آسام ‘ نیشنل رجسٹر آف سٹیزنس کی قطعی اشاعت کی مہلت میں توسیع نہیں

شہریوں کی تنقیح کا کام کسی مداخلت کے بغیر جاری رکھا جائے ۔ سپریم کورٹ کی واضح ہدایات
نئی دہلی20 فبروری ( سیاست ڈاٹ کام ) سپریم کورٹ نے آج آسام میں نیشنل رجسٹر آف سٹیزنس کی قطعی اشاعت کی مہلت میں کسی توسیع سے انکار کردیا اور مرکزی حکومت سے کہا ہے کہ یہ کام 31 مئی سے قبل کردیا جائے ۔ سپریم کورٹ نے کہا کہ ریاست میں ایک کروڑ شہریوں کے تنقیح کا کام کسی بھی گوشہ سے کسی مداخلت کے بغیر مسلسل جاری رہنا چاہئے ۔ جسٹس رنجن گوگوئی اور جسٹس آر ایف نریمان پر مشتمل ایک بنچ نے کہا کہ بنچ کی جانب سے 30 دن کے بعد آسام میں شہریوں کے قومی رجسٹر کی اشاعت کے کام میں ہونے والی پیشرفت کا جائزہ لیا جائیگا ۔ جب اٹارنی جنرل کے کے وینو گوپال نے بنچ سے کہا کہ یہ کام 31 مئی تک مکمل کرنا افرادی قوت کیلئے ممکن نہیں ہوگا تو سپریم کورٹ نے کہا کہ عدالت کا کام نا ممکن کو ممکن بنانا ہی ہے ۔ بنچ نے اٹارنی جنرل سے کہا کہ جو بات ایک بڑا مذاق بن گئی تھی اسے ایک حقیقت کا روپ دیا جارہا ہے۔ عدالت کا کام ہی ناممکن کو ممکن بنانا ہے اور ہم یہ کام کرینگے ۔ ہم گذشتہ چار سال سے اس کام کی نگرانی کر رہے ہیں اور اس سے واقفیت رکھتے ہیں۔ بنچ نے یہ بھی واضح کردیا کہ ریاست میں مجوزہ پنچایت اور مجالس مقامی انتخابات ریاستی الیکشن کمیشن اور ریاستی حکومت کی جانب سے منعقد کئے جائیں گے ۔ یہ انتخابات شیڈول کے مطابق جاریہ سال مارچ اور اپریل میں منعقد ہونے والے ہیں۔ عدالت نے مزید کہا کہ ریاستی الیکشن کمیشن اور ریاستی حکومت کو چاہئے کہ وہ ان انتخابات کے انعقاد کیلئے تمام تر ضروری اقدامات کرے ۔ بنچ نے نیشنل رجسٹر آف سٹیزنس کے کاموں کیلئے ریاست کیلئے ایک اضافی رابطہ کار مقرر کرنے کی درخواست بھی قبول نہیں کی اور کہا کہ جو رابطہ کار پراتیک ہجیلہ تھے وہ اس کام کو آگے بڑھائیں گے اور اس کے منطقی انجام کو پہونچائیں گے ۔ بنچ نے اس مسئلہ پر مزید سماعت 27 مارچ کو مقرر کی ہے ۔ قبل ازیں گذشتہ سال ڈسمبر میں پہلی مرتبہ مسودہ نیشنل رجسٹر آف سٹیزنس کی اشاعت عمل میں آئی تھی اور یہ کام بھی سپریم کورٹ کی ہدایت پر کیا گیا تھا ۔ سپریم کورٹ نے کہا تھا کہ جن شہریوں کے نام اس رجسٹر میں شامل نہ ہوں ان کے ادعا جات کا جائزہ لیا جائیگا اور اگر یہ درست پائے گئے تو ان کے نام قطعی فہرست میں شامل کئے جائیں گے ۔ سپریم کورٹ نے اس رجسٹر کی اشاعت کیلئے دی گئی مہلت میں توسیع کرنے مرکزی حکومت کی درخواست کو قبول نہیں کیا اور 31 مئی تک ہی یہ کام مکمل کرلینے کی ہدایت دی ہے ۔ آسام میں 1951 میں شائع کئے گئے نیشنل رجسٹر آف سٹیزنس کو اپ ڈیٹ کیا جا رہا ہے جسے بروقت تکمیل کرنے کی حکومت کو ہدایت دی گئی ہے ۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT