Monday , December 11 2017
Home / شہر کی خبریں / آر بی آئی سے 2000 کے نوٹس کی اجرائی میں سختی و راز داری

آر بی آئی سے 2000 کے نوٹس کی اجرائی میں سختی و راز داری

اے ٹی ایم ، بینکس اور بازار سے نوٹس غائب ہونے پر عوام شک و شبہات میں مبتلا
حیدرآباد۔20جولائی (سیاست نیوز) 2000 کے کرنسی نوٹ بازار سے ہی نہیں بلکہ بینکوں سے بھی غائب ہوتے جا رہے ہیں اور ریزرو بینک آف انڈیا کی جانب سے 2000 کے کرنسی نوٹوں کی اجرائی میں انتہائی سختی اور راز داری سے کام لیا جانے لگا ہے۔ بینکوں کی جانب سے بھی اس بات کا اعتراف کیا جا رہا ہے کہ آر بی آئی سے جو کرنسی موصول ہورہی ہے وہ 500 کے نوٹوں میں ہے اور 2000کے نوٹ صرف کھاتہ داروں کی جانب سے جمع کئے جانے کی صورت میں ہی موصول ہونے لگے ہیں۔ اسٹیٹ بینک آف انڈیا کے چیف آپریٹنگ آفیسرمسٹر نیرج ویاس نے بتایا کہ کرنسی تنسیخ کے بعد جو حالات پیدا ہوئے تھے ان میں اب تک 2000کے کرنسی نوٹ موصول ہو رہے تھے لیکن اب گذشتہ ایک ماہ کے دوران آر بی آئی نے 2000کے بجائے 500کے نوٹ روانہ کرنے شروع کئے ہیں جو کہ بینکوں کے لئے کوئی مشکل نہیں ہے لیکن اے ٹی ایم میں جہاں 2000 کی کرنسی نوٹ ہونی چاہئے وہاں بھی نہیں رکھی جا رہی ہے۔ 2000 کے کرنسی نوٹ بازار سے غائب ہونے لگے ہیں اور اس بات کا احساس سب کو ہے لیکن کوئی یہ بتانے سے قاصر ہے کہ یہ کرنسی نوٹ کہاں جا رہے ہیں کیونکہ بیشتر کا کہنا ہے کہ کرنسی تنسیخ کے بعد جو غیر محسوب دولت کو تبدیل کروانے میں کامیاب ہوئے ہیں ان لوگوں نے ان 2000 کے کرنسی نوٹوں کا ذخیرہ کرلیا ہے جس کے سبب بازاروں ‘ بینکوں اور اے ٹی ایم سے 2000 کے کرنسی نوٹ غائب ہوتے جا رہے ہیں جبکہ بعض ذرائع کا کہنا ہے کہ یہ حکومت کی حکمت عملی کا حصہ ہے ۔ تفصیلات کے مطابق اسٹیٹ بینک آف انڈیا کے ملک بھر میں موجود اے ٹی ایم میں 2000کے نوٹوں کی اجرائی کے بعد 60 لاکھ روپئے تک جمع کئے گئے تھے لیکن جاریہ ماہ کے اوائل سے اب تک کا جائزہ لیا جائے تو ملک بھر میں صرف 22لاکھ روپئے تک ہی 2000کے نوٹ اے ٹی ایم میں جمع کئے جا رہے ہیں اور اگر وہ واپس بینک تک پہنچتے ہیں تو ایسی صورت میں ایس بی آئی کے 58ہزار اے ٹی ایم میں یہ کرنسی جمع کی جا رہی ہے ورنہ نئی 2000کی کرنسی نوٹ اے ٹی ایم ہی نہیں بلکہ بینک تک نہیں پہنچ پا رہی ہے۔ آر بی آئی ذرائع کے مطابق کرنسی تنسیخ سے قبل عوام کے ہاتھو ںمیں 17لاکھ کروڑ روپئے نقد رقومات موجود تھیں لیکن تنسیخ کے فیصلہ کے بعد اب 9ماہ مکمل ہو چکے ہیں تو آر بی آئی ذرائع کا کہنا ہے کہ عوام کے درمیان صرف 14لاکھ 50 ہزار کروڑ ہی نقد رقومات موجود ہیں۔ بتایا جاتا ہے کہ ملک میں اب بھی 2تا3فیصد اے ٹی ایم غیر کارکرد ہیں یا ان سے صرف 100کے کرنسی نوٹ جاری کئے جا رہے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT