Saturday , October 20 2018
Home / دنیا / ’اتاترک ‘کو دشمن بتانے پر ترکی ناراض ، فوج کی باز طلبی

’اتاترک ‘کو دشمن بتانے پر ترکی ناراض ، فوج کی باز طلبی

برسیلز؍استنبول۔18نومبر (سیاست ڈاٹ کام) ترکی سیاسی رہنمائوں کی مبینہ بے عزتی کے بعد ناروے میں ناٹو کی فوجی مشقوں سے علیحدہ ہو گیا ہے ۔اطلاعات کے مطابق ایک فوجی مشق میں دشمن کی تصویر اصل میں ترکی کے بانی قائد مصطفی کمال اتاترک کی تھی۔ترک میڈیا کا کہنا ہے کہ ایک سوشل میڈیا پر ترک صدر طیب رجب اردغان کے نام سے ایک جعلی اکاؤنٹ سے ناٹو مخالف پیغامات بھی بھیجے گئے ہیں۔ ان واقعات کے ردعمل میں ترکی نے مشقوں میں شریک اپنے 40 فوجیوں کو واپس بلا لیا ہے ۔ناٹو میں ترکی کی دوسری بڑی فوج ہے اور ترکی دولت اسلامیہ کے خلاف اتحاد اور افغانستان میں ناٹو مشن دونوں کا حصہ ہے ۔دوسری جانب ناروے کے وزیردفاع نے اس واقعہ کے بعد معافی مانگی ہے اور انھوں نے اس واقعہ کی ذمہ داری ایک انفرادی شخص پر ڈالی۔ترک ٹی وی چینل این ٹی وی کا کہنا ہے کہ اس واقعہ میں ملوث وہ ایک شخص ترک نژاد ناورے کا فوجی ہے ۔ناروے کے وزیردفاع کا کہنا ہے کہ اس واقعہ میں ملوث ناورے کا فوجی ایک ٹھیکیدار تھا جسے ان مشقوں کے لیے رکھا گیا تھا۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ اس حوالے سے تحقیقات کی جا رہی ہیں۔ترکی کی یورپی یونین میں رکنیت بھی تاخیر اور دیگر مشکلات کا شکار ہے ۔

TOPPOPULARRECENT