئے مل بیٹھ کر ایک قابل عمل حل دریافت کریں۔ نریندر مودی کی قیادت والی این ڈی اے حکومت کی جانب سے مسلسل آرڈیننس کی اجرائی کے پس منطر میں کئے گئے ان ریمارکس میں صدر جمہوریہ نے اعتراف کیا کہ دستور ہند میں غیر معمولی حالات میں آرڈیننس کی اجرائی کی اجازت ہے لیکن یہ راستہ عام قانون سازی کیلئے اختیار نہیں کیا جاسکتا اور نہ اسے اختیار کیا جانا چاہئے ۔ مرکزی جامعات و ریسرچ اداروں کے طلبا سے ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعہ خطاب کرتے ہوئے صدر جمہوریہ نے ایسی صورتحال کا حوالہ دیا جس میں برسر اقتدار جماعت کو راجیہ سبھا میں اکثریت حاصل نہ ہو تاہم انہوں نے کہا کہ قوانین بنانے اعداد و شمار کی بھرپائی کیلئے پارلیمنٹ کا مشترکہ اجلاس طلب کرنا قابل عمل نہیں ہے ۔ انہوں نے کہا کہ یہ سارے سیاسی اداروں کی ذمہ داری ہے کہ وہ مل بیٹھ کر ایک قابل عمل حل دریافت کریں۔ انہوں نے کہا کہ اپوزیشن جماعتیں مخالفت کرسکتی ہیں ‘ بے نقاب کرسکتی ہیں اور ناکام بھی بناسکتی ہیں لیکن ہمیشہ یہ بات ذہن نشین رکھنی چاہئے کہ یہ دونوں ایوانوں کے منتخبہ نمائندوں کی ذمہ داری ہے چاہے وہ راست لوک سبھا کیلئے منتخب ہوئے ہوں یا ریاستوں سے راجیہ سبھا کیلئے منتخب ہوئے ہوں۔ انہوں نے کہا کہ وہ سیاسی اداروں کو مشورہ دیتے ہیں کہ وہ مل بیٹھ کر اس کا کوئی قابل عمل حل دریافت کریں۔

TOPPOPULARRECENT