Friday , November 24 2017
Home / Top Stories / آسام اور کیرالا میں کانگریس کا صفایا، جیہ للیتا ، ممتا بنرجی کی شاندار کامیابی

آسام اور کیرالا میں کانگریس کا صفایا، جیہ للیتا ، ممتا بنرجی کی شاندار کامیابی

بی جے پی نے آسام میں اقتدار حاصل کرلیا، بدرالدین اجمل کے فرنٹ کو 13 نشستیں ، پڈو چیری میںکانگریس کی فتح، ’’منی الیکشن‘‘ کے نتائج

نئی دہلی۔ 19 مئی (سیاست ڈاٹ کام) بی جے پی نے آج آسام میں کانگریس کو اقتدار سے بے دخل کرتے ہوئے تاریخ رقم کی اور کیرالا میں کانگریس کو شکست ہوئی جہاں بائیں بازو محاذ کو اقتدار حاصل ہوا جبکہ ٹاملناڈو اور مغربی بنگال میں حکمران پارٹیوں انا ڈی ایم کے اور ترنمول کانگریس کا اقتدار برقرار ہے۔ یہ دونوں پارٹیاں مسلسل دوسری میعاد کے لئے منتخب ہوئی ہیں۔ مرکزی زیرانتظام علاقہ پوڈوچیری میں کانگریس اتحاد نے 17 ،اناڈی ایم کے نے 4 اور دیگر نے 9 نشستیں حاصل کی ہیں۔ آسام کے رائے دہندوں نے حکومت کے خلاف ووٹ دیا اور گزشتہ 15 سال سے اقتدار میں رہنے والی کانگریس کو بیدخل کردیا گیا۔ بی جے پی زیرقیادت اتحاد کو 126 رکن اسمبلی میں 60 نشستیں حاصل ہوئیں۔ ایک نئی جہت بناتے ہوئے بی جے پی نے جس کی گزشتہ انتخابات میں صرف 5 نشستیں تھیں، اس مرتبہ 60 نشستوں پر کامیابی حاصل کی ہے، اس کی اتحادی پارٹیوں اے جی پی اور بوڈو پیپلز فرنٹ کو 15 اور 12 نشستیں ملی ہیں۔ کانگریس جس نے گزشتہ انتخابات میں 78 نشستوں پر کامیابی حاصل کی تھی، اب وہ صرف 26 نشستیں تک ہی سمٹ کر رہ گئی ہے۔ بدرالدین اجمل کی زیرقیادت اے آئی یو ڈی ایف نے 13 نشستوں پر کامیابی حاصل کی ہے جبکہ آزاد امیدوار 6 نشستیں حاصل کرچکے ہیں۔ چار ریاستوں کے اسمبلی انتخابات میں سب سے بڑی حیرت کی بات یہ ہے کہ اگزٹ پولس ناکام ہوئے ہیں، اگزٹ پولس میں بتایا گیا تھا کہ پوڈوچیری میں ای ڈی ایم کو زبردست کامیابی ملے گی۔ روایات کے برعکس جیہ للیتا زیرقیادت پارٹی نے ریاست ٹاملناڈو میں دوسری میعاد کے لئے اقتدار حاصل کرلیا ہے۔ یہاں پر 1989ء سے کوئی بھی حکمراں پارٹی کو دوبارہ اقتدار نہیں ملا تھا، لیکن یہاں اپوزیشن کا بھی صفایا نہیں ہوا ہے۔ ٹاملناڈو میں ڈی ایم کے نے 87 نشستوں کے ساتھ ایک مضبوط اپوزیشن بن کر رہے گی۔ 234 رکن اسمبلی میں انا ڈی ایم کے کو 134 پر کامیابی ملی ہے۔ کانگریس کو 8 نشستیں حاصل ہوئی ہیں اور دیگر پارٹیوں نے ایک نشست حاصل کی ہے ۔ مغربی بنگال میں حکمران پارٹی ترنمول کانگریس نے ممتا بنرجی کی قیادت میں زبردست کامیابی حاصل کی ہے۔ اس نے سابق انتخابات کے تمام ریکارڈس کو پیچھے چھوڑ آیا ہے۔ گزشتہ 2011ء میں ترنمول نے 184 نشستوں پر کامیابی حاصل کی تھی اس مرتبہ اسے 15 نشستوں کا فائدہ ہے اور وہ 211 پر کامیاب ہے۔ کانگریس اور بائیں بازو اتحاد نے کوئی خاص اثر نہیں دکھایا۔ بائیں بازو محاذ کے گڑھ والے حلقوں میں سی پی آئی ایم کو 25 نشستیں حاصل ہوئیں ہیں۔ سی پی آئی نے 3 نشستیں حاصل کیں اور فارورڈ بلاک نے 4 پر کامیابی حاصل کی ہے۔ کانگریس نے صرف 44 نشستیں پائی ہیں۔ ہم کیرالا اسمبلی انتخابات میں حکومت کو بیدخل کرنے کے لئے ووٹ دینے کی روایات کو برقرار رکھتے ہوئے کانگریس کو اقتدار سے ہٹا دیا گیا۔ وہ بائیں بازو محاذنے 32 نشستیں حاصل کیں۔ 140 رکنی کیرالا اسمبلی میں کانگریس زیرقیادت یو ڈی ایف کو 47 پر کامیابی مل رہی ہے۔ آسام میں بدرالدین اجمل نے کہا کہ ان کی پارٹی اپوزیشن گروپ کو مضبوط بنائے گی۔ بی جے پی حکومت کے خلاف ایک طاقتور اپوزیشن کا رول ادا کرنا ضروری ہے۔ چیف منسٹر ترون گوگوئی نے بی جے پی کے کامیاب امیدواروں کو مبارکباد پیش کی۔

مغربی بنگال میں کانگریس۔ بائیں بازو اتحاد فاش غلطی : ممتابنرجی
کولکتہ میں ترنمول کانگریس سربراہ اور چیف منسٹر ممتا بنرجی نے کہا کہ سی پی آئی ایم اور کانگریس کا اتحاد سب سے بڑی فاش غلطی تھی۔ عوام نے ان کے خلاف اپوزیشن کے اس اتحاد کو بری طرح مسترد کردیا ہے۔ ممتا بنرجی نے اپوزیشن پر الزام عائد کرتے ہوئے اس نے اقتدار کی خاطر حکومت کے خلاف جھوٹے بیانات دیئے تھے اور ریاست کے سیاسی نتائج ایک تاریخی حیثیت رکھتے ہیں۔ انتخابی مہم کے دوران ایک لکشمن ریکھا کھینچی گئی تھی تاکہ ریاست میں عوامی سطح پر امن و امان قائم کیا جاسکے۔ انہوں نے کہا کہ مغربی بنگال کے عوام نے اپوزیشن کی گمراہ کن مہم کو مسترد کردیا ہے اور ان کی پارٹی کے خلاف عائد کردہ الزامات کو بھی عوام نے نظرانداز کردیا۔

ڈی ایم کے کی خاندانی حکمرانی کیخلاف عوام کا فیصلہ : جیہ للیتا
چیف منسٹر ٹاملناڈو جیہ للیتا نے 234 رکنی اسمبلی میں اپنی پارٹی انا ڈی ایم کے کی شاندار کامیابی پر اظہار مسرت کرتے ہوئے کہا کہ یہ عوام کا تاریخی فیصلہ ہے جو ڈی ایم کے کی خاندانی حکمرانی کے خلاف اُٹھ کھڑے ہوئے ہیں۔ یہ انتخابات خالص جمہوری بنیادوں پر منعقد کئے گئے۔ ڈی ایم کے نے جھوٹ کے سہارے جو مہم چلائی تھی، اس کو عوام نے مسترد کردیا۔ ان انتخابات میں خاندانی حکمرانی پر مکمل فُل اسٹاپ لگا دیا ہے۔ انہوں نے عوام سے اظہار تشکر کرتے ہوئے کہا کہ عوام نے ان پر بھروسہ کرکے اقتدار دوبارہ حوالے کیا ہے اور یہ میرے لئے اعزاز ہے۔

بدرالدین اجمل کو شکست
انا ڈی ایم کے سربراہ چیف منسٹر ٹاملناڈو جیہ للیتا نے آر کے نگر کی نشست پر اپنا قبضہ برقرار رکھا ہے۔ انہوں نے ڈی ایم کے حریف امیدوار کو 39,545 ووٹوں سے شکست دی۔ جیہ للیتا کو 97,218 ووٹ ملے جبکہ شملہ متو چوزہان کو 57,673 ووٹ حاصل ہوئے۔ سبکدوش چیف منسٹر آسام ترون گوگوئی نے ٹیٹابور حلقہ سے مسلسل چوتھی مرتبہ کامیابی حاصل کی۔ انہوں نے بی جے پی کے ایم پی کے پرساد کو 17,495 ووٹوں سے ہرایا۔ اے آئی یو ڈی ایف کے بدرالدین اجمل کو سلمارہ ساؤتھ سے شکست ہوگئی ہے۔ یہ بھی حیران کن بات ہے کہ اجمل کی پارٹی کو دیگر حلقوں سے کامیابی حاصل ہوئی ہے اور انہوں نے 13نشستیں حاصل کرلی ہیں۔

TOPPOPULARRECENT