Wednesday , December 19 2018

آندھرا پردیش اسمبلی کا 19 جون سے پہلا اجلاس متوقع

اسپیکر کی نامزدگی کے لیے ناموں پر غور ، چندر ابابو نائیڈو کی مشاورت

اسپیکر کی نامزدگی کے لیے ناموں پر غور ، چندر ابابو نائیڈو کی مشاورت
حیدرآباد ۔ 10 ۔ جون : ( سیاست نیوز ) : نئی ریاست آندھرا پردیش کی قانون ساز اسمبلی کا پہلا اجلاس 19 جون سے منعقد ہونے کی توقع ہے ۔ آج یہاں اخباری نمائندوں سے غیر رسمی بات چیت کرتے ہوئے ریاستی وزیر حکومت آندھرا پردیش مسٹر بی گوپال کرشنا ریڈی نے اس بات کا انکشاف کیا اور بتایا کہ اسمبلی کے پہلے مجوزہ اجلاس کے انعقاد کی تیاریوں کا آغاز کردیا گیا ہے اور سکریٹری اسمبلی کو ضروری ہدایات دی گئی ہیں ۔ وزیر موصوف نے کہا کہ چیف منسٹر مسٹر این چندرا بابو نائیڈؤ نے آندھرا پردیش اسمبلی کا پہلا اجلاس منعقد کرنے کے لیے پرونم اسپیکر (عبوری اسپیکر ) کی نامزدگی کے لیے سینئیر ترین رکن اسمبلی کے نام پر سنجیدگی سے غور کرنے میں مصروف ہیں اور اس سلسلہ میں تمام کابینی رفقاء سے بھی مسٹر چندرا بابو نائیڈو نے نہ صرف عبوری اسپیکر بلکہ باقاعدہ اسپیکر و ڈپٹی اسپیکر کے ناموں کو بھی قطعیت دینے کے لیے تبادلہ خیال کیا اور بتایا جاتا ہے کہ چیف منسٹر آندھرا پردیش مسٹر چندرا بابو نائیڈو نے اپنے کابینی رفقاء میں قلمدانوں کی تقسیم کے معاملہ میں سینئیر قائدین وغیرہ سے تبادلہ خیال کررہے ہیں ۔ مسٹر گوپال کرشنا ریڈی نے واضح طور پر کہا کہ مسٹر چندرا بابو نائیڈو نے ریاست آندھرا پردیش کی تیز رفتار ترقی کو یقینی بنانے کے لیے کرپشن کا مکمل انسداد کرنے کا تہیہ کیا ہے اور اس طرح کرپشن کی کسی کو اجازت نہیں دی جائے گی بلکہ کرپشن کے خلاف سخت اقدامات کئے جائیں گے ۔ انہوں نے بالواسطہ طور پر صدر وائی ایس آر کانگریس پارٹی مسٹر وائی ایس جگن موہن ریڈی کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ کرپشن و مبینہ بے قاعدگیوں میں ملوث پائے جانے والے افراد کو ہرگز بخشا نہیں جائے گا ۔ بلکہ مبینہ بے قاعدگیوں کے ذریعہ حاصل کردہ اراضیات و مختلف املاک وغیرہ کو تلگو دیشم حکومت واپس حاصل کرلینے کے لیے سخت ترین اقدامات کرے گی ۔ انہوں نے مزید کہا کہ کابینہ کے مجوزہ اجلاس میں آندھرا پردیش کے عوامی مفادات کو پیش نظر رکھتے ہوئے ہی فیصلے کئے جائیں گے ۔۔

TOPPOPULARRECENT