اجتماعی عصمت ریزی پر وزیراعظم کی خاموشی ناقابل قبول

خواتین کو غیر محفوظ چھوڑنا حکومت کیلئے شرمناک: راہول گاندھی

نئی دہلی 18ستمبر (سیاست ڈاٹ کام) کانگریس کے صدر راہول گاندھی نے کہا ہے کہ ہریانہ میں بورڈ امتحان ٹاپ کرنے والی ایک 19 سالہ لڑکی کی اجتماعی عصمت ریزی پر وزیراعظم نریندر مودی کی خاموشی ناقابل قبول ہے اور حکومت کے لئے یہ بات انتہائی شرمناک ہے کہ ملک کی خواتین کو عصمت ریزی کے مجرمین کو آزاد گھومنے اور غیر محفوظ حالت میں چھوڑ دے۔ اُنھوں نے کہاکہ اپنی ایک اور بیٹی کی اجتماعی عصمت ریزی پر ملک کا سر شرم سے جھک گیا ہے۔ راہول نے ٹوئٹر پر لکھا کہ ’’ہندوستان کا سر شرم سے جھک گیا ہے کیوں کہ اس کی ایک اور بیٹی کی اجتماعی عصمت ریزی ہوئی ہے‘‘۔ کانگریس کے صدر نے ٹوئٹر پر مزید لکھا کہ ’’وزیراعظم، آپ کی خاموشی ناقابل قبول ہے۔ اُس حکومت کو شرم آنی چاہئے جو عصمت ریزی کرنے والوں کو آزاد گھومنے کا موقع فراہم کرتے ہوئے پریشان اور غیر محفوظ حالت میں چھوڑ دی ہے‘‘۔ اپوزیشن پارٹی کے سربراہ کے ریمارکس ایک ایسے وقت کئے گئے ہیں جب ایک 19 سالہ لڑکی کی اجتماعی عصمت ریزی کے چھ دن گزرنے کے باوجود اس واقعہ کے اصل ملزمین کو پکڑنے میں ہریانہ پولیس ناکام ہوگئی ہے۔ ریواری سے تعلق رکھنے والی بورڈ امتحان میں امتیازی مقام حاصل کرنے والی لڑکا کا گزشتہ چہارشنبہ کو ضلع مہندر گڑھ کے کنینا ٹاؤن میں ایک بس سے اُس وقت اغواء کرلیا گیا تھا جب وہ کوچنگ کلاس میں شرکت کے لئے روانہ ہورہی تھی۔ اُس کو گھسیٹ کر ایک زرعی کھیت سے متصلہ کمرہ میں لیجاکر اجتماعی عصمت ریزی کی گئی تھی۔

TOPPOPULARRECENT