Wednesday , January 24 2018
Home / شہر کی خبریں / آلیر انکاؤنٹر واقعہ کی سی بی آئی یا برسر خدمت جج کے ذریعہ تحقیقات کروانے کا مطالبہ

آلیر انکاؤنٹر واقعہ کی سی بی آئی یا برسر خدمت جج کے ذریعہ تحقیقات کروانے کا مطالبہ

حیدرآباد۔/18اپریل ، ( سیاست نیوز) چیرمین تلنگانہ پولٹیکل جے اے سی پروفیسر کودنڈا رام نے آلیر فرضی انکاؤنٹر میں 5مسلم نوجوانوں کی مبینہ ہلاکت کے واقعہ کی ایس آئی ٹی کے ذریعہ تحقیقات کروانے سے متعلق حکومت کے فیصلہ کی شدید مخالفت کرتے ہوئے حکومت تلنگانہ سے پرزور مطالبہ کیا کہ وہ فوری طور پر آلیر فرضی انکاؤنٹر واقعہ کی سی بی آئی یا برسرخ

حیدرآباد۔/18اپریل ، ( سیاست نیوز) چیرمین تلنگانہ پولٹیکل جے اے سی پروفیسر کودنڈا رام نے آلیر فرضی انکاؤنٹر میں 5مسلم نوجوانوں کی مبینہ ہلاکت کے واقعہ کی ایس آئی ٹی کے ذریعہ تحقیقات کروانے سے متعلق حکومت کے فیصلہ کی شدید مخالفت کرتے ہوئے حکومت تلنگانہ سے پرزور مطالبہ کیا کہ وہ فوری طور پر آلیر فرضی انکاؤنٹر واقعہ کی سی بی آئی یا برسرخدمت جج کے ذریعہ تحقیقات کروائی جائیں تاکہ اس واقعہ کے پس پردہ حقائق کا پردہ فاش کیا جاسکے۔ پروفیسر کودنڈا رام آج تمام مسلم مذہبی رہنماؤں اور اکابرین کے زیر اہتمام فرضی انکاؤنٹر کے سلسلہ میں مدینہ ایجوکیشن سنٹر میں منعقدہ مشترکہ مشاورتی اجلاس میں بحیثیت مہمان خصوصی مخاطب تھے۔ انہوں نے آلیر فرضی انکاؤنٹر میں ہوئی 5مسلم نوجوانوں کی ہلاکت کو غیر جمہوری اور غیر دستوری عمل قرار دیتے ہوئے مذکورہ واقعہ کو جمہوریت کے قتل کے مترادف قرار دیا۔ انہوں نے کہا کہ دستور کی رو سے اگر کسی فرد کو گرفتار کیا جائے تو پولیس پر ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ وہ اسے اندرون 24گھنٹے عدالتی تحویل میں دیا جانا چاہیئے، پولیس پر یہ بھی ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ اگر کسی عدالتی تحویل کے ملزم کو جب عدالت لایا جارہا ہو تو جیل سے عدالت اور عدالت سے جیل تک بحفاظت واپس لایا جائے۔ اس کے برخلاف پولیس نے خود مبینہ طور پرنوجوانوں کوانکاؤنٹر میں ہلاک کردیا جو ایک انتہائی نامناسب اور قابل مذمت امر ہے۔ انہوں نے حکومت تلنگانہ پر زور دیا کہ وہ دستور کی قدر دانی اور دستور پر عمل آوری کے اقدار کو برقرار رکھتے ہوئے حکومت کو چاہیئے کہ وہ آلیر فرضی انکاؤنٹر میں ہوئی ہلاکتوں کی سی بی آئی انکوائری یا سیٹنگ جج کے ذریعہ آزادانہ تحقیقات کرواتے ہوئے اس واقعہ کے پس پردہ محرکات کا پتہ لگائے اور خاطیوں کے خلاف کارروائی کی جائے تاکہ ریاست کے عوام میں پائے جانے والے شکوک و شبہات اور تجسس کو دور کیا جاسکے۔ انہوں نے کہا کہ اس مسئلہ کو انسانی حقوق کمیشن سے بھی رجوع کیا گیا ہے اور وہ اس سلسلہ میں سینئر وکلاء سے بھی مدد طلب کرنے اور ان سے مشاورت کا سلسلہ جاری رکھے ہوئے ہیں۔ انہوں نے تمام مسلم جماعتوں کی جانب سے متحدہ طور پر آلیر فرضی انکاؤنٹر کے خلاف صدائے احتجاج بلند کرنے اس اجلاس کی بھرپور ستائش کرتے ہوئے تمام مسلم اقلیتوں سے خواہش کی کہ وہ ہمیشہ اسی طرح سے اپنے اتحاد کے ماحول کو برقرار رکھیں تاکہ اپنے مطالبات کی یکسوئی اور اپنے مطالبات کو منوانے میں کامیابی حاصل کی جاسکے۔ اس موقع پر صدر تحریک مسلم شبان جناب محمد مشتاق ملک نے مخاطب کرتے ہوئے حکومت تلنگانہ میں نام نہاد مسلم قیادت کو اپنی تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ ریاستی کابینہ میں شریک مسلم قیادت آلیر فرضی انکاؤنٹر سے متعلق کچھ کہنے سے قاصر ہے۔ انہوں نے کہا کہ جہاں کہیں بھی کوئی واقعہ پیش آجائے تو اس کا الزام سب سے پہلے مسلمانوں اور دہشت گردی سے جوڑ دیا جاتا ہے جس کے نتیجہ میں مسلم اقلیتوں کی نیک نامی متاثر ہورہی ہے۔ انہوں نے چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ سے پرزور مطالبہ کیا کہ وہ آلیر فرضی انکاؤنٹر میں ہوئی 5مسلم نوجوانوں کی ہلاکت کے واقعہ کو ایس آئی ٹی کے ذریعہ تحقیقات کے فیصلہ سے دستبرداری اختیار کرتے ہوئے اس واقعہ کی سی بی آئی یا سٹنگ جج کے ذریعہ آزادانہ اور منصفانہ تحقیقات کروائیں۔ اور فرضی انکاؤنٹر کے واقعہ میں ملوث 17پولیس ملازمین اور ایک سب انسپکٹر پولیس کو فوری معطل کردیا جائے۔ بصورت دیگر ریاست تلنگانہ کے مسلمانوں کی جانب سے بڑے پیمانے پر احتجاج منظم کرنے کا انتباہ دیا۔ اس موقع پر مسلم تنظیموں سے وابستہ رہنماؤں اور اکابرین جن میں حافظ پیر شبیر جمعیت علمائے ہند تلنگانہ و اے پی، جناب عبدالرحیم قریشی ( تعمیر ملت ) مولانا جعفر پاشاہ امارات ملت اسلامیہ، جناب اظہر الدین جماعت اسلامی، جناب مجاہد ہاشمی ( عوامی مجلس عمل ) کے علاوہ دیگر عمائدین اور اکابرین نے مخاطب کرتے ہوئے چیف منسٹر سے مطالبہ کیا کہ وہ آلیر فرضی انکاؤنٹر واقعہ کی سی بی آئی کے ذریعہ یا سٹنگ جج کے ذریعہ آزادانہ تحقیقات کرنے کا مطالبہ کیا اور مذکورہ واقعہ میں ملوث خاطیوں کے خلاف سخت قانونی کارروائی کی جائے۔ اس موقع پر جناب قاضی سمیع الدین مجلس علمیہ، مولانا ارشد قاسمی مجلس تحفظ ختم نبوت، مولانا فصیح الدین ندوی صفا بیت المال، مولانا عبدالغفار لجنتہ العلماء، مولانا مصدق القاسمی رابطہ مدارس عربیہ، مولانا تقی رضا عابدی تنظیم جعفریہ، مفتی معراج الدین ابرار وفاق المدارس، سعید قادری یحییٰ پاشاہ قادری انٹر نیشنل، مفتی عبدالمغنی مظاہری، سٹی جمعیت علماء حیدرآباد، مولانا عبدالغفار سلامی، سلامی آرگنائزیشن کے علاوہ دیگر نے بھی مخاطب کیا۔

TOPPOPULARRECENT