Saturday , December 16 2017
Home / سیاسیات / اترپردیش میں امن و قانون کی صورتحال پر اپوزیشن کا اظہار تشویش

اترپردیش میں امن و قانون کی صورتحال پر اپوزیشن کا اظہار تشویش

اسمبلی اور کونسل میں وقفہ صفر احتجاج کی نذر، چیف منسٹر نے سپلیمنٹری بجٹ پیش کیا
لکھنو ۔ 17 ۔ اگست (سیاست ڈاٹ کام) اترپردیش اسمبلی اور کونسل کے اجلاس کو آج بار بار ملتوی کردیناپڑا جبکہ ریاست میں امن و قانون کی صورتحال پر بحث کے مطالبہ پر اپوزیشن ارکان کے احتجاج سے وقفہ صفر درہم برہم ہوگیا ۔ حتیٰ کہ شور و غل اور ہنگامہ آرائی کے دوران چیف منسٹر اکھلیش یادو نے پہلا سپلیمنٹری بجٹ پیش کیا ۔ اسپیکر اسمبلی ماتا پرساد پانڈے سے اپنی نشست (کرسی صدارت) پر بیٹھے بھی نہیں تھے کہ اپوزیشن ارکان نے بیانرس اور ٹوپیاں لگاکر’’غنڈہ مافیا مست ہے۔ یو پی کی جنتا ترمست (خوفزدہ) ہے‘‘ کے نعرے بلند کرتے ہوئے ایوان کے وسط میں پہنچ گئے ۔ انہوں نے غیر قانونی کانکنی اور اندھا دھند رشوت ستانی کے خلاف بھی احتجاج کیا اور قصورواروں کے خلاف اور فی الفور کارروائی کا مطالبہ کیا ۔ ایوان میں نظم و ضبط کی بحالی کیلئے کرسی صدارت کی بارہا اپیلوں کے باوجود احتجاجی ارکان دھرنا پر بیٹھ گئے جس کے باعث لنچ سے قبل دو مرتبہ ایوان کی کارروائی ملتوی کردینی پڑی۔ پہلی مرتبہ 20 منٹ کیلئے اور بعد میں پورے وقفہ صفر تک ملتوی کردیا گیا ۔ ایوان کی کارروائی دوبارہ شروع ہوتے ہی چیف منسٹر اکھلیش یادو نے شور و غل اور ہنگامہ آرائی کے دوران سال 2015-16 ء کیلئے 19,284.98 کروڑ کا سپلیمنٹری بجٹ پیش کیا ، جس کے بعد اسپیکر نے آج کا ایجنڈہ پڑھ کر سنایا ۔ اگرچیکہ بہوجن سماج پارٹی ارکان اپنی نشستوں پر واپس آکر ریاست میں امن و قانون کی صورتحال مباحث کیلئے تحریک التواء کی نوٹس کی منظوری کا اصرار کیا جبکہ بی جے پی نے کانگریس اور دیگر ارکان کے ساتھ ایوان کے وسط میں احتجاجی دھرنا برقرار رکھا تھا جس کے باعث اسپیکر کو آج ایک دن کی کارروائی کو ملتوی کردینی پڑی۔ اپوزیشن لیڈر سوامی پرساد موریہ نے جب امن و قانون کا مسئلہ اٹھایا تو وزیر پارلیمانی امور اعظم خاں نے جوابی جملہ کرتے ہوئے کہاکہ غنڈہ راج اور لوٹ مار پیشرو بی ایس پی دور حکومت میں عروج پر تھا ۔ اعظم خاں نے کہا کہ ان کے گناہ ایوان میں ان کی عددی طاقت کو گھٹا دیں گے اور آئندہ انتخابات میں بمشکل 3 یا 4 تک ہوجائے گی ۔ اس طرح کے مناظر قانون ساز کونسل میں بھی دیکھے گئے جہاں پر وقفہ صفر اپوزیشن احتجاج کے نذر ہوگگیا اور 20 منٹ تک کارروائی ملتوی کردی گئی۔ دوبارہ کارروائی شروع ہونے پر قائد ایوان احمد حسین نے شور و غل کے دوران سپلیمنٹری بجٹ پیش کیا ۔ تاہم ایجنڈہ کے مطابق کارروائی میں بار بار خلل اندازی کے بعد صدرنشین ، گنیش شنکر پانڈے نے آج کے دن کا اجلاس ملتوی کردیا۔

TOPPOPULARRECENT