Friday , July 20 2018
Home / Top Stories / احمدآباد کو آپریٹیو بینک میں جمع رقم کی تحقیقات کا مطالبہ

احمدآباد کو آپریٹیو بینک میں جمع رقم کی تحقیقات کا مطالبہ

نوٹ بندی کے دوران امیت شاہ بینک کے ڈائریکٹر تھے ، 5 دن میں 745 کروڑ روپئے جمع

بی جے پی والوں نے
’کالے دھن ‘کو ’سفید‘ بنایا : کانگریس

نئی دہلی۔ 23 جون (سیاست ڈاٹ کام) کانگریس نے آج کہا کہ صدر بی جے پی امیت شاہ کے ڈائریکٹر رہتے ہوئے احمدآباد ضلع کوآپریٹیو بینک میں نوٹ بندی کے دوران پانچ دن میں سب سے زیادہ 745 کروڑ 58 لاکھ روپئے جمع کرائے گئے تھے جو کالے دھن کو سفید کرنے جیسا ہے اور وزیراعظم نریندر مودی کو اس معاملے کی تحقیقات کرنی چاہئے۔ کانگریس کے میڈیا سیکشن کے سربراہ رندیپ سرجے والا نے یہاں پارٹی ہیڈکوارٹرس میں پریس کانفرنس میں کہا کہ 2016ء میں 10 نومبر سے 14 نومبر کے دوران ملک کے تمام کوآپریٹیو بینکوں میں سے احمدآباد ضلع کوآپریٹیو بینک میں سب سے زیادہ 745 کروڑ روپئے کے پرانے نوٹ جمع کرائے گئے۔ انہوں نے کہا کہ امیت شاہ اس بینک کے ڈائریکٹر ہیں اور وہ پہلے چیرمین رہ چکے ہیں۔ انہوں نے اسے بڑا گھپلہ بتاتے ہوئے کہا کہ صرف گجرات کے 11 ضلع کوآپریٹیو بینکوں میں 3,118 کروڑ 51 لاکھ روپئے جمع کرائے گئے جن کے کرتا دھرتا بی جے پی کے اہم لیڈر تھے۔ ملک میں پانچ دن میں370 ضلع کوآپریٹیو بینکوں میں پرانے نوٹ جمع کئے گئے تھے۔ سرجے والا نے کہا کہ احمدآباد ضلع کوآپریٹیو بینک کے صدر بی جے پی کے اہم لیڈر اجے پٹیل ہیں جو امیت شاہ کے قریبی ساتھی بھی ہیں۔ اس بینک کے دوسرے ڈائریکٹر یشپال ہیں جو سہراب الدین فرضی انکاؤنٹر کیس میں امیت شاہ کے ساتھ جیل گئے تھے۔ سرجے والا نے مزید کہا کہ کوآپریٹیو بینکوں میں جمع ہوئی رقم کی معلومات حق اطلاعات کے تحت نبارڈ سے ملی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ راجکوٹ ضلع کوآپریٹیو بینک میں 693.19 کروڑ روپئے جمع کرائے گئے تھے جس کے صدر جیش بھائی وٹھل بھائی رڈاڈیا ہیں جو گجرات میں وزیر ہیں۔ اس بینک کے ڈائریکٹر وٹھل بھائی رڈاڈیا ہیں جو جیش کے والد اور سابق رکن پارلیمنٹ بھی ہیں۔ اسی طرح سورت ضلع کوآپریٹیو بینک میں 369.85 کروڑ روپئے جمع کرائے گئے تھے جس کے ڈائریکٹر بی جے پی رکن پارلیمنٹ پربھو بھائی ناگر بھائی وساوا ہیں اور بی جے پی کے ہی ایک اہم لیڈر نریش بھائی پٹیل اس کے صدر ہیں۔
کانگریس ترجمان نے کہا کہ سابرکنٹھا ضلع سنٹرل کوآپریٹیو بینک، بناس کنٹھا ضلع سنٹرل کوآپریٹیو بینک، مہسانا ضلع سنٹرل کوآپریٹیو بینک، امریجی ضلع مدھیہستھ کوآپریٹیو بینک، بھروچ ضلع سنٹرل کوآپریٹیو بینک، بروچھا سنٹرل کوآپریٹیو بینک، جوناگڑھ ضلع کوآپریٹیو بینک اور پنچ محل ضلع کوآپریٹیو بینک میں بھی بڑے پیمانے پر پرانے نوٹ جمع کرائے گئے تھے۔ ان تمام بینکوں کے اہم عہدیدار بی جے پی کے لیڈر تھے۔ انہوں نے نوٹ کی منسوخی کو سب سے بڑا اسکام قرار دیا اور الزام لگایا کہ اس کی آڑ میں کالے دھن کو سفید کیا گیا۔ انہوں نے وزیراعظم سے یہ بتانے کا مطالبہ کیا کہ یہ رقم کس کی تھی، کہاں سے آئی اور کہاں گئی۔ انہوں نے کہا کہ نوٹ کی منسوخی سے ٹھیک پہلے بی جے پی نے کتنی پراپرٹی خریدی اور اس کیلئے فنڈز کہاں سے آیا، اس کی بھی تفصیلات جانی چاہئے۔ کانگریس لیڈر نے الزام لگایا کہ بی جے پی کے بڑے لیڈرس کیخلاف حقائق پر مبنی خبریں شائع نہ کرنے کیلئے دباؤ ڈالا جارہا ہے، ایسا نہیں کیا جانا چاہئے۔

TOPPOPULARRECENT