Tuesday , December 12 2017
Home / مذہبی صفحہ / اخلاقِ حسنہ

اخلاقِ حسنہ

بشریٰ ثمرین

اللہ تعالیٰ کا احسانِ عظیم ہے کہ ہم سب کو امتِ محمد صلی اللہ علیہ وسلم میں پیدا فرمایا، لہذا ہمیں چاہئے کہ اللہ تعالیٰ اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی اطاعت و فرماں برداری کریں۔ حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کو کفارِ مکہ نے ہر طرح سے ستایا، یہاں تک کہ اللہ تعالیٰ نے آپﷺ کو ہجرت کرنے کا حکم دیا۔ آپﷺ ہجرت کرکے مدینہ منورہ تشریف لے گئے اور وہاں پہنچ کر دین اسلام کی تبلیغ شروع کی، جس کے نتیجے میں اسلام کو تقویت حاصل ہوئی اور پھر ساری دنیا میں اسلام کی کرنیں چمکنے لگیں۔ فتح مکہ کے موقع پر جب آپﷺ مکہ میں داخل ہوئے تو عام معافی کا اعلان کردیا اور کسی سے بدلہ نہیں لیا۔ یہ تھا آپﷺ کا اخلاقِ حسنہ۔
حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ساری دنیا کو یہ پیغام دیا کہ عبادت کے لائق صرف اللہ تعالیٰ کی ذات ہے، اس کے سوا کوئی ہمارا معبود نہیں اور وہی ہر چیز پر قادر ہے۔ حجۃ الوداع کے موقع پر حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ’’لوگو سنو! میں تم میں دو چیزیں چھوڑے جا رہا ہوں، ایک اللہ کی کتاب اور دوسری میری سنت۔ جب تک تم ان دونوں کو مضبوطی سے تھامے رہو گے، گمراہ نہ ہوگے‘‘۔
قرآن مجید ساری انسانیت کے لئے ہدایت ہے، ہم مسلمانوں کو چاہئے کہ اس کی تلاوت کثرت سے کریں اور اس کے معانی و مطالب کو سمجھ کر پڑھیں۔ حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ’’جس گھر میں اللہ کا کلام پڑھا جاتا ہے، وہاں سے شیاطین بھاگ جاتے ہیں اور اللہ کی رحمتوں و برکتوں کا نزول ہوتا ہے‘‘۔ افسوس کہ آج ہمارے گھروں سے ٹی وی کی آوازیں تو بلند ہوتی ہیں، لیکن تلاوتِ قرآن پاک کی آوازیں نہیں سننے کو ملتیں۔ ہمارا قیمتی وقت ٹی وی پر ناچ، گانا اور سیریلس دیکھنے میں گزرتا ہے۔ ہم سب اللہ کے بندے ہیں، ہمیں اللہ سے ڈرنا اور جہنم کے عذاب سے پناہ مانگنا چاہئے۔ علاوہ ازیں اپنی اولاد کو دینی تعلیم سے آراستہ کرنا ہم سب کی ذمہ داری ہے۔ خود بھی اللہ تعالیٰ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے احکامات کی پابندی کریں اور اپنی نسلوں کو بھی ان کا پابند بنائیں، اسی میں ہماری نجات اور آخرت کی سرخروئی ہے۔ اللہ تعالیٰ ہم سب کو اسلامی احکامات کا پابند بنائے۔ (آمین)

TOPPOPULARRECENT