Thursday , December 13 2018

آل انڈیا وہپ کانفرنس سفارشات پر عمل آوری میں تلنگانہ سرفہرست

مرکزی وزراء اور چیف منسٹر راجستھان سے نمائندگی ، ڈاکٹر پی راجیشور ریڈی کا بیان
حیدرآباد۔ 8جنوری (سیاست نیوز) گورنمنٹ وہپ ڈاکٹر پی راجیشور ریڈی نے کہا کہ گووا اور وشاکھا پٹنم میں منعقدہ آل انڈیا وہپ کانفرنس کی سفارشات پر عمل آوری میں تلنگانہ ملک میں سرفہرست ہے۔ 2014ء میں گووا اور 2015ء میں وشاکھا پٹنم میں آل انڈیا وہپس کانفرنس منعقد ہوئی تھی۔ راجیشور ریڈی نے راجستھان کے اودئے پور میں منعقدہ 18 ویں آل انڈیا وہپ کانفرنس میں شرکت کی۔ میڈیا کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کانفرنس کی سفارشات اور فیصلوں سے واقف کرایا۔ انہوں نے کہا کہ فلور مینجمنٹ، ڈسپلن کی بحالی، مراعات کی نوٹس، ایوان میں ارکان کی موجودگی اور زیادہ دن تک ایوان کی کارروائی چلانے جیسے امور پر کانفرنس نے تجاویز پیش کی ہے۔ ملک کی تمام اسمبلیوں اور کونسل کے ارکان کی یکساں تنخواہوں کے سلسلہ میں آزادانہ کمیشن کے قیام کی سفارش کی گئی۔ کانفرنس نے تجویز پیش کی کہ اسمبلی کی کارروائی کے آغاز اور کارروائی کے درمیان فلور لیڈرس کے ساتھ بی ایس سی کا اجلاس منعقد کرتے ہوئے ایوان میں عوامی مسائل پر مباحث اور خوشگوار انداز میں کارروائی کو یقینی بنایا جاسکتا ہے۔ ارکان پارلیمنٹ اور اسمبلی کو الاٹ کئے جانے والے حلقہ جاتی ترقیاتی فنڈس کی اجرائی اور ان کے استعمال کے بارے میں کانفرنس نے مختلف تجاویز پیش کی اور کہا کہ عوامی نمائندوں کو ترقیاتی کاموں میں فنڈس کی کمی نہیں ہونی چاہئے ۔ راجیشور ریڈی نے کہا کہ کانفرنس کی سفارشات پر تلنگانہ میں بہتر عمل آوری کی جارہی ہے اسمبلی اور کونسل کے زائد دنوں تک انعقاد اور عوامی مسائل پر زیر حاصل مباحث کو یقینی بنانے میں حکومت نے اہم رول ادا کیا ۔ انہوں نے کہا کہ تلنگانہ اسمبلی کا سرمائی اجلاس 20 دن تک جاری رہا جو اسمبلی کی تاریخ میں ایک کارنامہ ہے۔ گووا میں جاری کانفرنس میں راجیشور ریڈی کے علاوہ دونوں ایوانوں کے گورنمنٹ وہپ بی وینکٹیشور لو ، جی سنیتا مہیندر ریڈی اور گمپا گوردھن شرکت کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ راجستھان کے چیف منسٹر وسندرا راجے اور مرکزی وزیر قانون اننت کمار اورمرکزی وزیر وجئے گوئل سے ملاقات کرتے ہوئے مختلف امور پر نمائندگی کی گئی۔

TOPPOPULARRECENT