Wednesday , February 21 2018
Home / شہر کی خبریں / ائمہ و موذنین کے ماہانہ اعزازیہ کی کئی ماہ سے عدم ادائیگی

ائمہ و موذنین کے ماہانہ اعزازیہ کی کئی ماہ سے عدم ادائیگی

سکریٹری اقلیتی بہبود دانا کشور کا عہدیداروں پر اظہار برہمی ، بقایا جات کی ادائیگی کے لیے 8 دن کی مہلت
حیدرآباد۔6۔ فروری (سیاست نیوز) سکریٹری اقلیتی بہبود ایم دانا کشور کی برہمی کے بعد تلنگانہ وقف بورڈ نے ائمہ و مؤذنین کے ماہانہ اعزازیہ اور متعلقہ خواتین کو امداد سے متعلق اسکیمات پر عمل آوری میں تیزی پیدا کرنے کا فیصلہ کیا ہے ۔ دونوں اسکیمات کی عمل آوری کا جائزہ لینے کے بعد سکریٹری اقلیتی بہبود نے ناراضگی کا اظہار کیا تھا۔ انہوں نے دونوں اسکیمات کی بہتر تشہیر کی ہدایت دی تاکہ مستحق افراد تک اسکیمات کے فوائد پہنچ سکیں۔ ائمہ و مؤذنین کا ماہانہ اعزازیہ گزشتہ کئی ماہ سے ادا نہیں کیا۔ اس سلسلہ میں وقف بورڈ کا استدلال ہے کہ ائمہ و مؤذنین کی تبدیلی کے بعد مسجد کمیٹیاں نئے امام اور مؤذنین کی تفصیلات سے وقف بورڈ کو واقف کرانے سے گریز کر رہے ہیں۔ اس کے علاوہ کئی ائمہ اور مؤذنین کے بینک اکاؤنٹ متعلقہ ضلع میں موجود نہیں ہے۔ اسی دوران چیف اگزیکیٹیو آفیسر وقف بورڈ منان فاروقی نے کہا کہ اسکیم پر عمل آوری کیلئے درخواست گزار ائمہ و مؤذنین کا بینک اکاؤنٹ متعلقہ ضلع میں ہونا ضروری ہے ۔ اکثر دیکھا گیا ہے کہ ائمہ اور مؤذنین کے بینک اکاؤنٹ ان کی متعلقہ ریاست میں ہے اور حکومت نے دیگر ریاستوں کے اکاؤنٹ میں رقم منتقل نہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ درخواست گزاروں کو اپنے متعلقہ ضلع میں اکاؤنٹ کھولنا ہوگا اور اس کی اطلاع وقف بورڈ یا متعلقہ ضلع انسپکٹر وقف کو دی جائے۔ مسجد کمیٹی کا اکاؤنٹ جس بینک میں ہے، اسی بینک میں درخواست گزار کا اکاؤنٹ ہو تو بہتر رہے گا ۔ انہوں نے انتظامی کمیٹی اور متولی حضرات سے خواہش کی کہ امام یا مؤذن کی تبدیلی کی وقف بورڈ کو فوری اطلاع دیں۔ چیف اگزیکیٹیو آفیسر نے بتایا کہ تفصیلات کی کمیٹی کے نتیجہ میں کئی ماہ سے اعزازیہ جاری نہیں کیا گیا۔ جن ائمہ اور مؤذنین نے صحیح تفصیلات داخل کی ہیں، انہیں نومبر تک اعزازیہ جاری کیا جاچکا ہے۔ انہوں نے اعتراف کیا کہ 7 تا 8 ماہ کے بقایہ جات باقی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ تقریباً 8000 درخواست گزاروں کو نئے اضلاع کے اعتبار سے اپنے منڈل کی تفصیلات داخل کرنی چاہئے ۔ کئی درخواست گزاروں نے منڈل کا ذکر نہیں کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ سکریٹری نے بقایہ جات کی ادائیگی کے لئے 8 دن کی مہلت دی ہے ۔ اسی طرح متعلقہ خواتین کی امداد سے متعلق اسکیم کیلئے وقف بورڈ میں بجٹ دستیاب ہے۔ انہوں نے کہا کہ 332 خواتین ایسی ہیں، جنہیں عدالت کے حکم کے متعلق تاحیات ماہانہ امداد وقف بورڈ کی جانب سے ادا کی جارہی ہے ۔ امداد کی رقم عدالت کی مقرر کردہ حد کے مطابق ہے۔ 1500 تا 2000 روپئے ادا کئے جاتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ 350 درخواستیں زیر التواء ہے، جن میں مکمل تفصیلات داخل نہیں کی گئیں۔ انہوں نے کہا کہ 4 تا 5 ماہ میں ایک بار امدادی رقم جاری کی جاتی ہے اور سالانہ تقریباً 2 کروڑ روپئے متعلقہ خواتین میں تقسیم کئے جاتے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ زیر التواء درخواستوںکی یکسوئی کے بعد سالانہ اجرائی میں اضافہ ہوگا۔ سکریٹری اقلیتی بہبود نے اسکیم کی موثر تشہیر کی ہدایت دی ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ عدالت نے زیر التواء درخواستوں کی مکمل یکسوئی تک وقف بورڈ کی جانب سے ماہانہ دو تا تین ہزار روپئے کی اجرائی کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ وقف ایکٹ کے تحت متعلقہ خواتین کو امداد جاری کرنے کی گنجائش موجود ہے۔ تاہم یہ عدالت کے احکاما

TOPPOPULARRECENT