ادارہ سیاست کی جانب سے مقتول لڑکے محمد آصف جمال انصاری کی تدفین

حیدرآباد ۔ 23 ۔ جنوری : ( سیاست نیوز ) : ادارہ سیاست کی جانب سے بنارس یو پی سے تعلق رکھنے والے 11 سالہ لڑکے محمد آصف جمال انصاری کی تجہیز و تکفین عمل میں آئی ۔ جناب زاہد حسین کے مطابق سعید آباد جونائیل ہوم میں اس لڑکے کو بدفعلی سے انکار پر گلا گھونٹ کر قتل کردیا گیا تھا ۔ شہید لڑکے کے والد معین انصاری نے ایڈیٹر سیاست جناب زاہد علی خاں سے رجوع ہو کر شہر حیدرآباد میں ہی محمد آصف کی تدفین کا انتظام کرانے کی درخواست کی تھی چنانچہ ملت فنڈ کے ذریعہ متوفی لڑکے کی تجہیز و تکفین کا انتظام کیا گیا اور سکندرآباد قبرستان میں اس کی تدفین عمل میں آئی ۔ عام طور پر نعشیں تاخیر سے ملنے کے باعث نماز جنازہ قبرستان میں ہی ادا کردی جاتی ہے لیکن محمد آصف کی قبرستان میں نماز جنازہ ادا کرنے سے عین قبل وہاں کثیر تعداد میں موجود افراد نے مسجد سونالی بوٹس کلب سکندرآباد میں نماز جنازہ ادا کرنے پر زور دیا ۔ چنانچہ مسجد سونالی میں ہی اس کی نماز جنازہ ادا کی گئی ۔ نماز جنازہ اور تدفین کے موقع پر افراد نے اس المناک واقعہ پر تبصرہ کرتے ہوئے لڑکے کی جرات کی ستائش کی ۔ ریٹائرڈ سب انسپکٹر پولیس محمد جعفر ، محمد امتیاز علی اور سید منان کا کہنا تھا کہ اگر بچوں کی جیل میں چھوٹے اور بڑے بچوں کو علحدہ علحدہ رکھا جاتا تو اس طرح کا واقعہ پیش نہیں آتا ۔ نماز جنازہ کے موقع پر جونائیل ہوم کے عہدہ دار بھی موجود تھے ۔ جن میں محمد اعظم علی خاں بھی شامل ہیں ۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ بنارس سے لاپتہ ہو کر یہ لڑکا حیدرآباد پہنچ گیا تھا اور اسے بنارس روانہ کیا جانے والا ہی تھا لیکن پولیس اہلکاروں کی عدم فرصت کے نتیجہ میں تاخیر ہوئی اور پھر یہ المناک واقعہ پیش آیا ۔۔

TOPPOPULARRECENT