Tuesday , November 21 2017
Home / شہر کی خبریں / آلیر فرضی انکاونٹر کی تحقیقاتی رپورٹ کو مرکزی وزارت امور داخلہ کو روانہ کرنے کا مطالبہ

آلیر فرضی انکاونٹر کی تحقیقاتی رپورٹ کو مرکزی وزارت امور داخلہ کو روانہ کرنے کا مطالبہ

نیشنل کانفیڈریشن آف ہیومن رائٹس آرگنائزیشن تلنگانہ کی پریس کانفرنس
حیدرآباد ۔ 20 ۔ اگست : ( سیاست نیوز) : جاریہ سال 7 اپریل کو آلیر میں پیش آئے فرضی انکاونٹر واقعہ جس میں وقار احمد کے بشمول 5 زیر دریافت قیدیوں کی ہلاکت سے متعلق مکمل حقائق پر مبنی تحقیقاتی رپورٹ کو مرکزی وزارت امور داخلہ کو روانہ کرے تاکہ مقتولین کے لواحقین کے ساتھ انصاف رسانی ہوسکے ۔ یہ بات آج یہاں اسٹیٹ کوآرڈینٹر نیشنل کانفیڈریشن آف ہیومن رائٹس آرگنائزیشنس تلنگانہ مسٹر محمد عابد ، اسٹیٹ رکن مسٹر شیخ حسن اور مسٹر محمد احمد ( والد مقتول وقار احمد ) نے پریس کانفرنس میں بتائی ۔ انہوں نے بتایا کہ آلیر انکاونٹر ہوئے 4 ماہ سے زائد کا عرصہ بیت گیا لیکن اس کے باوجود حکومت نے اس سلسلہ میں تحقیقات میں کوئی اہم پیشرفت نہیں کی جب کہ واقعہ کو حکومت نے بجائے سی بی آئی کے ذریعہ تحقیقات کے ایس آئی ٹی کے حوالے کر کے اس مسئلہ کو برفدان کی نذر کردیا ۔ جس سے صاف ظاہر ہوتا ہے کہ حکومت اور پولیس کی ملی بھگت سے بنائی گئی فرضی انکاونٹر کی من گھڑت کہانی کی پردہ پوشی کی حکومت ناکام کوشش کررہی ہے ۔ انہوں نے آلیر فرضی انکاونٹر میں وقار احمد کے بشمول 5 زیر دریافت قیدیوں کو پولیس کی جانب سے ہاتھوں میں ہتھکڑیاں اور پیروں میں بیڑیاں پہنے ہوئے نہتے قیدیوں کو انکاونٹر کے نام پر ہلاکت کی شدید مذمت کرتے ہوئے آلیر فرضی انکاونٹر واقعہ کو سیاسی قتل قرار دیا ۔ انہوں نے بتایا کہ پولیس بجائے قاتلوں کے مقتولین کے خلاف ہی دفعہ 302 کے تحت مقدمہ درج کیا ہے جو ایک انتہائی نامناسب اور خلاف قانون ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ یونین منسٹری آف ہوم آفیسرس نے چیف سکریٹری حکومت تلنگانہ کو آلیر انکاونٹر تحقیقاتی رپورٹ روانہ کرنے سے متعلق نوٹس روانہ کیا ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ این سی ایچ آر او کی جانب سے آلیر فرضی انکاونٹر پر پروفیسر اے مارکس چیرپرسن آف این سی ایچ آر او کی زیر قیادت Fact Finding Report کو تیار کر کے ذرائع ابلاغ میں شائع بھی کیا گیا ۔ انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ آلیر فرضی انکاونٹر واقعہ کی صحیح انداز میں حقائق پر مبنی تحقیقات کرواتے ہوئے انکاونٹر واقعہ میں ملوث خاطی پولیس ملازمین کو فوری معطل کر کے ان کے خلاف دفعہ 302 کے تحت مقدمہ درج کر کے خاطیوں کو سخت سزا دی جائے ۔ بصورت دیگر عنقریب آندھرا بھون نئی دہلی پر بڑے پیمانے پر احتجاجی مظاہرہ کرنے کے علاوہ آلیر انکاونٹر مہلوکین کے افراد خاندان کی جانب سے بھی حیدرآباد میں ایک روزہ بھوک ہڑتال منظم کی جائے گی ۔ اس موقع پر مسٹر سید امتیاز علی ( بھائی مقتول امجد علی ) بھی موجود تھے ۔۔

TOPPOPULARRECENT