Monday , June 18 2018
Home / شہر کی خبریں / اتوار کو اسمبلی سیشن منعقد نہیں ہوگا، بزنس اڈوائزری کمیٹی اجلاس میں فیصلہ

اتوار کو اسمبلی سیشن منعقد نہیں ہوگا، بزنس اڈوائزری کمیٹی اجلاس میں فیصلہ

حیدرآباد ۔ 7 ۔ مارچ : ( سیاست نیوز ) : تلنگانہ قانون ساز اسمبلی کی بزنس اڈوائزری کمیٹی ( بی اے سی ) کا اجلاس اسپیکر اسمبلی تلنگانہ مسٹر مدھو سدن چاری کی زیر صدارت منعقد ہوا ۔ اس اجلاس میں 9 مارچ تا 27 مارچ کے دوران ایوان کی کارروائی کے ایجنڈہ کو قطعیت دیا گیا ۔ اجلاس میں 14 مارچ اور 21 مارچ ( بروز شنبہ ) اسمبلی اجلاس رکھنے کا فیصلہ کیا گیا ۔ اس بجٹ سیشن میں کم از کم پانچ یوم ورکنگ لنچ کے ساتھ اسمبلی میں ایوان کی کارروائی کو جاری رکھنے ، 26 مارچ کو تصرف بل کی اسمبلی کے ایوان میں منظور کرنے اور 27 مارچ کو تلنگانہ قانون ساز کونسل میں تصرف بل کو منظور کرنے کا فیصلہ کیا گیا ۔ اس اجلاس میں چیف منسٹر تلنگانہ مسٹر کے چندر شیکھر راو موجود نہیں تھے اور اسمبلی کی اڈوائزری کمیٹی کے اجلاس سے قبل ہی اسمبلی کا بلیٹن جاری کرتے ہوئے 8 مارچ بروز اتوار اسمبلی اجلاس رکھنے کا اظہار کیا گیا تھا ۔ لیکن اسمبلی میں اپوزیشن جماعتوں کی جانب سے سخت مخالفت کیے جانے کے باعث 8 مارچ بروز اتوار اسمبلی اجلاس منعقد نہ کرنے کا فیصلہ کیا گیا ۔ اجلاس میں حکمراں جماعت ( حکومت کی جانب سے ) مسرس کے سری ہری ڈپٹی چیف منسٹر ، ای راجندر وزیر فینانس ، ٹی ہریش راؤ وزیر آبپاشی ، کانگریس پارٹی سے ڈاکٹر جی چناریڈی اور ملو بٹی وکرامارکا ، تلگو دیشم پارٹی سے مسٹر ای دیاکر راؤ ، بی جے پی سے ڈاکٹر کے لکشمن ، مجلس سے اکبر الدین اویسی ، سی پی آئی سے رویندر کمارنائک اور سی پی آئی ایم سے ایس راجیا وغیرہ نے شرکت کی ۔ مزید بتایا گیا کہ اسمبلی سیشن کے اوقات 9 مارچ کو صبح دس بجے سے رہیں گے ۔ لیکن 10 مارچ سے صبح ساڑھے نو بجے سے یا دس بجے سے رکھنے کے لیے پولیس عہدیداروں سے مشاورت کے بعد کوئی قطعی فیصلہ کرنے کا اظہار کیا گیا ۔ اس کے علاوہ اسمبلی سیشن کو مزید چند دن تک توسیع دینے اپوزیشن جماعتوں کے مطالبہ کو بالواسطہ طور پر مسترد کردیا گیا اور کہا گیا کہ 28 اور 29 مارچ دو یوم تعطیلات رہیں گے اور 30 اور 31 مارچ دو دن اسمبلی اجلاس رکھنے پر غور کرنے کا تیقن دیا گیا ۔ بتایا جاتا ہے کہ بزنس اڈوائزری کمیٹی اجلاس میں بھی بعض امور پر گرما گرم مباحث ہوئے بالخصوص آج ایوان میں پیش آئے گھونسہ بازی وغیرہ کے واقعات میں ملوث پائے جانے والے ارکان اسمبلی کو اسمبلی کی رکنیت کے لیے نااہل قرار دینے اور سخت کارروائی کرنے کا اسپیکر اسمبلی سے مطالبہ کیا گیا ۔ تاہم اسپیکر اسمبلی نے اس سلسلہ میں فوری طور پر اپنے ردعمل کا اظہار کرنے سے گریز کیا ۔ اسی دوران بتایا گیا کہ بی اے سی اجلاس میں قومی ترانہ بجائے جانے کے دوران احتجاج کو جاری رکھنے والے ارکان اسمبلی کے خلاف سخت کارروائی کرنے کا اسپیکر اسمبلی سے بعض ارکان اسمبلی نے پر زور مطالبہ کیا گیا ۔۔

TOPPOPULARRECENT