Thursday , August 16 2018
Home / ہندوستان / آسام : اقلیتی علاقوں میں 21 اقامتی اسکولس کے قیام کا فیصلہ

آسام : اقلیتی علاقوں میں 21 اقامتی اسکولس کے قیام کا فیصلہ

گوہاٹی 16 فبروری ( سیاست ڈاٹ کام ) حکومت آسام نے مرکز سے اشتراک کرتے ہوئے ریاست کے اقلیتی غلبہ والے علاقوں میں 21 ماڈل اقامتی اسکولس قائم کریگی تاکہ اقلیتوں کی سماجی ‘ معاشی اور تعلیمی ترقی ممکن ہوسکے ۔ چیف منسٹر آسام سربانندا سونووال نے اقلیتی بہبود سے متعلق ایک اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کمشنر و سکریٹری اقلیتی بہبود راجیش پرساد کو ہدایت دی کہ وہ ان ماڈل اسکولس کو ایک نمونہ کے طور پر ترقی دیں۔ ایک سرکاری اعلامیہ میں یہ بات بتائی گئی ۔ یہ ماڈل اسکولس ریاست کے 21 اضلاع میں قائم کئے جائیں گے اور اسے مختلف شعبوں کے ترقیاتی پروگرام برائے اقلیت کے تحت قائم کیا جا رہا ہے ۔ کہا گیا ہے کہ حکومت آسام کی جانب سے اس کام کیلئے کافی فنڈز فراہم کئے گئے ہیں۔ کہا گیا ہے کہ ہر اسکول کیلئے 30.42 کروڑ روپئے فراہم کئے جائیں گے ۔ چیف منسٹر نے محکمہ اقلیتی بہبود کے عہدیداروں سے کہا ہے کہ وہ ایک مرکزی سسٹم تیار کریں تاکہ اس پروگرام پر تیزی سے عمل ہوسکے اور اس کی نگرانی بھی ممکن ہوسکے ۔ کہا گیا ہے کہ اس مقصد کیلئے بجٹ میں رقم بھی سپلیمنٹری مطالبات کے ذریعہ فراہم کردی گئی ہے ۔ ان اسکولس کیلئے کامروپ ‘ نلباری ‘ بارپیٹا ‘ گول پارا ‘ کوکرا جھار ‘ چیرانگ ‘ دھوبری ‘ جنوبی سلمارا ‘ درانگ ‘ بسواناتھ ‘ موریگاؤں ‘ ناگاوں ‘ کاچر ‘ کریم گنج ‘ ہیلا کاندی ‘ بونگائی گاوں ‘ دیما ہساؤ ‘ کربی انگلانگ ‘ شمالی لکھم پور ‘ سونت پور کا انتخاب عمل میں لایا گیا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT