Thursday , December 14 2017
Home / شہر کی خبریں / اراضیات سروے کا کام تیزی سے جاری ، مختلف محکمہ جات سے تال میل

اراضیات سروے کا کام تیزی سے جاری ، مختلف محکمہ جات سے تال میل

دوسرے مرحلہ میں تنازعات کی یکسوئی ، پہلے مرحلے میں غیر متنازعہ اراضیات کی نشاندہی
حیدرآباد ۔ 25۔ ستمبر (سیاست نیوز) ڈپٹی چیف منسٹر و وزیر مال محمد محمود علی نے کہا کہ ریاست میں اراضیات کے سروے کا کام تیزی سے جاری ہے اور کسان اس سروے سے مطمئن ہیں۔ انہوں نے کہا کہ محکمہ جات ، ریونیو اور زراعت کے عہدیدار باہم تال میل کے ذریعہ مواضعات کی سطح پر سروے کا کام انجام دے رہے ہیں۔ سروے دو مرحلوں میں مکمل کیا جائے گا اور پہلے مرحلہ میں غیر متنازعہ اراضیات کی نشاندہی کی جائے گی ۔ تنازعات کی یکسوئی دوسرے مرحلہ میں ہوگی ۔ انہوں نے کہا کہ وقف ، انڈومنٹ اور دیگر اراضیات کے تنازعات کی یکسوئی کا کام دوسرے مرحلہ کے سروے میں انجام دیا جائے گا ۔ محمود علی نے جامع سروے کو چیف منسٹر کا کارنامہ قرار دیا اور کہا کہ 80 سال کے وقفہ کے بعد سروے منعقد کیا گیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ سروے میں ہر گاؤں میں کسانوں پر مشتمل گرام کمیٹی تشکیل دی گئی جو عہدیداروں سے تعاون کرے گی۔ انہوں نے بتایا کہ رنگا ریڈی ضلع میں تنازعات سے متعلق اراضیات کی تعداد زیادہ ہے ۔ انہوں نے کہا کہ نظام دورِ حکومت کے علاوہ سالار جنگ اور پائیگاہ کی کئی اراضیات ہیں اور اس دور میں مواضعات کو بطور انعام پیش کیا گیا۔ آج ان ارا ضیات کا تحفظ ایک مسئلہ بن چکا ہے اور یہ زمینات تنازعات کا شکار ہیں۔ محمود علی نے کہا کہ چیف منسٹر نے اضلاع کی تعداد 31 کرتے ہوئے بہتر نظم و نسق کو یقینی بنایا ہے۔ ضلع کلکٹرس بآسانی عوام کیلئے دستیاب ہیں۔ انہوں نے کہا کہ سروے کی تکمیل کے بعد اراضیات کا رجسٹریشن اور ان کے میوٹیشن کا کام 72 گھنٹوں میں مکمل کردیا جائے گا ۔ انہوں نے کہا کہ عام طور پر رجسٹری کے بعد لوگ اپنے دستاویزات کے ساتھ واپس ہوجاتے ہیں اور میوٹیشن کیلئے دوبارہ رجوع ہوتے ہیں لیکن اب رجسٹریشن کے 72 گھنٹوں میں میوٹیشن کے ڈاکیومنٹس جاری کردئے جائیں گے ۔انہوں نے کہا کہ حکومت آئندہ سال سے کسانوں کو دو فصلوں کیلئے فی ایکر 8000 روپئے کی امداد دینے کا منصوبہ رکھتی ہے۔ حکومت کے اس فیصلہ سے کسان کافی خوش ہیں اور ان کی معاشی حالت میں سدھار آئے گا ۔ محمود علی نے کہا کہ سروے کی تکمیل کے بعد تلنگانہ پاس بک تیار کی جائے گی جو پاسپورٹ کی طرح نقائص سے پاک ہوگی اور کوئی بھی شخص جعلی پاس بک تیار نہیں کر پائے گا۔ انہوں نے کہا کہ محکمہ مال صرف آمدنی کے حصول کیلئے کام نہیں کر رہا ہے بلکہ وہ عوام کی خدمت کیلئے وقف ہوچکا ہے۔ انہوں نے کہا کہ سروے کی تکمیل کیلئے 15 ڈسمبر کا نشانہ مقرر کیا گیا لیکن تنازعات کی یکسوئی کے سلسلہ میں مزید وقت لگ سکتا ہے۔

TOPPOPULARRECENT