Wednesday , December 12 2018

آصف سابع کی فلاحی و رفاہی خدمات کو خراج ، ادارہ جات تلنگانہ کا اثاثہ

پرنسس اسریٰ کی چیف منسٹر کے سی آر سے ملاقات ، پرتپاک خیر مقدم ، مختلف امور پر بات چیت

پرنسس اسریٰ کی چیف منسٹر کے سی آر سے ملاقات ، پرتپاک خیر مقدم ، مختلف امور پر بات چیت
حیدرآباد۔/12ستمبر، ( سیاست نیوز) آصف ثامن نواب میر برکت علی خاں (مکرم جاہ بہادر ) کی شریک حیات پرنسس اسریٰ نے آج چیف منسٹر چندر شیکھر راؤ سے ملاقات کی۔ چندر شیکھر راؤ نے سلطنت آصفیہ کی شہزادی کا پرتپاک اور حیدرآبادی انداز میں استقبال کیا۔چیف منسٹر کے دفتر کے ذرائع نے بتایا کہ دونوں کے درمیان حیدرآباد کی ترقی اور دیگر مسائل پر بات چیت رہی۔ چیف منسٹر نے حیدرآباد اور تلنگانہ کی ترقی میں سلاطین آصفیہ کے کارناموں کی یاد تازہ کرتے ہوئے انہیں زبردست خراج عقیدت پیش کیا۔ انہوں نے پرنسس اسریٰ سے تلنگانہ ریاست کی تعمیر نو میں تعاون کی درخواست کی۔ بتایا جاتا ہے کہ چیف منسٹر نے سلاطین آصفیہ اور خاص طور پر آصف سابع نواب میر عثمان علی خاں کی فلاحی و رفاہی خدمات کا تذکرہ کیا اور ان کی جانب سے قائم کردہ مختلف تعلیمی و فلاحی اداروں کو تلنگانہ کا اثاثہ قراردیا۔ بتایا جاتا ہے کہ پرنسس اسریٰ نے تلنگانہ حکومت کی جانب سے عوامی بھلائی اور ترقی کے سلسلہ میں شروع کئے گئے مختلف اقدامات پر اظہار خوشنودی کیا اور حکومت کی ستائش کی۔ انہوں نے کہا کہ تلنگانہ میں عوامی خواہشات کے مطابق حکومت کام کررہی ہے۔ حیدرآباد کے برانڈ امیج میں اضافہ اور تاریخی عمارتوں اور حیدرآبادی تہذیب و ثقافت کے احیاء اور تحفظ کے سلسلہ میں کے سی آر حکومت کی مساعی پر بھی انہوں نے اپنی خوشنودی و مسرت کا اظہار کیا۔ تلنگانہ کی تعمیر نو کی جدوجہد پر انہوں نے کے سی آر کو مبارکباد پیش کی اور ہر ممکن تعاون کا یقین دلایا۔ چیف منسٹر کی حیثیت سے ذمہ داری سنبھالنے کے بعد سلطنت آصفیہ کی کسی اہم شخصیت سے کے سی آر کی یہ پہلی ملاقات تھی۔ چندر شیکھر راؤ تلنگانہ تحریک کے دوران اور پھر حکومت کی تشکیل کے بعد ہمیشہ ہی آصف سابع نواب میر عثمان علی خاں کے کارناموں کی کھل کر ستائش کرتے رہے ہیں۔ وہ چیریان پیالیس کے اطراف واقع برہمانند ریڈی پارک کا نام ’ آصف جاہی پارک ‘ رکھنے کا منصوبہ رکھتے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT