Tuesday , November 21 2017
Home / شہر کی خبریں / آندھرائی حکمراں آج بھی تلنگانہ کے آبپاشی پراجکٹس میں رکاوٹ

آندھرائی حکمراں آج بھی تلنگانہ کے آبپاشی پراجکٹس میں رکاوٹ

پانی کے استعمال پر نئی ریاست کو محروم کرنے کی کوشش ، وزیر داخلہ این نرسمہا ریڈی
حیدرآباد۔/23جون، ( سیاست نیوز) وزیر داخلہ این نرسمہا ریڈی نے برہمی کا اظہار کیا کہ آندھرائی حکمراں آج بھی تلنگانہ کیلئے آبپاشی پراجکٹس کی تعمیر میں رکاوٹیں پیدا کررہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پانی کے استعمال کے مسئلہ پر تلنگانہ کو اس کے حق سے محروم کرنے کی کوشش کی جارہی ہے۔ وزیر داخلہ نے میڈیا کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کے سی آر کی زیر قیادت ٹی آر ایس حکومت کی دو سالہ ترقیاتی اور فلاحی اسکیمات کا احاطہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ حکومت نے عام آدمی کے مسائل کی یکسوئی کیلئے توجہ مرکوز کی ہے۔ غریبوں کیلئے کئی اسکیمات کا آغاز کیا گیا جن میں بعض اسکیمات ایسی ہیں جن کا انتخابی منشور میں کوئی تذکرہ نہیں لیکن کے سی آر نے عوامی ضرورت کو محسوس کرتے ہوئے اسکیمات کا آغاز کیا ہے۔ وزیر داخلہ نے کہا کہ آبپاشی پراجکٹس کی تعمیر کے ذریعہ حکومت ہر گاؤں کو پانی سیراب کرنا چاہتی ہے اور چیف منسٹر نے ایک کروڑ ایکر اراضی کو سیراب کرنے کا نشانہ مقرر کیا ہے۔ وزیر داخلہ نے اپوزیشن پارٹیوں کو تنقید کا نشانہ بنایا اور کہا کہ وہ پراجکٹس کے بارے میں عوام میں غلط فہمی پیدا کرتے ہوئے رکاوٹیں کھڑی کررہے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ ملنا ساگر پراجکٹ پر غیر ضروری سیاست کی جارہی ہے اور عوام کو مشتعل کرتے ہوئے پراجکٹ کی تعمیر میں رکاوٹ پیدا کرنا چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اس پراجکٹ کی تعمیر کے سلسلہ میں اراضی سے محروم ہونے والے افراد کو مناسب معاوضہ ادا کیا جائے گا۔ نرسمہا ریڈی نے کہا کہ اپوزیشن لاکھ رکاوٹیں کھڑی کرلیں لیکن کے سی آر حکومت پراجکٹ کی تعمیر بہر صورت مکمل کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ ایک ملنا ساگر پراجکٹ سے شمالی تلنگانہ کے اضلاع میں پانی کا مسئلہ مستقل طور پر حل ہوجائیگا۔ انہوں نے تلگودیشم اور کانگریس قائدین کو مشورہ دیا کہ وہ حکومت پر الزام تراشی کی سیاست ترک کرتے ہوئے عوام کی بھلائی کی فکر کریں۔ انہوں نے کہا کہ اگر اپوزیشن کے پاس تعمیری تجاویز ہوں تو وہ حکومت کو پیش کرسکتی ہیں۔ انہوں نے ترقیاتی کاموں اور پراجکٹس کی تعمیر میں رکاوٹ کو عوام دشمنی سے تعبیر کیا۔

TOPPOPULARRECENT