Friday , February 23 2018
Home / شہر کی خبریں / اختراع پر توجہ دینے اسٹرکچرل انجینئرس پر زور

اختراع پر توجہ دینے اسٹرکچرل انجینئرس پر زور

اسٹرکچرل انجینئرنگ میں اختراعات پر انٹرنیشنل کانفرنس سے این وی ایس ریڈی کا خطاب
حیدرآباد ۔ 14 ۔ دسمبر : ( سیاست نیوز ) : مسٹر این وی ایس ریڈی ، ایم ڈی ، حیدرآباد میٹرو ریل نے اسٹرکچرل انجینئرس ، انجینئرنگ پروفیسرس اور طلبہ کے ایک بڑے اجتماع سے اپیل کی کہ عوام کو درپیش مختلف مسائل کے لیے کم خرچ ، محفوظ اور پائیدار ٹکنالوجیکل حل تلاش کریں ۔ عثمانیہ یونیورسٹی کے زیر اہتمام اسٹرکچرل انجینئرنگ میں اختراعات کے موضوع پر ایک سہ روزہ انٹرنیشنل کانفرنس میں بحیثیت مہمان خصوصی مخاطب کرتے ہوئے مسٹر ریڈی نے انسانی ترقی اور آرام کے لیے اسٹرکچرل انجینئرنگ ڈسپلن کی جانب سے انجام دی گئی خدمات کا تذکرہ کیا اور اسٹرکچرل انجینئرس پر زور دیا کہ وہ مزید اختراعی انداز کو اپنانے پر توجہ دیں اور نئے چیالنجس کا سامنا کرنے کے لیے تیار رہیں ۔ دنیا کی آبادی ، ماڈرن طرز زندگی ، قدرتی وسائل کا حد سے زیادہ استعمال ، گلوبل وارمنگ وغیرہ کے باعث پیدا ہونے والے مسائل پر روشنی ڈالتے ہوئے مسٹر ریڈی نے کہا کہ اسٹرکچرل انجینئرس کو مزید اختراعی اور کم خرچ انجینئرنگ ڈیزائنس کو اختیار کرنا ہوگا لیکن مضبوط میٹرئیلس کے ساتھ تاکہ عام اور غریب عوام کی ضرورت کو پورا کیا جاسکے جو بہتر سہولتوں کے خواہاں ہوتے ہیں ۔ حیدرآباد میٹرو ریل پراجکٹ کے چیالنجس کے بارے میں بتاتے ہوئے مسٹر ریڈی نے کہا کہ صرف 35 فیصد چیالنجس انجینئرنگ سے متعلق ہیں اور 65 فیصد نان انجینئرنگ چیالنجس ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ میٹرو ریل پراجکٹ کو حیدرآباد کو ایک موافق ماحولیات اور عوام دوست گرین سٹی بنانے کے لیے ایک موقع کے طور پر استعمال کیا جارہا ہے جس میں خواتین ، بچوں ، عمر رسیدہ لوگوں اور معذور اشخاص کو بہتر سہولت فراہم کرنے پر توجہ دی جارہی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ میٹرو ریل پراجکٹ کا حیدرآباد کو ایک گلوبل سٹی بنانے کے چیف منسٹر کے چندر شیکھرراؤ کے ویژن کو پورا کرنے میں اہم حصہ ہوگا ۔ پروفیسر کے وی ایل سبرامنیم ، ہیڈ ، ڈپارٹمنٹ آف سیول انجینئرنگ ، آئی آئی ٹی حیدرآباد ، پروفیسر ایس رامچندرم ، پرنسپل یونیورسٹی کالج آف انجینئرنگ ، عثمانیہ یونیورسٹی کئی انجینئرنگ پروفیسرس ، ماہرین اور طلبہ نے اس کانفرنس میں شرکت کی ۔۔

Top Stories

مولانا آزاد کی برسی پر تقریب کا انعقاد دہلی ومرکزی حکومت کی جانب سے بڑے لیڈران نے شرکت نہیں کی‘ صدر جمہوریہ ہند کی جانب سے ان کی مزار پر گل پوشی اور نائب صدر جمہوریہ نے اپنا پیغام بھیجا نئی دہلی۔آزادہندو ستا ن کے پہلے وزیر اتعلیم مولانا آزاد کے ساٹھ ویں یوم وفات کے موقع پر آج ان کے مزار واقع مینابازار میں ایک تقریب کا انعقاد ائی سی سی آر کی جانب سے کیاگیا۔افسوس کی بات یہ رہی کہ اس مرتبہ بھی مولانا آزاد کی وفات کے موقع پر دہلی ومرکزی حکومت کی جانب سے کسی بڑے لیڈران نے شرکت نہیں کی۔ چونکہ جامع مسجد پر کناڈہ کے وزیراعظم کو آناتھا اس لئے تقریب کو بہت مختصر کردیا گیاتھا۔ اس دوران صدرجمہوریہ ہند کی جانب سے ان کی مزار پر گل پوشی کی گئی او رنائب صدر جمہوریہ ہند نے اپنا پیغام بھیجا۔ ائی سی سی آر کے ڈائریکٹر نے مولانا آزاد کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہاکہ جہاں تک مولانا آزاد کا تعلق ہے اور انہوں نے جو خدمات انجام دیں انہیں فراموش نہیں کیاجاسکتا۔ ہندو مسلم میں اتحاد قائم کیااس کی مثال ملنا مشکل ہے انہوں نے بھائی چارہ کوفروغ دیا۔ انٹر فیتھ ہارمنی فاونڈیشن آف انڈیاکے چیرمن خواجہ افتخار احمد نے کہاکہ مولانا آزاد نے لڑکیوں کی تعلیم پر بہت زیادہ توجہ دی۔ جب حکومت قائم ہونے کے بعد قلمدان کی تقسیم ہونے لگے تو مولانا آزاد نے تعلیم کا قلمدان لیاتاکہ لڑکیو ں کی تعلیم پر خاص دھیان دیاجاسکے۔ خاص طور سے مسلم لڑکیو ں کی تعلیم پر زیادہ دھیان دیاجائے۔کیونکہ مسلم لڑکیو ں کو پڑھنے کے زیادہ مواقع نہیں مل پاتے ۔ معروف سماجی کارکن فیروز بخت احمد مولانا سے منسوب ایک پروگرام میں پونے گئے ہوئے تھے۔ انہوں نے نمائندہ کو فون پر بتایا کہ مولانا آزاد کی تعلیمات کو قوم نے بھلادیا ہے۔ آج تک ان جیسا لیڈر پیدا نہیں ہوسکا اور افسوس کی بات ہے کہ مولانا آزاد کی برسی یا یوم پیدائش کے موقع پر دہلی یامرکزی حکومت کی جانب سے کوئی بڑا لیڈر شریک نہیں ہوتا۔ ایسا معلوم ہوتا کہ حکومت نے مولانا آزاد کو بھلادیا ہے۔ اس دوران سی سی ائی آر کی ایک کمار مولانا ابولکلام آزاد فاونڈیشن کے چیرمن عمران خان سمیت کافی لوگ موجود تھے۔
TOPPOPULARRECENT